DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Maryam Ayat 93 Translation Tafseer

رکوعاتہا 6
سورۃ ﰍ
اٰیاتہا 98

Tarteeb e Nuzool:(44) Tarteeb e Tilawat:(19) Mushtamil e Para:(16) Total Aayaat:(98)
Total Ruku:(6) Total Words:(1085) Total Letters:(3863)
93

اِنْ كُلُّ مَنْ فِی السَّمٰوٰتِ وَ الْاَرْضِ اِلَّاۤ اٰتِی الرَّحْمٰنِ عَبْدًاؕ(۹۳)
ترجمہ: کنزالعرفان
آسمانوں اور زمین میں جتنے ہیں سب رحمٰن کے حضور بندے ہو کر حاضر ہوں گے۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{اِنْ كُلُّ مَنْ فِی السَّمٰوٰتِ وَ الْاَرْضِ:آسمانوں  اور زمین میں  جتنے ہیں ۔} یہ آیت مبارکہ  اللہ تعالیٰ کے علاوہ دیگر بناوٹی معبودوں  کی نفی کی دلیل بھی بن سکتی ہے اور اس بات کی بھی دلیل بن سکتی ہے کہ  اللہ تعالیٰ اولاد سے پاک ہے۔ پہلی صورت میں  اس آیت کا معنی یہ ہو گا کہ کفار زمین پر جن لوگوں  کو اور آسمان پر جن فرشتوں  کو اپنا معبود مانتے ہیں  وہ سب تو اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں  اپنے بندہ ہونے کا اقرار کرتے ہیں  اور  اللہ تعالیٰ کی اطاعت و فرمانبرداری کرتے اور صرف اسے ہی سجدہ کرتے ہیں  تو پھر وہ معبود کس طرح ہو سکتے ہیں ۔ دوسری صورت میں  اس آیت کا معنی یہ ہو گا کہ قیامت کے دن تمام جن و اِنس اور فرشتے نیز کفار زمین پر جن لوگوں  کو اور آسمان پر جن فرشتوں  کو  اللہ تعالیٰ کی اولاد بتاتے ہیں  وہ سب  اللہ تعالیٰ کا بندہ ہونے کا اقرار کرتے ہوئے اس کی بارگاہ میں  حاضر ہوں  گے اور یہ بات واضح ہے کہ جو کسی کا بندہ ہوتا ہے وہ اس کی اولاد نہیں  ہوتا اور جو اولاد ہو وہ اس کا بندہ نہیں  ہوتا کیونکہ بندہ ہونا اور اولاد ہونا دونوں  جمع ہو ہی نہیں  سکتے نیز کوئی اپنی اولاد کا مالک نہیں  ہوتا جبکہ  اللہ تعالیٰ توہر چیز کا مالک ہے اور جو خود  اللہ تعالیٰ کی ملکیت میں ہے تو وہ اس کی اولاد ہرگز نہیں  ہو سکتا۔

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links