DONATE NOW donation

Home Al-Quran Surah Al Fath Ayat 29 Translation Tafseer

رکوعاتہا 4
سورۃ ﳱ
اٰیاتہا 29

Tarteeb e Nuzool:(111) Tarteeb e Tilawat:(48) Mushtamil e Para:(26) Total Aayaat:(29)
Total Ruku:(4) Total Words:(638) Total Letters:(2485)
29

مُحَمَّدٌ رَّسُوْلُ اللّٰهِؕ-وَ الَّذِیْنَ مَعَهٗۤ اَشِدَّآءُ عَلَى الْكُفَّارِ رُحَمَآءُ بَیْنَهُمْ تَرٰىهُمْ رُكَّعًا سُجَّدًا یَّبْتَغُوْنَ فَضْلًا مِّنَ اللّٰهِ وَ رِضْوَانًا٘-سِیْمَاهُمْ فِیْ وُجُوْهِهِمْ مِّنْ اَثَرِ السُّجُوْدِؕ-ذٰلِكَ مَثَلُهُمْ فِی التَّوْرٰىةِ ﳝ- وَ مَثَلُهُمْ فِی الْاِنْجِیْلِ ﱠ كَزَرْعٍ اَخْرَ جَ شَطْــٴَـهٗ فَاٰزَرَهٗ فَاسْتَغْلَظَ فَاسْتَوٰى عَلٰى سُوْقِهٖ یُعْجِبُ الزُّرَّاعَ لِیَغِیْظَ بِهِمُ الْكُفَّارَؕ-وَعَدَ اللّٰهُ الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا وَ عَمِلُوا الصّٰلِحٰتِ مِنْهُمْ مَّغْفِرَةً وَّ اَجْرًا عَظِیْمًا۠(۲۹)
ترجمہ: کنزالعرفان
محمد اللہ کے رسول ہیں اور ان کے ساتھ والے کافروں پر سخت ، آپس میں نرم دل ہیں ۔ تُو انہیں رکوع کرتے ہوئے، سجدے کرتے ہوئے دیکھے گا ،اللہ کا فضل و رضا چاہتے ہیں ، ان کی علامت ان کے چہروں میں سجدوں کے نشان سے ہے ۔یہ ان کی صفت تورات میں (مذکور) ہے اور ان کی صفت انجیل میں (مذکور) ہے۔ (ان کی صفت ایسے ہے) جیسے ایک کھیتی ہو جس نے اپنی باریک سی کونپل نکالی پھر اسے طاقت دی پھر وہ موٹی ہوگئی پھر اپنے تنے پر سیدھی کھڑی ہوگئی، کسانوں کو اچھی لگتی ہے (اللہ نے مسلمانوں کی یہ شان اس لئے بڑھائی) تاکہ ان سے کافروں کے دل جلائے۔ اللہ نے ان میں سے ایمان والوں اور اچھے کام کرنے والوں سے بخشش اور بڑے ثواب کاوعدہ فرمایا ہے۔


تفسیر: ‎صراط الجنان

{مُحَمَّدٌ رَّسُوْلُ اللّٰهِ: محمد اللہ کے رسول ہیں ۔} اس سے پہلی آیت میں  اللہ تعالیٰ نے اپنی پہچان کروائی کہ’’ اللہ وہ ہے جس نے اپنے رسول کو ہدایت اور سچے دین کے ساتھ بھیجا ‘‘ اور اس آیت میں  اللہ تعالیٰ اپنے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی پہچان کروا رہا ہے کہ محمد مصطفی صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ اللہ تعالیٰ کے رسول ہیں ۔

