DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Hijr Ayat 13 Translation Tafseer

رکوعاتہا 6
سورۃ ﰆ
اٰیاتہا 99

Tarteeb e Nuzool:(54) Tarteeb e Tilawat:(15) Mushtamil e Para:(13-14) Total Aayaat:(99)
Total Ruku:(6) Total Words:(730) Total Letters:(2827)
10-13

وَ لَقَدْ اَرْسَلْنَا مِنْ قَبْلِكَ فِیْ شِیَعِ الْاَوَّلِیْنَ(۱۰)وَ مَا یَاْتِیْهِمْ مِّنْ رَّسُوْلٍ اِلَّا كَانُوْا بِهٖ یَسْتَهْزِءُوْنَ(۱۱)كَذٰلِكَ نَسْلُكُهٗ فِیْ قُلُوْبِ الْمُجْرِمِیْنَۙ(۱۲)لَا یُؤْمِنُوْنَ بِهٖ وَ قَدْ خَلَتْ سُنَّةُ الْاَوَّلِیْنَ(۱۳)
ترجمہ: کنزالعرفان
اور بیشک ہم نے تم سے پہلے گزشتہ امتوں میں رسول بھیجے۔ اور ان کے پاس جو بھی رسول آتا وہ اس کا مذاق اڑاتے تھے ۔ایسے ہی ہم اس ہنسی کو ان مجرموں کے دلوں میں ڈالتے ہیں ۔ وہ اس پر ایمان نہیں لاتے حالانکہ پہلے لوگوں کا طریقہ گزر چکا ہے ۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{وَ لَقَدْ اَرْسَلْنَا مِنْ قَبْلِكَ:اور بیشک ہم نے تم سے پہلے رسول بھیجے۔} اس آیت اور اس کے بعد والی آیت کا خلاصہ یہ ہے کہ جب کفارِ مکہ نے سیّدُ المرسَلینصَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَسے جاہلانہ باتیں  کیں  اور بے ادبی کرتے ہوئے آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکو مجنون کہا تو اللّٰہ تعالیٰ نے اپنے حبیب صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَکو تسلی دیتے ہوئے ارشاد فرمایا کہ’’آپ سے پہلے سابقہ امتوں  میں  ہم نے رسول بھیجے اور  ان لوگوں  کے پاس جو بھی رسول آتا وہ اس کا مذاق اڑاتے تھے۔ کفار کی اپنے انبیاء اور رسولوں  عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکے ساتھ یہ روش سابقہ زمانوں  سے چلی آ رہی ہے ،لہٰذا اے حبیب! صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ، آپ بھی دیگر انبیاء ومرسلین عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی طرح اپنی قوم کی اَذِیّتوں  پر صبر فرمائیں ۔( خازن، الحجر، تحت الآیۃ: ۱۰، ۳ / ۹۶)

{كَذٰلِكَ:ایسے ہی۔} اس آیت کا معنی یہ ہے کہ جس طرح ہم نے سابقہ امتوں  کے دلوں  میں  کفر،تکذیب اور اِستہزاء داخل کر دیا تھا ایسے ہی مکہ کے مشرکین کے دلوں  میں  بھی داخل کر دیا ہے۔ (خازن، الحجر، تحت الآیۃ: ۱۲، ۳ / ۹۶)

{لَا یُؤْمِنُوْنَ بِهٖ:وہ اس پر ایمان نہیں  لاتے۔} یعنی وہ تاجدارِ رسالت صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَیا قرآن پر ایمان نہیں  لاتے حالانکہ پہلے لوگوں  کا طریقہ گزر چکا ہے کہ وہ انبیاءِ کرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی تکذیب کرکے عذابِ الٰہی سے ہلاک ہوتے رہے ہیں  ،یہی حال ان کفارِ مکہ کا ہے تو انہیں  عذابِ الٰہی سے ڈرتے رہنا چاہیے۔ (خازن، الحجر، تحت الآیۃ: ۱۳، ۳ / ۹۶، جلالین، الحجر، تحت الآیۃ: ۱۳، ص۲۱۱، ملتقطاً)

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links