DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Anbiya Ayat 73 Translation Tafseer

رکوعاتہا 7
سورۃ ﰑ
اٰیاتہا 112

Tarteeb e Nuzool:(73) Tarteeb e Tilawat:(21) Mushtamil e Para:(17) Total Aayaat:(112)
Total Ruku:(7) Total Words:(1323) Total Letters:(4965)
73

وَ جَعَلْنٰهُمْ اَىٕمَّةً یَّهْدُوْنَ بِاَمْرِنَا وَ اَوْحَیْنَاۤ اِلَیْهِمْ فِعْلَ الْخَیْرٰتِ وَ اِقَامَ الصَّلٰوةِ وَ اِیْتَآءَ الزَّكٰوةِۚ-وَ كَانُوْا لَنَا عٰبِدِیْنَۚۙ(۷۳)
ترجمہ: کنزالعرفان
اور ہم نے انہیں امام بنایا کہ ہمارے حکم سے رہنمائی کرتے ہیں اور ہم نے ان کی طرف اچھے کام کرنے اور نماز قائم کرنے اور زکوٰۃ ادا کرنے کی وحی بھیجی اور وہ ہماری عبادت کرنے والے تھے۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{وَ جَعَلْنٰهُمْ اَىٕمَّةً:اور ہم نے انہیں  امام بنایا۔} ارشاد فرمایا :ہم نے انہیں  امام بنایا کہ بھلائی کے کاموں  میں  ان کی پیروی کی جاتی ہے اور وہ ہمارے حکم سے لوگوں  کوہمارے دین کی طرف بلاتے ہیں  اور ہم نے ان کی طرف اچھے کام کرنے ، نماز قائم کرنے اور زکوٰۃ ادا کرنے کی وحی بھیجی کیونکہ نماز بدنی عبادات میں  سب سے افضل ہے اور زکوٰۃ مالی عبادات میں  سب سے افضل ہے اور وہ صرف ہماری عبادت کرنے والے تھے۔( خازن، الانبیاء، تحت الآیۃ: ۷۳، ۳ / ۲۸۳)

انبیاءِکرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام پر زکوٰۃ فرض نہیں :

            یاد رہے کہ انبیاءِکرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو امتیوں  پر یہ امتیاز حاصل ہے کہ ان کے مال پر زکوٰۃ فرض نہیں  ہوتی۔

چنانچہ علامہ احمد طحطاوی رَحْمَۃُ اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  فرماتے ہیں  ۔انبیاءِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام پر زکوٰۃ واجب نہیں  کیونکہ ان کا سب کچھ  اللہ تعالیٰ کی ملک ہے اور جو کچھ ان کے قبضے میں  ہے وہ امانت ہے اور یہ اسے خرچ کرنے کے مقامات پر خرچ کرتے ہیں  اور غیر محل میں  خرچ کرنے سے رکتے ہیں  اور ا س لئے کہ زکوٰۃ اس کے لئے پاکی ہے جو گناہوں  کی گندگی سے پاک ہونا چاہے جبکہ انبیاءِکرامعَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام معصوم ہونے کی وجہ سے گناہوں  کی گندگی سے پاک ہیں ۔( حاشیہ الطحطاوی علی المراقی، کتاب الزکاۃ، ص۷۱۳)

            علامہ ابنِ عابدین شامی رَحْمَۃُ اللہ  تَعَالٰی  عَلَیْہِ  دُرِّ مختار کی اس عبارت’’اس پر اجماع ہے کہ انبیاءِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامپر زکوٰۃ واجب نہیں  ‘‘ کے تحت فرماتے ہیں  ’’ کیونکہ زکوٰۃ اس کے لئے پاکی ہے جو گندگی( یعنی مال کے میل) سے پاک ہونا چاہے جبکہ انبیاءِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام اس سے بری ہیں  ۔ (یعنی ان کے مال ابتدا سے ہی میل سے پاک ہیں ۔)( رد المحتار علی الدر المختار، کتاب الزکاۃ، ۳ / ۲۰۲)

             لہٰذا جن آیات میں  انبیاءِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکو زکوٰۃ دینے کا فرمایا گیا ان سے یا تو تزکیۂ نفس یعنی نفس کو ان چیزوں  سے پاک رکھنا مراد ہے جو شانِ نبوت کے خلاف ہیں  یاان سے مراد یہ ہے کہ وہ اپنی امت کو زکوٰۃ ادا کرنے کا حکم دیں ۔

حضرت ابراہیم عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامپر  اللہ تعالیٰ کے احسانات:

            خلاصۂ کلام یہ ہے کہ اللّٰہعَزَّوَجَلَّ نے حضرت ابراہیم عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام پرطرح طرح کے احسانات فرمائے ، پہلا تو یہ کہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکو بچپن سے ہی رشد وہدایت سے نوازا۔ دوسرا یہ کہ ظالم وجابر بادشاہ کے مقابلہ میں  آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو غلبہ عطا فرمایا۔ تیسرا یہ کہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکو انبیاءِکرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامکے شہر کی طرف ہجرت کروائی ،چوتھا یہ کہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کونیک صالح اولاد عطا کی اور پانچواں  یہ کہ آپ عَلَیْہِ  الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی اولاد کوبھی نبوت عطاکی ۔

 

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links