DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Maryam Ayat 54 Translation Tafseer

رکوعاتہا 6
سورۃ ﰍ
اٰیاتہا 98

Tarteeb e Nuzool:(44) Tarteeb e Tilawat:(19) Mushtamil e Para:(16) Total Aayaat:(98)
Total Ruku:(6) Total Words:(1085) Total Letters:(3863)
54

وَ اذْكُرْ فِی الْكِتٰبِ اِسْمٰعِیْلَ٘-اِنَّهٗ كَانَ صَادِقَ الْوَعْدِ وَ كَانَ رَسُوْلًا نَّبِیًّاۚ(۵۴)
ترجمہ: کنزالعرفان
اور کتاب میں اسماعیل کو یاد کرو بیشک وہ وعدے کا سچا تھا اور غیب کی خبریں دینے والارسول تھا۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{وَ اذْكُرْ فِی الْكِتٰبِ اِسْمٰعِیْلَ:اور کتاب میں  اسماعیل کو یاد کرو۔} حضرت اسماعیل عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام حضرت ابراہیم عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکے فرزند ہیں  اور سیّد المرسَلین صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَآپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکی اولاد سے ہیں ۔ اس آیت میں  حضرت اسماعیل عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے دو وصف بیان کئے گئے۔

(1)… آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام وعدے کے سچے تھے ۔ یاد رہے کہ تمام انبیاءِ کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَاموعدے کے سچے ہی ہوتے ہیں  مگرآپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکا خصوصی طور پر ذکر کرنے کی وجہ یہ ہے کہ آپعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام اس وصف میں  بہت زیادہ ممتاز تھے ،چنانچہ ایک مرتبہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کوکوئی شخص کہہ گیا جب تک میں  نہیں  آتا آپ یہیں  ٹھہریں  توآپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام اس کے انتظار میں  3دن تک وہیں  ٹھہرے رہے۔ اسی طرح (جب حضرت ابراہیم عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام آپ کو  اللہ تعالیٰ کے حکم سے ذبح کرنے لگے تو) ذبح کے وقت آپعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام نے صبر کرنے کا وعدہ فرمایا تھا، اس وعدے کو جس شان سے پورا فرمایا اُس کی مثال نہیں  ملتی۔( خازن، مریم، تحت الآیۃ: ۵۴، ۳ / ۲۳۸)

(2)…آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامغیب کی خبریں  دینے والے رسول تھے۔ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کورسول اور نبی فرمایا گیا ہے، اس میں  بنی اسرائیل کے ان لوگوں  کی تردید کرنا مقصود تھا جویہ سمجھتے تھے کہ نبوت صرف حضرت اسحاقعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے لیے ہے اور حضرت اسماعیل عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام نبی نہیں  ہیں ۔

رسولِ اکرم صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکی وعدہ وفائی

            اوپر بیان ہو اکہ حضرت اسماعیل کسی جگہ پر 3دن تک ایک شخص کے انتظار میں  ٹھہرے رہے،اسی طرح کا ایک واقعہ سیّد المرسَلین صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے بارے میں  بھی اَحادیث کی کتابوں  میں  موجود ہے، چنانچہ حضرت عبد اللہ بن ابو الحمساء رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی  عَنْہُ فرماتے ہیں : بِعْثَت سے پہلے میں  نے نبی کریم صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے کوئی چیز خریدی اور اس کی کچھ قیمت میری طرف باقی رہ گئی تھی۔ میں  نے وعدہ کیا کہ اسی جگہ لاکر دیتا ہوں ، میں  بھول گیا اور تین دن کے بعد یاد آیا، میں  گیا تو آپ صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اسی جگہ موجود تھے۔ ارشاد فرمایا ’’اے نوجوان! تو نے مجھے تکلیف دی ہے، میں  تین دن سے یہاں  تمہارا انتظار کر رہا ہوں ۔( ابوداؤد، کتاب الادب، باب فی العدۃ، ۴ / ۴۸۸، الحدیث:  ۴۹۹۶)

 

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links