DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Yusf Ayat 77 Translation Tafseer

رکوعاتہا 12
سورۃ ﷸ
اٰیاتہا 111

Tarteeb e Nuzool:(53) Tarteeb e Tilawat:(12) Mushtamil e Para:(12-13) Total Aayaat:(111)
Total Ruku:(12) Total Words:(1961) Total Letters:(7207)
77

قَالُوْۤا اِنْ یَّسْرِقْ فَقَدْ سَرَقَ اَخٌ لَّهٗ مِنْ قَبْلُۚ-فَاَسَرَّهَا یُوْسُفُ فِیْ نَفْسِهٖ وَ لَمْ یُبْدِهَا لَهُمْۚ-قَالَ اَنْتُمْ شَرٌّ مَّكَانًاۚ-وَ اللّٰهُ اَعْلَمُ بِمَا تَصِفُوْنَ(۷۷)
ترجمہ: کنزالعرفان
بھائیوں نے کہا: اگراس نے چوری کی ہے تو بیشک اس سے پہلے اس کے بھائی نے بھی چوری کی تھی تو یوسف نے یہ بات اپنے دل میں چھپارکھی اور ان پر ظاہر نہ کی (اور دل میں ) کہا تم انتہائی گھٹیا درجے کے آدمی ہو اور اللہ خوب جانتا ہے جو تم باتیں کررہے ہو۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{قَالُوْا:بھائیوں  نے کہا۔} جب پیالہ بنیامین کے سامان سے نکلا تو بھائی شرمندہ ہوئے ، اُنہوں  نے سرجھکائے اور کہا ’’ سامان میں  پیالہ نکلنے سے سامان والے کا چوری کرنا تو یقینی نہیں  لیکن اگر یہ فعل اس کا ہو تو بیشک اس سے پہلے اس کےبھائی  حضرت یوسف عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام نے بھی چوری کی تھی۔

حضرت یوسف عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکی طرف منسوب ایک واقعہ:

            جس کو انہوں  نے چوری قرار دے کر حضرت یوسف عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکی طرف منسوب کیا وہ واقعہ یہ تھا کہ حضرت یوسف عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکے نانا کا ایک بت تھا جسے وہ پوجتے تھے ۔ حضرت یوسف عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامنے چپکے سے وہ بت لیا اور توڑ کر راستے میں  نجاست کے اندر ڈال دیا۔ یہ حقیقت میں  چوری نہ تھی بلکہ بت پرستی کا مٹانا تھا۔ بھائیوں  کا اس کے ذکر سے یہ مقصد تھا کہ ہم لو گ بنیامین کے سوتیلے بھائی ہیں  اور یہ فعل ہو تو شاید بنیامین کا ہو ،نہ ہماری اس میں  شرکت نہ ہمیں  اس کی اطلاع۔ (روح البیان، یوسف، تحت الآیۃ: ۷۷، ۴ / ۳۰۱، خازن، یوسف، تحت الآیۃ: ۷۷، ۳ / ۳۶، ملتقطاً)

{فَاَسَرَّهَا یُوْسُفُ فِیْ نَفْسِهٖ:تو یوسف نے یہ بات اپنے دل میں  چھپارکھی۔} یعنی حضرت یوسف عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام نے بھائیوں  کی طرف سے اپنے بارے میں  کہی گئی بات دل میں  ایسے چھپا لی جیسے آپ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامنے سنی ہی نہ ہو اور اپنے قول یا فعل سے کسی طرح اس کا اظہار نہ ہونے دیا اور اپنے دل میں  کہا ’’تم حضرت یوسفعَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام اور ان کے بھائی کے مقابلے میں  انتہائی کم درجے کے آدمی ہو کیونکہ تم نے اپنے بھائی کو اپنے والد سے چرا لیا اور اپنے بھائی پر ظلم کیا، تم اپنے بھائی کے معاملے میں  جو کچھ کہہ رہے ہو اسے اللّٰہ تعالیٰ خوب جانتا ہے۔ (روح البیان، یوسف، تحت الآیۃ: ۷۷، ۴ / ۳۰۱-۳۰۲، جلالین، یوسف، تحت الآیۃ: ۷۷، ص۱۹۶، ملتقطاً)

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links