DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Furqan Ayat 42 Translation Tafseer

رکوعاتہا 6
سورۃ ﰖ
اٰیاتہا 77

Tarteeb e Nuzool:(42) Tarteeb e Tilawat:(25) Mushtamil e Para:(18-19) Total Aayaat:(77)
Total Ruku:(6) Total Words:(1032) Total Letters:(3823)
41-42

وَ اِذَا رَاَوْكَ اِنْ یَّتَّخِذُوْنَكَ اِلَّا هُزُوًاؕ-اَهٰذَا الَّذِیْ بَعَثَ اللّٰهُ رَسُوْلًا(۴۱)اِنْ كَادَ لَیُضِلُّنَا عَنْ اٰلِهَتِنَا لَوْ لَاۤ اَنْ صَبَرْنَا عَلَیْهَاؕ-وَ سَوْفَ یَعْلَمُوْنَ حِیْنَ یَرَوْنَ الْعَذَابَ مَنْ اَضَلُّ سَبِیْلًا(۴۲)
ترجمہ: کنزالعرفان
اور جب آپ کو دیکھتے ہیں تو آپ کو ٹھٹھا مذاق بنالیتے ہیں (اور کہتے ہیں کہ) کیا یہ وہ شخص ہے جسے اللہ نے رسول بنا کر بھیجا ہے؟ ۔ (اور کہتے ہیں کہ) قریب تھا کہ اگر ہم اپنے معبودوں پر ڈٹے نہ رہتے تو یہ (رسول) ہمیں ہمارے معبودوں سے بہکا دیتے اور (اللہ فرماتا ہے کہ) عنقریب یہ جان لیں گے جب عذاب دیکھیں گے کہ کون گمراہ تھا؟


تفسیر: ‎صراط الجنان

{وَ اِذَا رَاَوْكَ: اور جب آپ کو دیکھتے ہیں ۔} ارشاد فرمایاکہ اے حبیب! صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ، جن مشرکین کے سامنے آپ نے سابقہ قوموں  کے واقعات بیان فرمائے ہیں ، یہ جب آپ کو دیکھتے ہیں  تو آپ کو ٹھٹھا مذاق بنالیتے ہیں  اور کہتے ہیں  کہ کیا یہ وہ شخص ہے جسے اللہ تعالٰی نے اپنی مخلوق میں  سے ہماری طرف رسول بنا کر بھیجا ہے؟( تفسیرطبری، الفرقان، تحت الآیۃ: ۴۱، ۹ / ۳۹۲)

{اِنْ كَادَ: قریب تھا۔} اس آیت میں  ارشاد فرمایا کہ وہ مشرکین مزید یہ کہتے ہیں  کہ اگر ہم اپنے ان معبودوں پر ڈٹے نہ رہتے اور ان کی عبادت پر ثابت قدم نہ رہتے تو قریب تھا یہ نبی ہمیں  ہمارے معبودوں  سے بہکادیتے۔( تفسیرطبری، الفرقان، تحت الآیۃ: ۴۲، ۹ / ۳۹۳)

            اس سے معلوم ہوا کہ سیّد المرسَلین صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی دعوت اور آپ صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے اظہارِ معجزات نے کفار پر اتنا اثر کیا تھا اور دین ِحق کو اس قدر واضح کردیا تھا کہ خود کفار کو اقرار ہے کہ اگر وہ اپنی ہٹ دھرمی پر جمے نہ رہتے تو قریب تھا کہ بت پرستی چھوڑ دیں  اور دین ِاسلام اختیار کریں ۔ خلاصۂ کلام یہ ہے کہ دین ِاسلام کی حقانیت اُن پر خوب واضح ہوچکی تھی اور شکوک و شُبہات مٹا ڈالے گئے تھے لیکن وہ اپنی ہٹ دھرمی اور ضد کی وجہ سے ایمان قبول کرنے سے محروم رہے۔( مدارک، الفرقان، تحت الآیۃ: ۴۲، ص۸۰۴)

{وَ سَوْفَ یَعْلَمُوْنَ: اور عنقریب یہ جان لیں  گے۔} ارشاد فرمایا کہ عنقریب جب یہ لوگ آخرت کاعذاب دیکھیں  گے تو اس وقت جان لیں  گے کہ کون گمراہ تھا۔یہ کفار کی اس بات کا جواب ہے جو انہوں  نے کہی تھی کہ قریب ہے کہ یہ ہمیں  ہمارے خداؤں  سے بہکادیں ۔ یہاں  بتایا گیا کہ بہکے ہوئے تم خود ہو اورآخرت میں  یہ تمہیں  خود ہی معلوم ہوجائے گا اور رسولِ کریم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی طرف تم نے جو بہکانے کی نسبت کی ہے وہ محض بے جا ہے۔( مدارک، الفرقان، تحت الآیۃ: ۴۲، ص۸۰۴)

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links