اللہ کوئی حج کا سَبَب اب تو بنادے/ سرور کہوں کہ مالک و مولیٰ کہوں تجھے/ ہمارے آقا ہمارے مولیٰ امامِ اعظم ابوحنیفہ

حمد/مناجات

اللہ کوئی حج کا سَبَب اب تو بنادے

اللہ کوئی حج کا سَبَب اب تو بنادے

جلوہ مجھے پھر گنبدِ خَضْرا کا دکھادے

یا رب!میں ترے خوف سے روتا رہوں ہر دَم

دیوانہ شَہنشاہِ مدینہ کا بنادے

جب نعت سُنوں جھوم اٹھوں عشقِ نبی میں

ایسا مجھے مستانہ محمد کا بنادے

اُف  حَشْر کی گرمی بھی ہے  اور پیا س بلا کی

اے ساقیِ کوثر  مجھے اِک جام پلادے

اللہ! مجھے سوز و گداز ایسا عطا کر

تڑپا دے بیاں نعتِ نبی مجھ کو رُلادے

عطّار ہوں میں ان کا گدا اب تو توجّہ

بس جانبِ شاہانِ جہاں میری بلا دے

وسائلِ بخشش مرمم،ص120

از شیخِ طریقت امیرِ اہلِ سنت دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ


Share

اللہ کوئی حج کا سَبَب اب تو بنادے/ سرور کہوں کہ مالک و مولیٰ کہوں تجھے/ ہمارے آقا ہمارے مولیٰ امامِ اعظم ابوحنیفہ

نعت/استغاثہ

سرور کہوں کہ مالک و مولیٰ کہوں تجھے

سَرْوَر کہوں کہ مالک و مولیٰ کہوں تجھے

باغِ خلیل کا گُلِ زیبا کہوں تجھے

صُبحِ وطن پہ شامِ غریباں کو دُوں شَرَف

بیکس نواز گیسووں والا کہوں تجھے

اللہ رے تیرے جسمِ مُنَوّر کی تابِشیں

اے جانِ جاں میں جانِ تجلّا کہوں تجھے

مُجرم ہوں اپنے عفْو کا ساماں کروں شَہا

یعنی شفیع روزِ جزا کا کہوں تجھے

کہہ لے گی سب کچھ اُن کے ثنا خواں کی خامُشی

چپ ہورہا ہے کہہ کے  میں کیا کیا کہوں تجھے

لیکن رضا نے ختمِ سُخَن اس پہ کردیا

خالِق کا بندہ خَلْق کا آقا کہوں تجھے

حدائقِ بخشش ،ص174

از امامِ اہلِ سنّت امام احمد رضا خان عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن


Share

اللہ کوئی حج کا سَبَب اب تو بنادے/ سرور کہوں کہ مالک و مولیٰ کہوں تجھے/ ہمارے آقا ہمارے مولیٰ امامِ اعظم ابوحنیفہ

منقبت

ہمارے آقا ہمارے مولیٰ امامِ اعظم ابوحنیفہ

ہمارے آقا ہمارے مولیٰ امامِ اعظم ابوحنیفہ

ہمارے مَلجاء ہمارے ماویٰ امامِ اعظم ابوحنیفہ

زمانے بھر نے زمانہ بھر میں بہت تجسّس کیا و لیکن

مِلا نہ کوئی امام تم سا امامِ اعظم ابوحنیفہ

تمہارے آگے تمام عالَم نہ کیوں کرے زانوئے ادب خَم

کہ پیشوایانِ دِیں نے مانا امامِ اعظم ابوحنیفہ

نہ کیوں کریں ناز اہلِ سنّت کہ تم سے چمکا نصیبِ اُمّت

سراجِ اُمّت ملا جو تم سا امامِ اعظم ابوحنیفہ

سِراج تُو ہے بغیر تیرے جو کوئی سمجھے حدیث و قرآں

پھرے بھٹکتا نہ پائے رستہ امامِ اعظم ابوحنیفہ

خبر لے اے دستگیرِ امت ہے سالکِ بے خبر پہ شدت

وہ تیرا ہوکر پھرے بھٹکتا امامِ اعظم ابوحنیفہ

دیوانِ سالک،ص35

از حکیم الامّت مفتی احمد یا ر خان عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن

Share