DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Isra Ayat 68 Translation Tafseer

رکوعاتہا 12
سورۃ ﰋ
اٰیاتہا 111

Tarteeb e Nuzool:(50) Tarteeb e Tilawat:(17) Mushtamil e Para:(15) Total Aayaat:(111)
Total Ruku:(12) Total Words:(1744) Total Letters:(6554)
68

اَفَاَمِنْتُمْ اَنْ یَّخْسِفَ بِكُمْ جَانِبَ الْبَرِّ اَوْ یُرْسِلَ عَلَیْكُمْ حَاصِبًا ثُمَّ لَا تَجِدُوْا لَكُمْ وَكِیْلًاۙ(۶۸)
ترجمہ: کنزالعرفان
کیا تم اس بات سے بے خوف ہوگئے کہ اللہ تمہارے ساتھ خشکی کا کنارہ زمین میں دھنسا دے یا تم پر پتھر بھیجے پھر تم اپنے لئے کوئی حمایتی نہ پاؤ۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{اَفَاَمِنْتُمْ:کیا تم بے خوف ہوگئے۔} یعنی اے لوگو! کیا تم اس بات سے بے خوف ہوگئے کہ تمہارے دریا سے نجات پانے کے بعد اللّٰہ تعالیٰ تمہیں  خشکی کے کنارے سمیت زمین میں  دھنسا دے جیسا کہ قارون کو زمین میں  دھنسا دیا تھا۔ آیت کا مقصد یہ ہے کہ خشکی وتری سب اللّٰہ تعالیٰ کے تحت ِقدرت ہیں  جیسا وہ سمندر میں  غرق کرنے اور بچانے دونوں  پر قادر ہے ایسا ہی خشکی میں  بھی زمین کے اندر دھنسا دینے اور محفوظ رکھنے دونوں  پر قادر ہے۔ خشکی ہو یا تری ہر کہیں  بندہ اس کی رحمت کا     محتاج ہے۔ وہ تمہیں  زمین میں  دھنسانے پر بھی قادر ہے اور یہ بھی قدرت رکھتا ہے کہ تم پر پتھروں  کی بارش برسا دے جیسے قومِ لوط پر بھیجی تھی اورپھر تم اپنے لئے کوئی حمایتی نہ پاؤ جو تمہیں  بچاسکے۔(روح البیان، الاسراء، تحت الآیۃ: ۶۸، ۵ / ۱۸۳، خازن، الاسراء، تحت الآیۃ: ۶۸، ۳ / ۱۸۲، ملتقطاً) الغرض ہر حال میں  اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ سے ڈرنا چاہیے۔

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links