کب گناہوں سے کَنارا میں کروں گا یارب/غیر ممکن ہے ثنائے مصطفےٰ

مُناجات

کب گناہوں سے کَنارا میں کروں گا یارب!

کب گناہوں سے کَنارا میں کروں گا یارب!

نیک کب اے مِرے اللہ! بنوں گا یارب!

کب گناہوں کے مَرَض سے میں شِفا پاؤں گا

کب میں بیمار مدینے کا بنوں گا یارب!

آج بنتا ہوں مُعَزَّز جو کُھلے حشر میں عیب

آہ! رُسوائی کی آفت میں پھنسوں گا یارب!

عَفْو کر اور سدا کے لئے راضی ہوجا

گر کرم کردے تو جنّت میں رہوں گا یارب!

دے دے مرنے کی مدینے میں سعادت دیدے

کس طرح سندھ کے جنگل میں مروں گا یارب!

کاش! ہر سال مدینے کی بہاریں دیکھوں

سبز گُنبد کا بھی دیدار کروں گا یارب!

اِذْن سے تیرے سرِ حَشْر کہیں کاش! حُضور

ساتھ عطّاؔر کو جنّت میں رکھوں گا یارب!

وسائلِ بخشش (مُرَمَّم)،ص84

از شیخِ طریقت امیرِ اہلِ سنتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ

                                                                                    

 


 

غیر ممکن ہے ثنائے مصطفےٰ

غیر ممکن ہے ثنائے مصطفےٰ

خود ہی واصِف ہے خدائے مصطفےٰ

مصطفےٰ ہیں ساری خَلقت کے لیے

ساری خلقت ہے برائے مصطفےٰ

ڈُھونڈتے ہیں سب رِضا اللہ کی

چاہتا ہے حق رِضائے مصطفےٰ

رہ گئے سِدرہ پہ جبریلِ امیں

عرش سے بھی پار جائے مصطفےٰ

میری امت میری امت بخش دے

ہے یہی ہر دَم دُعائے مصطفےٰ

پوچھتے کیا ہو فرشتو قبر میں

بندۂ حق ہوں گدائے مصطفےٰ

ہے تمنّائے جمیلِؔ قادری

سر ہو میرا اور پائے مصطفےٰ

قبالۂ بخشش،ص44

از مداح الحبیب مولاناجمیل الرّحمٰن قادری رضویعَلَیْہِ رَحمَۃُ  اللہ القوی

نعت

بیاں ہو کس زباں سے مرتبہ صِدّیقِ اکبر کا

بیاں ہو کس زباں سے مرتبہ صِدّیقِ اکبر کا

ہے یارِ غار محبوبِ خدا صِدّیقِ اکبر کا

رُسُل اور انبیاء کے بعد جو افضل ہو عالَم سے

یہ عالَم میں ہے کس کا مرتبہ صِدّیقِ اکبر کا

گدا صدّیقِ اکبر کا خدا سے فضل پاتا ہے

خدا کے فضل سے ہوں میں گدا صِدّیقِ اکبر کا

نبی کا اور خدا کا مَدح گو صِدّیقِ اکبر ہے

نبی صِدّیقِ اکبر کا خدا صِدّیقِ اکبر کا

ضعیفی میں یہ قوّت  ہے ضعِیفوں کو قوی کردیں

سَہارا لیں ضعیف و اَقویا صِدّیقِ اکبر کا

ہوئے فاروق و عثمان و علی جب داخلِ بیعت

بنا فخرِ سلاسِل سلسلہ صِدّیقِ اکبر کا

لُٹایا راہِ حق میں گھر کئی بار اس محبّت سے

کہ لُٹ لُٹ کر حَسؔن گھر بن گیاصِدّیقِ اکبر کا

ذوقِ نعت،ص53

از  برادرِ اعلیٰ حضرت مولانا حسن رضا خانعَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن

مَنقبت

Share