عمل کا ہو جذبہ عطا یا الٰہی /سلطانِ جہاں محبوبِ خدا تری شان وشوکت کیا کہنا

عمل کا ہو جذبہ عطا یا الٰہی

 

سلطانِ جہاں محبوبِ خدا تری شان  وشوکت کیا کہنا

عمل کا ہو جذبہ عطا یاالٰہی

 

سلطانِ جہاں محبوبِ خدا تِری شان  وشوکت کیا کہنا

گناہوں سے مجھ کو بچا یاالٰہی

 

ہر شے پہ لکھا ہے نام تِرا تِرے ذکر کی رِفعَت کیا کہنا

میں پانچوں نمازیں پڑھوں باجماعت

 

ہے سَر پر تاج نُبُوَّت کا جوڑا ہے تَن پہ کرامت کا

ہو توفیق ایسی عطا یاالٰہی

 

سہرا ہے جَبیں پہ شفاعت کا امّت پہ ہے رَحمت کیا کہنا

دے شوقِ تِلاوت دے ذوقِ عبادت

 

قراٰن کلامِ باری ہے اور تیری زُباں سے جاری ہے

رہوں باوُضو میں سدا یاالٰہی

 

کیا تیری فَصاحت پیاری ہے اور تیری بلاغت کیا کہنا

ہمیشہ نگاہوں کو اپنی جھکاکر

 

باتوں سے ٹپکتی لذّت ہے آنکھوں سے برستی رحمت ہے

کروں خاشِعانہ دعا یاالٰہی

 

خطبے سے چمکتی ہیبت ہے اے شاہِ رسالت کیا کہنا

لباس اپنا سنّت سے آراستہ ہو

 

آنکھوں سے کیا دریا جاری اور لب پہ دعا پیاری پیاری

عِمامہ ہو سَر پر سجا یاالٰہی

 

رو رو کے گزاری شَب ساری اے حامیِ اُمّت کیا کہنا

ہو اَخلاق اچّھا ہو کِردار سُتھرا

 

عالَم کی بھریں ہر دَم جھولی خود  کھائیں تو بس جَو کی روٹی

مُجھے متّقی تُو بنا یاالٰہی

 

وہ شانِ عطا و سخاوت  کی یہ زُہد و قَناعَت کیا کہنا

غصیلے مِزاج اور تمسخُر کی خصلت

 

شہرت ہے جمیؔل اتنی تیری یہ سب ہے کرامت مُرشِد کی

سے عطّاؔر کو تو بچا یاالٰہی

 

کہتے ہیں تجھے مَدّاحِ نبی سب اہلسنّت کیا کہنا

وسائلِ بخشش (مُرَمَّم)،ص102

از شیخِ طریقت امیر ِ اہلِ سنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ

 

قبالۂ بخشش،ص47

از مداحُ الحبیب مولاناجمیلُ الرحمٰن قادری رضویعَلَیْہِ رَحمَۃُ  اللہ القوی

                                                              

Share

Articles

Comments


Security Code