DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Isra Ayat 77 Translation Tafseer

رکوعاتہا 12
سورۃ ﰋ
اٰیاتہا 111

Tarteeb e Nuzool:(50) Tarteeb e Tilawat:(17) Mushtamil e Para:(15) Total Aayaat:(111)
Total Ruku:(12) Total Words:(1744) Total Letters:(6554)
77

سُنَّةَ مَنْ قَدْ اَرْسَلْنَا قَبْلَكَ مِنْ رُّسُلِنَا وَ لَا تَجِدُ لِسُنَّتِنَا تَحْوِیْلًا۠(۷۷)
ترجمہ: کنزالعرفان
جیسے ہمارے ان رسولوں کا طریقہ رہا جنہیں ہم نے آپ سے پہلے بھیجا اور تم ہمارے قانون میں کوئی تبدیلی نہ پاؤ گے۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{سُنَّةَ: طریقہ۔} گزشتہ آیت میں  فرمایا تھا کہ  اگر بالفرض یہ آپ کو نکال دیتے تو آپ کے بعد یہ بھی جلد ہلاک کردیئے جاتے کیونکہ نبی عَلَیْہِ السَّلَامکے تشریف لے جانے کے بعد عذابِ الٰہی آجا تا ہے جیسے ہمارا ان رسولوں  عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے بارے میں  طریقہ رہا جنہیں  ہم نے آپ سے پہلے بھیجا کہ جس قوم نے انہیں  ان کے وطن سے نکالا( اور وہاں  کوئی مسلمان باقی نہ رہا اور ان لوگوں  کے ایمان لانے کی بھی کوئی امید نہ رہی) تو ہم نے اس قوم کو ہلاک کردیا اور تم ہمارے اِس قانون میں  کوئی تبدیلی نہ پاؤ گے۔(خازن، الاسراء، تحت الآیۃ: ۷۷، ۳ / ۱۸۵، ملخصاً) اہلِ مکہ کی بچت کی وجہ یہ رہی کہ وہاں  مسلمان بھی باقی رہے اور وہاں  خانہ کعبہ تھا اسی لئے اس علاقے کو بہرحال اسلامی حدود میں  آنا تھا اور وہاں  کے لوگوں  کے بارے میں  ایمان کی امید قوی بھی موجود تھی۔

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links