            مفتی احمد یار خان نعیمی رَحْمَۃُاللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ فرماتے ہیں  :اگرچہ حضور عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی صفات بہت ہیں ، لیکن رب تعالیٰ نے انہیں  یہاں  رسالت کی صفت سے یاد فرمایا اور کلمہ میں  بھی یہ ہی وصف رکھا،دو وجہ سے ، ایک یہ کہ حضور (صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ) کا تعلق رب (عَزَّوَجَلَّ) سے بھی ہے اور مخلوق سے بھی۔رسول میں  ان دونوں  تعلقوں  کا ذکر ہے یعنی خدا کے بھیجے ہوئے اور مخلوق کی طرف بھیجے ہوئے ۔اگرچہ نبی میں  بھی یہ بات حاصل ہے لیکن نبی میں  صرف خبر لاناہے اور رسول میں  (شریعت و کتاب) خبر،ہدایات اور انعامات سب لانے کی طرف اشارہ ہے۔ دوسرے اس لئے کہ و ہ بچھڑوں  کو ملانے والے رسول ہی ہوتے ہیں ، جیسے ڈاک کا محکمہ کہ اگر یہ نہ ہوں  تو وہ ملک اور وہ شہر کٹ جاویں ، اسی طرح خالق و مخلوق میں  تعلق پیدا کرنے والے رسول ہی ہیں  کہ اگر ان کا واسطہ درمیان میں  نہ ہو تو خالق و مخلوق میں  کوئی تعلق نہ رہے، حضور (صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ) اللہ (عَزَّوَجَلَّ) کے رسول ہیں  کہ اُس کی نعمتیں  ہم تک پہنچاتے ہیں  اور ہمارے رسول ہیں  کہ ہماری درخواستیں  بارگاہِ رب میں  پیش فرماتے ہیں  اور ہمارے گناہ وہاں  پیش کر کے معاف کراتے ہیں ،جو کہے کہ ہم خود رب (عَزَّوَجَلَّ) تک پہنچ جائیں  گے وہ درپردہ حضور عَلَیْہِ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی رسالت کا منکر ہے ،اگر ہم وہاں  خود پہنچ جاتے تو رسول کی کیا ضرورت تھی، رب (عَزَّوَجَلَّ) غنی ہو کر بغیر واسطہ ہم سے تعلق نہیں  رکھتا تو ہم محتاج اور ضعیف ہو کر (واسطے کے بغیر) رب تعالیٰ سے تعلق کیسے رکھ سکتے ہیں ۔( شان حبیب الرحمٰن، ص ۲۱۸)

{وَ الَّذِیْنَ مَعَهٗۤ اَشِدَّآءُ عَلَى الْكُفَّارِ رُحَمَآءُ بَیْنَهُمْ: اور ان کے ساتھ والے کافروں  پر سخت ، آپس میں  نرم دل ہیں ۔} آیت کے اس حصے سے اللہ تعالیٰ نے اپنے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے صحابہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کے اَوصاف بیان فرما کر ان کی پہچان کروائی ہے ،چنانچہ ارشادفرمایا کہ جو لوگ میرے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے ساتھ ہیں  وہ کافروں  پر سخت ہیں  اور ایک دوسرے پر مہربان ہیں ۔

صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کی کافروں  پر سختی:

            انسان کی یہ فطرت ہے کہ وہ اپنے محبوب کے دشمنوں  سے نفرت کرتا اور ان پر سختی کرتا ہے اور اس میں  بھی جس کی محبت جتنی زیادہ ہو ا س کی اپنے محبوب کے دشمن سے نفرت اور سختی بھی اتنی ہی زیادہ ہوتی ہے اور یہ چیزاس کے عشق و محبت کی علامات میں  سے ایک اہم علامت شمار کی جاتی ہے ۔صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ وہ مبارک ہستیاں  ہیں  جن کا اللہ تعالیٰ اور اس کے پیارے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے عشق و محبت بے مثال اور لا زوال ہے اور سیّد المرسَلین صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی ذات ِگرامی انہیں  اپنے مال ،اولاد ،اہل و عیال حتّٰی کہ اپنی جان سے بھی زیادہ محبوب اور عزیز تھی اور اسی بے انتہاء عشق و محبت کا یہ نتیجہ تھا کہ صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ اللہ تعالیٰ اور ا س کے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے دشمنوں  یعنی کفار سے سخت نفرت کرتے اور ان پر انتہائی سختی فرمایا کرتے تھے اور ان کے اسی عمل کو اللہ تعالیٰ نے قرآنِ مجید میں  ان کے ایک وصف کے طور پر بیان فرمایاہے کہ میرے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے صحابہ کا ایک وصف یہ ہے کہ وہ کافروں  پر سخت ہیں  ۔‘‘

             عمومی طور پر تما م صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ ہی کافروں  پر سختی فرمایا کرتے تھے البتہ حضرت عمر فاروق رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ اس معاملے میں  سب سے زیادہ مشہور تھے ،حتّٰی کہ شیطان جیسا بدترین کافر بھی آپ کی سختی سے ڈرتا تھا، یہاں  آپ کی اس سیرت سے متعلق تین واقعات کا خلاصہ ملاحظہ ہو،

(1) …غزوہ ٔبدر کے بعدآپ نے یہ رائے پیش کی کہ سارے کافر قیدی قتل کر دئیے جائیں  اورآپ کی اس رائے کی تائید میں  قرآنِ مجید کی آیات نازل ہوئیں ۔

