DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Isra Ayat 93 Translation Tafseer

رکوعاتہا 12
سورۃ ﰋ
اٰیاتہا 111

Tarteeb e Nuzool:(50) Tarteeb e Tilawat:(17) Mushtamil e Para:(15) Total Aayaat:(111)
Total Ruku:(12) Total Words:(1744) Total Letters:(6554)
90-93

وَ قَالُوْا لَنْ نُّؤْمِنَ لَكَ حَتّٰى تَفْجُرَ لَنَا مِنَ الْاَرْضِ یَنْۢبُوْعًاۙ(۹۰)اَوْ تَكُوْنَ لَكَ جَنَّةٌ مِّنْ نَّخِیْلٍ وَّ عِنَبٍ فَتُفَجِّرَ الْاَنْهٰرَ خِلٰلَهَا تَفْجِیْرًاۙ(۹۱)اَوْ تُسْقِطَ السَّمَآءَ كَمَا زَعَمْتَ عَلَیْنَا كِسَفًا اَوْ تَاْتِیَ بِاللّٰهِ وَ الْمَلٰٓىٕكَةِ قَبِیْلًاۙ(۹۲)اَوْ یَكُوْنَ لَكَ بَیْتٌ مِّنْ زُخْرُفٍ اَوْ تَرْقٰى فِی السَّمَآءِؕ-وَ لَنْ نُّؤْمِنَ لِرُقِیِّكَ حَتّٰى تُنَزِّلَ عَلَیْنَا كِتٰبًا نَّقْرَؤُهٗؕ-قُلْ سُبْحَانَ رَبِّیْ هَلْ كُنْتُ اِلَّا بَشَرًا رَّسُوْلًا۠(۹۳)
ترجمہ: کنزالعرفان
اور انہوں نے کہا: ہم تم پر ہرگز ایمان نہ لائیں گے یہاں تک کہ تم ہمارے لیے زمین سے کوئی چشمہ بہا دو ۔ یا تمہارے لیے کھجوروں اور انگوروں کا کوئی باغ ہو پھر تم ان کے درمیان خوب نہریں جاری کردو۔ یا تم ہم پر آسمان ٹکڑے ٹکڑے کر کے گرا دو جیسا تم نے کہا ہے یااللہ اور فرشتوں کو ہمارے سامنے لے آؤ۔ یا تمہارے لئے کوئی سونے کا گھر ہو یا تم آسمان پر چڑھ جاؤ اور ہم تمہارے چڑھ جانے پر بھی ہرگز ایمان نہ لائیں گے جب تک ہم پر ایک کتاب نہ اتارو جو ہم پڑھیں ۔تم فرماؤ:میرا رب پاک ہے میں تو صرف اللہ کا بھیجا ہوا ایک آدمی ہوں ۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{وَ قَالُوْا: اور انہوں  نے کہا۔} آیت کا شانِ نزول یہ ہے کہ جب قرآنِ کریم کا اِعجاز خوب ظاہر ہوچکا اور واضح معجزات نے حجت قائم کردی اور کفار کے لئے عذر کی کوئی صورت باقی نہ رہی تو وہ لوگوں  کو مغالطہ میں  ڈالنے کے لئے طرح طرح کی نشانیاں  طلب کرنے لگے اور اُنہوں  نے کہہ دیا کہ ہم ہر گز آپ پر ایمان نہ لائیں  گے، چنانچہ مروی ہے کہ کفارِ قریش کے سردار کعبہ معظمہ میں  جمع ہوئے اور انہوں  نے رسولُ اللّٰہ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکو بلوا یا۔ حضورِ اقدس صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَتشریف لائے تو انہوں  نے کہا کہ ہم نے آپ کو اس لئے بلایا ہے کہ آج گفتگو کرکے آپ سے معاملہ طے کرلیں  تاکہ ہم پھر آپ کے حق میں  (کوئی بھی کاروائی کرنے میں ) معذور سمجھے جائیں  ۔عرب میں  کوئی آدمی ایسا نہیں  ہوا جس نے اپنی قوم پر وہ شدتیں  کی ہوں  جو آپ نے کردی ہیں  ۔ آپ نے ہمارے باپ دادا کو برا کہا، ہمارے دین کو عیب لگائے، ہمارے دانش مندوں  کو کم عقل ٹھہرایا ، ہمارے معبودوں  کی توہین کی ، ہماری جماعت متفرق کردی اور کوئی برائی اُٹھا نہ رکھی یعنی سب کچھ آپ نے کیا۔ یہ بتاؤ کہ اس سے تمہاری غرض کیا ہے؟ اگر تم مال چاہتے ہو تو ہم تمہارے لئے اتنا مال جمع کردیں  کہ ہماری قوم میں  تم سب سے زیادہ مالدار ہوجاؤ اور اگر اعزاز چاہتے ہو تو ہم تمہیں  اپنا سردار بنالیں  اور اگر ملک و سلطنت چاہتے ہو تو ہم تمہیں  بادشاہ تسلیم کرلیں  ،یہ سب باتیں  کرنے کے لئے ہم تیار ہیں  اور اگر تمہیں  کوئی دماغی بیماری ہوگئی ہے یا کوئی خَلِش ہوگیا ہے تو ہم تمہارا علاج کریں  اور اس میں  جس قدر خرچ ہو اُٹھائیں ۔ سرکارِ دوعالَمصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا ’’ان میں  سے کوئی بات نہیں  اور میں  مال ، سلطنت اور سرداری کسی چیز کا طلب گار نہیں ۔ بات صرف اتنی ہے کہ اللّٰہ تعالیٰ نے مجھے رسول بنا کر بھیجا ہے اور مجھ پر اپنی کتاب نازل فرمائی اور حکم دیا کہ میں  تمہیں  اس کے ماننے پر اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی رضا اور نعمت ِآخرت کی بشارت دوں  اور انکار کرنے پر عذابِ الٰہی کا خوف دلاؤں ۔ میں  نے تمہیں  اپنے رب عَزَّوَجَلَّکا پیغام پہنچایا ہے۔ اگر تم اسے قبول کرو تو یہ تمہارے لئے دنیاو آخرت کی خوش نصیبی ہے اور نہ مانو تو میں  صبر کروں  گا اور اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کے فیصلہ کا انتظار کروں  گا ۔اس پر ان لوگوں  نے کہا :اے محمد! (صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ) اگر آپ ہمارے معروضات کو قبول نہیں  کرتے ہیں  تو اِن پہاڑوں  کو ہٹا دیجئے اور میدان صاف نکال دیجئے اور نہریں  جاری کر دیجئے اور ہمارے مرے ہوئے باپ دادا کو زندہ کر دیجئے۔ ہم ان سے پوچھ دیکھیں  کہ آپ جو فرماتے ہیں  کیا وہ سچ ہے؟ اگر وہ کہہ دیں  گے تو ہم مان لیں  گے۔ حضورِ اقدس صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَنے فرمایا ’’ میں  ان باتوں  کے لئے نہیں  بھیجا گیا اور جو پہنچانے کے لئے میں  بھیجاگیا تھا وہ میں  نے پہنچا دیا، اگر تم مانو توتمہارا نصیب اور نہ مانو تو میں  خدائی فیصلے کا انتظار کروں  گا ۔ کفار نے کہا: پھر آپ اپنے رب سے عرض کر کے ایک فرشتہ بلوا لیجئے جو آپ کی تصدیق کرے اور اپنے لئے باغ ، محل اور سو نے چاندی کے خزانے طلب کیجئے۔ رسول کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَنے فرمایا کہ میں  اس لئے نہیں  بھیجا گیا۔ میں  بشیرو نذیر بنا کر بھیجا گیا ہوں ۔ اس پر وہ لوگ کہنے لگے :تو ہم پرآسمان گروا دیجئے اور ان میں  سے بعض یہ بولے کہ ہم ہر گز ایمان نہ لائیں  گے جب تک آپ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّکو اور فرشتوں  کو ہمارے پاس نہ لایئے ۔ اس پر نبی اکرم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اس مجلس سے اٹھ آئے اور عبداللّٰہ بن اُمیہ آپ کے ساتھ اُٹھا اور آپ سے کہنے لگا: خدا کی قسم! میں  کبھی ایمان نہ لاؤں  گا جب تک آپ سیڑھی لگا آسمان پر نہ چڑھو اور میری نظروں  کے سامنے وہاں  سے ایک کتاب اور فرشتوں  کی ایک جماعت لے کرنہ آؤ اور خدا کی قسم! اگریہ بھی کروتو میں  سمجھتا ہوں  کہ میں  پھر بھی نہ مانوں  گا۔ حضور پُر نور صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے جب دیکھا کہ یہ لوگ اس قدر ضد او ر عنا د میں  ہیں  اور ان کی حق سے دشمنی حد سے گزر گئی ہے تو آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کواُن کی حالت پر رنج ہوا اس پر آیتِ کریمہ نازل ہوئی۔( خازن، الاسراء، تحت الآیۃ: ۹۰، ۳ / ۱۹۱-۱۹۲)

{قُلْ سُبْحَانَ رَبِّیْ: تم فرماؤ، میرا رب پاک ہے۔} کفار کے تمام مطالبات کے جواب میں  نبی کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو ایک ہی جواب دینے کا ارشاد فرمایا گیا کہ آپ ان سے کہہ دیں  کہ  میرا کام اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کا پیغام پہنچا دینا ہے، وہ میں  نے پہنچا دیا ہے اور جس قدر معجزات و آیات یقین و اطمینان کے لئے درکار ہیں  اُن سے بہت زیادہ میرا پروردگار عَزَّوَجَلَّ ظاہر فرما چکا لہٰذا حجت پوری ہوچکی ہے ۔ اب یہ سمجھ لو کہ رسول کے انکار کرنے اور آیاتِ الٰہیہ سے مکرنے کا کیا انجام ہوتا ہے۔

 

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links