DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Isra Ayat 57 Translation Tafseer

رکوعاتہا 12
سورۃ ﰋ
اٰیاتہا 111

Tarteeb e Nuzool:(50) Tarteeb e Tilawat:(17) Mushtamil e Para:(15) Total Aayaat:(111)
Total Ruku:(12) Total Words:(1744) Total Letters:(6554)
57

اُولٰٓىٕكَ الَّذِیْنَ یَدْعُوْنَ یَبْتَغُوْنَ اِلٰى رَبِّهِمُ الْوَسِیْلَةَ اَیُّهُمْ اَقْرَبُ وَ یَرْجُوْنَ رَحْمَتَهٗ وَ یَخَافُوْنَ عَذَابَهٗؕ-اِنَّ عَذَابَ رَبِّكَ كَانَ مَحْذُوْرًا(۵۷)
ترجمہ: کنزالعرفان
وہ مقبول بندے جن کی یہ کافر عبادت کرتے ہیں وہ خود اپنے رب کی طرف وسیلہ تلاش کرتے ہیں کہ ان میں کون زیادہ مقرب ہے ۔وہ اللہ کی رحمت کی امید رکھتے ہیں اور اس کے عذاب سے ڈرتے ہیں بیشک تمہارے رب کا عذاب ڈرنے کی چیز ہے۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{اُولٰٓىٕكَ الَّذِیْنَ یَدْعُوْنَ: وہ جنہیں  یہ پوجتے ہیں ۔} کفارکے بہت سے گروہ تھے۔ کوئی بتوں  اور دیوی ، دیوتاؤں  کو پوجتا تھا اور کوئی فرشتوں  کو، یونہی عیسائی حضرت عیسیٰعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو خدا یا خدا کا بیٹا کہتے تھے اور یہودیوں  کا ایک گروہ حضرت عزیر عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکو ، یونہی بہت سے لوگ ایسے جنوں  کو پوجتے تھے جو اسلام قبول کرچکے تھے لیکن ان کے پوجنے والوں  کو خبر نہ تھی تو اللّٰہ تعالیٰ نے یہ آیت نازل فرمائی اور اُن لوگوں  کوشرم دلائی کہ اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کے سوا جن مُقَرَّبینِ بارگاہِ الٰہی کو یہ لوگ پوجتے ہیں  وہ تو خود اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی بارگاہ تک رسائی کیلئے وسیلہ تلاش کرتے ہیں  کہ ان میں  کون زیادہ مقرب ہے تاکہ جو سب سے زیادہ مقرب ہو اس کو وسیلہ بنائیں  تو جب یہ مقربین بھی بارگاہِ الٰہی تک رسائی کیلئے وسیلہ تلاش کرتے ہیں  اور رحمت ِالٰہی کی امید رکھتے ہیں  اور عذاب ِ الٰہی سے ڈرتے ہیں  تو کافر انہیں  کس طرح معبود سمجھتے ہیں ۔( خازن، الاسراء، تحت الآیۃ: ۵۷، ۳ / ۱۷۸، ملتقطاً)

اللّٰہ تعالیٰ کے مقرب بندوں  کو اس کی بارگاہ میں  وسیلہ بنانا جائز ہے:

           اس سے معلوم ہوا کہ مقرب بندوں  کو بارگاہِ الٰہی میں  وسیلہ بنانا جائز اور اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کے مقبول بندوں  کا طریقہ ہے۔ آیت میں  وسیلہ بنانے کا جوازبیان کیا گیا ہے اور شرک کا رد کیا گیا ہے۔ وسیلہ ماننے اور خدا ماننے میں  زمین و آسمان کا فرق ہے، جو وسیلے کو شرک کہے وہ اس آیت کے مطابق مَعَاذَاللّٰہ انبیاءِ کرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو بھی شرک کا مُرتکب قرار دیتا ہے۔ اِس آیت سے یہ بھی معلوم ہوا کہ ہمارے آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کائنات کا سب سے بڑا وسیلہ ہیں  کہ بارگاہِ الٰہی میں  سب سے مقرب وہی ہیں  تو بقیہ سب انہیں  کو وسیلہ بناتے ہیں  اور اسی لئے میدانِ قیامت میں  سب لوگ حضور اقدس صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی بارگاہ میں  ہی جمع ہوکر حاضری دیں  گے اور بارگاہِ الٰہی میں  سفارش کروائیں  گے۔ اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان رَحْمَۃُاللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہِ اللّٰہ تعالیٰ کی بارگاہ میں  عرض کرتے ہیں :

ہم ہیں  اُن کے وہ ہیں  تیرے تو ہوئے ہم تیرے

اس سے بڑھ کر تِری سمت اور وسیلہ کیا ہے

ان کی امّت میں  بنایا انھیں  رحمت بھیجا

یوں  نہ فرما کہ ترا رحم میں  دعویٰ کیا ہے

صدقہ پیارے کی حیا کا کہ نہ لے مجھ سے حساب

بخش بے پوچھے لجائے کو لجانا کیا ہے

 

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links