(2)…بشر نامی منافق نے سیّد المرسَلین صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کا فیصلہ ماننے سے انکار کیا تو آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ نے اسے قتل کر دیا اور فرمایا جو اللہ اور اس کے رسول کے فیصلہ سے راضی نہ ہو اُس کا میرے پاس یہ فیصلہ ہے ۔

(3)…جب منافقوں  کا سردار عبداللہ بن اُبی مر گیا تو حضرت عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ کی رائے یہ تھی اس کی نمازِ جنازہ نہ پڑھی جائے اور اس کی قبر پر نہ جایا جائے، اس کی تائید میں  بھی قرآنِ مجید کی آیت نازل ہوئی ۔

صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کی باہمی نرم دلی:

            اس سے پہلے اللہ تعالیٰ اور اس کے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے دشمنوں  کے ساتھ صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کے سلوک کا حال بیان ہوا اور اب اللہ تعالیٰ اور ا س کے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ سے کامل محبت کرنے والوں  کے باہمی سلوک کا حال ملاحظہ ہو،چنانچہ ان کا یہ وصف بیان کرتے ہوئے اللہ تعالیٰ نے ارشاد فرمایا کہ وہ آپس میں  نرم دل ہیں ۔صحابہ ٔکرام  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ آپس میں  ایسے نرم دل اورایک دوسر ے کے ساتھ ایسے محبت و مہربانی کرنے والے تھے جیسے ایک باپ اپنے بیٹے کے ساتھ کرتا ہے اور ان کی یہ ایمانی محبت اس حد تک پہنچ گئی تھی کہ جب ایک صحابی رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ دوسرے کو دیکھتے تو فرطِ محبت سے مصافحہ اورمعانقہ کرتے۔

            صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کی اس سیرت میں  دیگر مسلمانوں  کے لئے بھی نصیحت ہے کہ ایک مسلمان اپنے مسلمان بھائی سے نفرت نہ کرے اور اس کے ساتھ سختی سے پیش نہ آئے بلکہ شفقت و نرمی سے پیش آئے اوراس کے ساتھ مہربانی بھرا سلوک کرے ۔حدیثِ پاک میں  ہے کہ تم مسلمانوں  کو آپس کی رحمت ،باہمی محبت اور مہربانی میں  ایک جسم کی طرح دیکھو گے کہ جب ایک عُضْوْ بیمار ہوجائے تو سارے جسم کے اَعضاء بے خوابی اور بخار کی طرف ایک دوسرے کو بلاتے ہیں ۔( بخاری، کتاب الادب، باب رحمۃ النّاس والبہائم، ۴ / ۱۰۳، الحدیث: ۶۰۱۱)اللہ تعالیٰ مسلمانوں  کو آپس میں  شفقت و نرمی سے پیش آنے اور ایک دوسرے پر مہربانی کرنے کی توفیق عطا فرمائے،اٰمین۔

{تَرٰىهُمْ رُكَّعًا سُجَّدًا: تُو انہیں  رکوع کرتے ہوئے ،سجدے کرتے ہوئے دیکھے گا۔} یعنی صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کثرت سے اور پابندی کے ساتھ نمازیں  پڑھتے ہیں  اسی لئے کبھی تم انہیں  رکوع کرتے اور کبھی سجدہ کرتے ہوئے دیکھو گے اوراس قدر عبادت سے ان کامقصد صرف اللہ تعالیٰ کی رضاحاصل کرنا ہے۔( خازن، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ۴ / ۱۶۲، روح البیان، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ۹ / ۵۷، ملتقطاً)

صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کی عبادت کا حال:

            صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ وہ مبارک ہستیاں  ہیں  جنہیں  اللہ تعالیٰ نے اپنے حبیب صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی صحبت سے فیضیاب فرمایا اور سیّد المرسَلین صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے ان کی خود تربیت فرمائی جس کی برکت سے یہ حضرات نیک کاموں  میں  مصروف رہتے اور اللہ تعالیٰ کی عبادت کرنے میں  خوب کوشش کیا کرتے تھے، یہاں  بطورِ خاص نماز کے حوالے سے ان کی کوشش،جذبے اور عمل سے متعلق7واقعات ملاحظہ ہوں

