DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah An Naml Ayat 82 Translation Tafseer

رکوعاتہا 7
سورۃ ﳗ
اٰیاتہا 93

Tarteeb e Nuzool:(48) Tarteeb e Tilawat:(27) Mushtamil e Para:(19-20) Total Aayaat:(93)
Total Ruku:(7) Total Words:(1276) Total Letters:(4724)
82

وَ اِذَا وَقَعَ الْقَوْلُ عَلَیْهِمْ اَخْرَجْنَا لَهُمْ دَآبَّةً مِّنَ الْاَرْضِ تُكَلِّمُهُمْۙ-اَنَّ النَّاسَ كَانُوْا بِاٰیٰتِنَا لَا یُوْقِنُوْنَ۠(۸۲)
ترجمہ: کنزالعرفان
اور جب ان پر با ت آپڑے گی توہم ان کے لیے زمین سے ایک جانور نکالیں گے جو لوگوں سے کلام کرے گااس لیے کہ لوگ ہماری آیتوں پر یقین نہ کرتے تھے۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{وَ اِذَا وَقَعَ الْقَوْلُ عَلَیْهِمْ: اور جب ان پر با ت آپڑے گی۔} مفسرین نے ’’بات آ پڑنے‘‘ کے مختلف معنی بیان کئے ہیں۔ (1) جب کفارپر عذاب آناواجب ہوجائے گا۔ (2) جب ان پر اللہ تعالیٰ کا غضب (کا وقوع لازم) ہوجائے گا۔ (3)جب ان پر حجت پوری ہو جائے گی۔یہ اس وقت ہو گا جب لوگ نیک کاموں  کی دعوت دینا اور برے کاموں  سے منع کرنا ترک کردیں  گے۔بعض مفسرین کے نزدیک یہ اس وقت ہو گا جب کفار کی اصلاح کی کوئی امید باقی نہ رہے گی اور یہ امید قیامت قائم ہونے سے پہلے آخری زمانے میں  ختم ہوگی۔( خازن، النمل، تحت الآیۃ: ۸۲، ۳ / ۴۱۹)

            ابو البرکات عبد اللہ بن احمد نسفی رَحْمَۃُ اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ فرماتے ہیں : ’’بات سے مراد وہ ہے جس کا کفار سے وعدہ کیا گیا یعنی قیامت قائم ہونا اور عذاب لازم ہونا اور بات آپڑنے سے مراد اس کا حاصل ہونا ہے ۔آیت سے مراد یہ ہے کہ قیامت قریب ہوجائے گی اوراس کی علامتیں  ظاہر ہونے لگیں  گی اور اس وقت توبہ نفع نہ دے گی۔( مدارک، النمل، تحت الآیۃ: ۸۲، ص۸۵۶)

{اَخْرَجْنَا لَهُمْ دَآبَّةً مِّنَ الْاَرْضِ: ہم ان کے لیے زمین سے ایک جانور نکالیں  گے۔} یعنی جب کفارپر با ت آپڑے گی توہم ان کے لیے زمین سے ایک عجیب و غریب جسم والاجانور نکالیں  گے جو لوگوں  سے فصیح و بلیغ کلام کرے گا اور کہے گا: ’’ہٰذَا مُؤْمِنٌ وَ ہٰذَا کَافِرٌ‘‘ یعنی یہ مومن ہے اور یہ کافر ہے ۔( مدارک، النمل، تحت الآیۃ: ۸۲، ص۸۵۶)

’’دَآبَّةُ الْاَرْض‘‘ کا تعارف:

            اس جانور کو ’’دَآبَّةُ الْاَرْض‘‘ کہتے ہیں  ۔اس جانورکے بارے میں  صرف اتنا جان لینا کافی ہے کہ یہ عجیب و غریب شکل کا جانور ہوگا ۔ کوہ ِصفا سے برآمد ہو کر تمام شہروں  میں  بہت جلد پھرے گا ۔فصاحت کے ساتھ کلام کرے گا۔ ہر شخص کی پیشانی پر ایک نشان لگائے گا ،ایمانداروں  کی پیشانی پر حضرت موسیٰ عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کے عصاسے نورانی خط کھینچے گا اورکافر کی پیشانی پر حضرت سلیمان عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی انگوٹھی سے سیاہ مہر لگائے گا۔

{اَنَّ النَّاسَ كَانُوْا بِاٰیٰتِنَا لَا یُوْقِنُوْنَ:  اس لیے کہ لوگ ہماری آیتوں  پر یقین نہ کرتے تھے۔} اس آیت کے بارے میں  ایک احتمال یہ ہے کہ یہ کلام ’’دَآبَّۃُ الْاَرْض‘‘ کا ہے۔ اس صورت میں  آیت کا معنی یہ ہو گا کہ وہ جانور اللہ تعالیٰ کی طرف سے نمائندگی کرتے ہوئے لوگوں  سے یہ کہے گا کہ لوگ ہماری آیتوں پر یقین نہ کرتے تھے۔دوسرا احتمال یہ ہے کہ یہ اللہ تعالیٰ کا کلام ہے ۔اس صورت میں  آیت کا معنی یہ ہو گا کہ ہم یہ جانور ا س لئے نکالیں  گے کہ لوگ قرآن پاک پر ایمان نہ لاتے تھے جس میں  مرنے کے بعد زندہ کئے جانے اورحساب و عذاب کا بیان ہے ۔

 

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links