DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Maryam Ayat 40 Translation Tafseer

رکوعاتہا 6
سورۃ ﰍ
اٰیاتہا 98

Tarteeb e Nuzool:(44) Tarteeb e Tilawat:(19) Mushtamil e Para:(16) Total Aayaat:(98)
Total Ruku:(6) Total Words:(1085) Total Letters:(3863)
40

اِنَّا نَحْنُ نَرِثُ الْاَرْضَ وَ مَنْ عَلَیْهَا وَ اِلَیْنَا یُرْجَعُوْنَ۠(۴۰)
ترجمہ: کنزالعرفان
بیشک زمین اور جو کچھ اس پر ہے سب کے وارث ہم ہوں گے اور ہماری ہی طرف انہیں لوٹایا جائے گا۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{اِنَّا نَحْنُ نَرِثُ الْاَرْضَ وَ مَنْ عَلَیْهَا:بیشک زمین اور جو کچھ اس پر ہے سب کے وارث ہم ہوں  گے۔} ارشاد فرمایا کہ جب قیامت قائم ہو گی تو اس وقت سب کچھ فنا ہو جائے گا اور میری ذات کے سوا کوئی باقی رہے گا نہ کسی کی ظاہری ملکیت باقی ہو گی( اور جب لوگوں  کو زندہ کیا جائے گا تو )انہیں  ہماری ہی طرف لوٹایا جائے گا اور ہم انہیں  ان کے اعمال کی جزا دیں  گے۔( مدارک، مریم، تحت الآیۃ: ۴۰، ص۶۷۴)

گناہگاروں  کے لئے مقامِ خوف:

            اس آیت میں  گناہگاروں  کے لئے عظیم ڈر اور تنبیہ ہے کہ دنیامیں  انہوں  نے جس رب تعالیٰ کی نافرمانیاں  کی ہیں  اور ا س کے دئیے ہوئے اَحکامات کو پامال کیا ہے قیامت کے دن انہیں  اسی کی بارگاہ میں  لوٹ کر جانا ہے اور اسی کے حضور پیش ہو کر اپنے اعمال کا حساب دینا ہے اور وہ لوگوں  کو ان کے اعمال کے مطابق جزا دے گا تو گناہگار لوگ اپنے اعمال کو سامنے رکھتے ہوئے ان کی جزا پر خود ہی غور کر لیں  کہ وہ کیا ہو گی،اگر  اللہ تعالیٰ نے ان پر اپنا رحم نہ فرمایا اور ان کے گناہوں  کو نہ بخشا تو انہیں  جہنم کے انتہائی دردناک عذابات سہنے پڑیں  گے،لہٰذا ہر مسلمان کو چاہئے کہ وہ  اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں  حسابکے لئے پیش ہونے سے پہلے پہلے اپنے اعمال کی اصلاح کر لے تاکہ اسے  اللہ تعالیٰ کی بارگاہ سے اچھی جزا ملے۔

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links