(1)…جب نماز کا وقت ہوتا تو حضرت ابو بکر صدیق رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ فرمایاکرتے :اے لوگو! اٹھو، (گناہوں  کی) جو آگ تم نے جلا رکھی ہے اسے (نماز ادا کر کے) بجھا دو(کیونکہ نماز گناہوں  کی آگ بجھا دیتی ہے)۔( احیاء علوم الدین، کتاب اسرار الصلاۃ ومہماتہا، الباب الاول، فضیلۃ المکتوبۃ، ۱ / ۲۰۱)

(2)…حضرت عمر فاروق رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں  :اگر تین چیزیں  نہ ہوتیں (یعنی)اگر میں  اللہ تعالیٰ کے لئے اپنی پیشانی کو(سجدے میں )نہ رکھتا،یاایسی مجلسوں میں  نہ بیٹھتا جن میں  اچھی باتیں  اس طرح چنی جاتی ہیں  جیسے عمدہ کھجوریں چنی جاتی ہیں  یاراہِ خدا میں  سفر نہ کرتا تو میں  ضرور اللہ تعالیٰ سے ملاقات (یعنی وفات پا جانے) کو پسند کرتا۔( حلیۃ الاولیاء، عمر بن الخطاب، ۱ / ۸۷، الحدیث: ۱۳۰)

(3)…حضرت عثمان غنی رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ (ممنوع اَیّام کے علاوہ) مسلسل روزہ رکھا کرتے اور رات کے ابتدائی حصے میں  کچھ دیر آرام کرتے پھر ساری رات عبادت میں  بسر کرتے تھے۔ (مصنف ابن ابی شیبہ، کتاب صلاۃ التطوع... الخ، من کان یامر بقیام اللیل، ۲ / ۱۷۳، الحدیث: ۶)

(4)…حضرت عثمان غنی رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ کی زوجہ فرماتی ہیں :آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ ساری رات عبادت کرتے اور (بسا اوقات)ایک رکعت میں  قرآنِ مجید ختم فرمایا کرتے تھے۔( معجم الکبیر، سن عثمان ووفاتہ رضی اللّٰہ عنہ، ۱ / ۸۷، الحدیث:۱۳۰)

(5)…حضرت علی المرتضیٰ کَرَّمَ اللہ تَعَالٰیوَجْہَہُ الْکَرِیْم کے بارے میں  مروی ہے کہ جب نماز کا وقت ہوجاتا تو آپ پر کپکپاہٹ طاری ہو جاتی اور چہرے کا رنگ بدل جاتا،آپ سے عرض کی گئی:اے امیر المومنین!آپ کو کیا ہو گیا؟ارشاد فرمایا: ’’اس امانت کی ادائیگی کا وقت آ گیا ہے جسے اللہ تعالیٰ نے آسمانوں ،زمین اور پہاڑوں  پر پیش کیا تو انہوں  نے اٹھانے سے انکار کر دیا اور اسے اٹھانے سے ڈر گئے۔( احیاء علوم الدین، کتاب اسرار الصلاۃ ومہماتہا، فضیلۃ الخشوع، ۱ / ۲۰۶)

(6)…حضرت نافع رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں  :حضرت عبداللہ بن عمر رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمَا  رات میں  نماز پڑھتے، پھر فرماتے :اے نافع!کیا سحری کا وقت ہو گیا؟وہ عرض کرتے:نہیں ،تو آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ دوبارہ نماز پڑھنا شروع کر دیتے، پھر (جب نماز سے فارغ ہوتے تو) فرماتیـ:اے نافع!کیا سحری کا وقت ہو گیا؟میں  عرض کرتا:جی ہاں ،تو آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ بیٹھ کر استغفار اور دعا میں  مصروف ہو جاتے یہاں  تک کہ صبح ہو جاتی۔( معجم الکبیر، عبد اللّٰہ بن عمر بن الخطاب رضی اللّٰہ عنہما، ۱۲ / ۲۶۰، الحدیث: ۱۳۰۴۳)

(7)…جب قبیلہ بنو حارث کے لوگ حضرت خبیب رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ کو شہید کرنے کے لئے مقامِ تنعیم کی طرف لے گئے تواس وقت آپ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ نے ان سے فرمایا: مجھے دو رکعت نماز پڑھ لینے دو۔انہوں  نے اجازت دیدی تو آپ نے نماز ادا کرنے کے بعد ان کی طرف متوجہ ہو کر فرمایا’’اللہ تعالیٰ کی قسم!اگرتم یہ گمان نہ کرتے کہ میں  موت سے ڈر کر لمبی نماز پڑھ رہا ہو ں  تو میں  ضرور نماز کو طویل کردیتا۔ (سیرت نبویہ لابن ہشام، ذکر یوم الرجیع فی سنۃ ثلاث، ص۳۷۱،  ملخصاً)

