DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Sad Ayat 63 Translation Tafseer

رکوعاتہا 5
سورۃ ﳧ
اٰیاتہا 88

Tarteeb e Nuzool:(38) Tarteeb e Tilawat:(38) Mushtamil e Para:(23) Total Aayaat:(88)
Total Ruku:(5) Total Words:(818) Total Letters:(3020)
62-64

وَ قَالُوْا مَا لَنَا لَا نَرٰى رِجَالًا كُنَّا نَعُدُّهُمْ مِّنَ الْاَشْرَارِؕ(۶۲)اَتَّخَذْنٰهُمْ سِخْرِیًّا اَمْ زَاغَتْ عَنْهُمُ الْاَبْصَارُ(۶۳)اِنَّ ذٰلِكَ لَحَقٌّ تَخَاصُمُ اَهْلِ النَّارِ۠(۶۴)
ترجمہ: کنزالعرفان
اور کہیں گے: ہمیں کیا ہوا کہ ہم ان مردوں کو نہیں دیکھ رہے جنہیں ہم برا شمار کرتے تھے۔ کیا ہم نے انہیں (ایسے ہی) ہنسی بنالیاتھا یا آنکھیں ان کی طرف سے پھر گئی تھیں ؟بیشک یہ دوزخیوں کا باہم جھگڑناضرور حق ہے۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{وَ قَالُوْا: اور وہ کہیں گے۔} اس آیت اور ا س کے بعد والی آیت کا خلاصہ یہ ہے کہ جب کفار جہنم میں  غریب مسلمانوں  کو نہ دیکھیں  گے تو کفار کے سردار کہیں  گے :ہمیں  جہنم میں  وہ غریب مسلمان نظر کیوں  نہیں  آ رہے جنہیں  ہم دنیا میں  برے لوگوں  میں  شمار کرتے تھے اور انہیں  ہم اپنے دین کا مخالف ہونے کی وجہ سے شریر کہتے تھے اور غریب ہونے کی وجہ سے انہیں  حقیر سمجھتے تھے ،پھرکہیں  گے کہ کیا ہم نے انہیں  مذاق نہ بنالیاتھا جبکہ حقیقت میں  وہ ایسے نہ تھے اوروہ دوزخ میں  آئے ہی نہیں  ہیں  نیزہمارا اُن کے ساتھ اِستہزاء کرنا اور اُ ن کا مذاق اڑانا باطل اور غلط تھا یا ہماری آنکھیں  ان کی طرف سے پھر گئی تھیں  اس لئے وہ ہمیں  نظر نہ آئے ۔دوسری آیت کے آخری حصے کا ایک معنی یہ بھی ہے کہ یا اُن کی طرف سے ہماری آنکھیں  پھر گئیں  اور دنیا میں  ہم اُن کے مرتبے اور بزرگی کو نہ دیکھ سکے۔ (خازن، ص، تحت الآیۃ: ۶۲-۶۳، ۴ / ۴۵، ملخصاً) اس سے معلوم ہوا کہ کفار جہنم میں  ایک دوسرے کو پہچانیں  گے اور دنیا کی باتیں  بھی یا دکریں  گے۔

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links