DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Yusf Ayat 110 Translation Tafseer

رکوعاتہا 12
سورۃ ﷸ
اٰیاتہا 111

Tarteeb e Nuzool:(53) Tarteeb e Tilawat:(12) Mushtamil e Para:(12-13) Total Aayaat:(111)
Total Ruku:(12) Total Words:(1961) Total Letters:(7207)
110

حَتّٰۤى اِذَا اسْتَایْــٴَـسَ الرُّسُلُ وَ ظَنُّوْۤا اَنَّهُمْ قَدْ كُذِبُوْا جَآءَهُمْ نَصْرُنَا فَنُجِّیَ مَنْ نَّشَآءُؕ-وَ لَا یُرَدُّ بَاْسُنَا عَنِ الْقَوْمِ الْمُجْرِمِیْنَ(۱۱۰)
ترجمہ: کنزالعرفان
یہاں تک کہ جب رسولوں کو ظاہری اسباب کی امید نہ رہی اور لوگ سمجھے کہ ان سے جھوٹ کہا گیا ہے تو اس وقت ان کے پاس ہماری مدد آگئی تو جسے ہم نے چاہا اسے بچالیا گیا اور ہمارا عذاب مجرموں سے پھیرا نہیں جاتا۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{حَتّٰۤى اِذَا اسْتَایْــٴَـسَ الرُّسُلُ:یہاں  تک کہ جب رسولوں  کو ظاہری اسباب کی امید نہ رہی۔}یعنی لوگوں  کو چاہئے کہ اللّٰہ تعالیٰ کے عذاب میں  تاخیر ہونے اور عیش و آسائش کے دیر تک رہنے پر مغرور نہ ہوجائیں  کیونکہ پہلی اُمتوں  کو بھی بہت مہلتیں  دی جاچکی ہیں  یہاں  تک کہ جب اُن کے عذابوں  میں  بہت تاخیر ہوئی اور ظاہری اسباب کے اعتبار سے رسولوں  کو اپنی قوموں  پر دنیا میں  ظاہری عذاب آنے کی اُمید نہ رہی تو قوموں  نے گمان کیا کہ رسولوں  نے انہیں  جو عذاب کے وعدے دیئے تھے وہ پورے ہونے والے نہیں   تو اس وقت اچانک انبیاءِ کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَاماور ان پر ایمان لانے والوں  کے لئے ہماری مدد آگئی اور ہم نے اپنے بندوں  میں  سے اطاعت کرنے والے ایمانداروں  کو بچالیا اور مجرمین اس عذاب میں  مبتلا ہوگئے۔ (ابوسعود، یوسف، تحت الآیۃ: ۱۰۹، ۳ / ۱۴۲-۱۴۳، مدارک، یوسف، تحت الآیۃ: ۱۰۹، ص۵۴۸، ملتقطاً)

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links