DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Maryam Ayat 4 Translation Tafseer

رکوعاتہا 6
سورۃ ﰍ
اٰیاتہا 98

Tarteeb e Nuzool:(44) Tarteeb e Tilawat:(19) Mushtamil e Para:(16) Total Aayaat:(98)
Total Ruku:(6) Total Words:(1085) Total Letters:(3863)
4

قَالَ رَبِّ اِنِّیْ وَهَنَ الْعَظْمُ مِنِّیْ وَ اشْتَعَلَ الرَّاْسُ شَیْبًا وَّ لَمْ اَكُنْۢ بِدُعَآىٕكَ رَبِّ شَقِیًّا(۴)
ترجمہ: کنزالعرفان
عرض کی: اے میرے رب ! بیشک میری ہڈی کمزور ہوگئی اور سرنے بڑھاپے کا شعلہ چمکا دیا ہے (بوڑھا ہوگیا ہوں ) اور اے میرے رب! میں تجھے پکار کر کبھی محروم نہیں رہا۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{قَالَ:عرض کی:} حضرت زکریا عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے دعا مانگنے کا پورا واقعہ کچھ اس طرح ہے کہ حضرت زکریا عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی عمر شریف 75 یا 80 سال تک پہنچ چکی تھی مگرآپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکے پاس اولاد جیسی نعمت نہ تھی اور آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کواپنے رشتہ داروں  میں  سے بھی کوئی ایسا نیک صالح مرد نظر نہیں  آتا تھا کہ جوآپعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی وفات کے بعد اس قابل ہوکہ وہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکا جانشین بنے اور  اللہ عَزَّوَجَلَّکی طرف سے جودین کی خدمت آپعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے سپرد تھی اس کوانجام دے سکے بلکہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکے کئی رشتہ دار شریر تھے اور آپ کوخوف تھا کہ کہیں  میرے بعد یہ دین میں  تبدیلیاں  شروع نہ کردیں  اسی وجہ سے آپعَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام بہت فکرمند رہا کرتے تھے ۔ یہی احساس جب بہت زیادہ بڑھا تو بالآخر اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی بارگاہ میں  دعا کے لیے ہاتھ اٹھا دئیے اور  اللہ عَزَّوَجَلَّ کی بارگاہ میں  عرض کردی کہ مجھے نیک صالح بیٹا عطا فرما جو تیرا بھی پسندیدہ ہو اور وہ میرے بعد میرا وارث بنے اور دین کی خدمت کرے۔

{اِنِّیْ وَهَنَ الْعَظْمُ مِنِّیْ:بے شک میری ہڈی کمزور ہوگئی۔} حضرت زکریا عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامنے اپنی دعا کی ابتدا اس طرح کی کہ اے میرے مولیٰ ! عَزَّوَجَلَّ، تو جانتا ہے کہ میں  بوڑھا ہو چکا ہوں  اور بڑھاپے کی کمزوری اس انتہا کو پہنچ چکی ہے کہ سب سے مضبوط عُضْوْ ہڈی میں  کمزوری آ گئی ہے اور جب یہ کمزور ہو چکی تو باقی اَعضاء کا حال     محتاجِ بیان نہیں  اور میرے سرکے بال بھی سفید ہوچکے ہیں  ، اور اے میرے رب! عَزَّوَجَلَّ، آج سے پہلے تیری بارگاہ میں  مَیں  نے جوبھی دعائیں  کی ہیں  تونے وہ قبول کی ہیں ، لہٰذا مجھے امید ہے کہ تومیری یہ دعا بھی قبو ل کرے گا۔( مدارک، مریم، تحت الآیۃ: ۴، ص۶۶۷-۶۶۸)

آیت’’اِنِّیْ وَهَنَ الْعَظْمُ مِنِّیْ‘‘سے حاصل ہونے والی معلومات:

            اس آیت سے چند باتیں  معلوم ہوئیں :

(1)…جب بھی  اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں  دعا مانگی جائے تو پہلے ان اُمور کو ذکر کیا جائے جن سے دعا مانگنے والے کی عاجزی و اِنکساری کا اظہار ہو۔

(2)…اپنی حاجت عرض کرنے سے پہلے اپنے اوپر اللّٰہ عَزَّوَجَلَّ کی نعمت و رحمت اور لطف و کرم کا ذکر کیا جائے ۔

(3)… پہلے جو دعا قبول ہو چکی اسے دوبارہ دعا کرتے وقت  اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں  وسیلہ بنایا جائے۔

(4)… انبیاءِ کرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی دعائیں  قبول ہوتی ہیں ۔ اسی لیے ان سے دعائیں  کرائی جاتی ہیں ، یونہی اولیاءِ کرام رَحْمَۃُ اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِمْسے بھی اسی لئے دعا کرنے کا عرض کیا جاتا ہے کہ ان کی دعائیں  قبول ہوتی ہیں ۔

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links