            اللہ تعالیٰ ان عظیم ہستیوں  کی مقبول نمازوں  کے صدقے ہمیں  بھی پابندی کے ساتھ نماز ادا کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔

{سِیْمَاهُمْ فِیْ وُجُوْهِهِمْ مِّنْ اَثَرِ السُّجُوْدِِ: ان کی علامت ان کے چہروں  میں سجدوں  کے نشان سے ہے۔} یعنی ان کی عبادت کی علامت ان کے چہروں  میں  سجدوں  کے اثر سے ظاہر ہے ۔ بعض مفسرین فرماتے ہیں  کہ یہ علامت وہ نور ہے جو قیامت کے دن اُن کے چہروں  سے تاباں  ہوگا اور اس سے پہچانے جائیں  گے کہ انہوں نے دنیا میں  اللہ تعالیٰ کی رضاکے لئے بہت سجدے کئے ہیں ۔بعض مفسرین فرماتے ہیں  کہ وہ علامت یہ ہے کہ ان کے چہروں  میں  سجدے کا مقام چودھویں  رات کے چاند کی طرح چمکتا دمکتا ہوگا۔حضرت عطاء رَحْمَۃُاللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ کا قول ہے کہ رات کی لمبی نمازوں  سے اُن کے چہروں  پر نور نمایاں  ہوتا ہے جیسا کہ حدیث شریف میں  ہے: جو رات میں  کثرت سے نماز پڑھتا ہے تو صبح کو اس کا چہرہ خوب صورت ہوجاتا ہے۔‘‘ اور یہ بھی کہا گیا ہے کہ گرد کا نشان بھی سجدہ کی علامت ہے۔( خازن، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ۴ / ۱۶۲، مدارک، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ص۱۱۴۸، ملتقطا)

{ذٰلِكَ مَثَلُهُمْ فِی التَّوْرٰىةِ ﳝ- وَ مَثَلُهُمْ فِی الْاِنْجِیْلِ: یہ ان کی صفت توریت میں  ہے اور ان کی صفت انجیل میں  ہے۔} اس آیت کی ایک تفسیر یہ ہے کہ توریت اور انجیل میں  صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کے بیان کردہ یہ اوصاف مذکور ہیں  اور خاص طور پر وہ مثا ل مذکور ہے جو آگے بیان ہو رہی ہے۔دوسری تفسیر یہ ہے کہ یہاں  صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کے جو اَوصاف بیان ہوئے یہ توریت میں  مذکور ہیں  اور انجیل میں  مذکور ہے کہ ان کی مثال ایسے ہے جیسے ایک کھیتی ہو جس نے اپنی باریک سی کونپل نکالی، پھر اسے طاقت دی، پھر وہ موٹی ہوگئی ،پھر اپنے تنے پر سیدھی کھڑی ہوگئی اوران چیزوں  کی وجہ سے وہ کسانوں  کو اچھی لگتی ہے۔

            مفسرین فرماتے ہیں  کہ یہ اسلام کی ابتداء اور اس کی ترقی کی مثال بیان فرمائی گئی ہے کہ نبی کریم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ تنہا اُٹھے، پھر اللہ تعالیٰ نے آپ کو آپ کے مخلص اَصحاب رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ سے تَقْوِیَت دی۔ حضرت قتادہ رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں  : سرکارِ دو عالَم صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے اَصحاب کی مثال انجیل میں  یہ لکھی ہے کہ ایک قوم کھیتی کی طرح پیدا ہوگی،اس کے لوگ نیکیوں  کا حکم کریں  گے اور بدیوں  سے منع کریں  گے۔ ایک قول یہ ہے کہ کھیتی سے مراد حضورِ اَقدس صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ ہیں  اور اس کی شاخوں  سے مراد صحابہ ٔکرام اور (ان کے علاوہ) دیگر مومنین ہیں۔( تفسیرکبیر ، الفتح ، تحت الآیۃ : ۲۹ ، ۱۰ / ۸۹ ، خازن، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ۴ / ۱۶۲، مدارک، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ص۱۱۴۸، ملتقطاً)

            مفتی احمد یار خان نعیمی رَحْمَۃُاللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ فرماتے ہیں :ـصحابہ ٔکرام (رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ) کو کھیتی سے اس لئے تشبیہ دی کہ جیسے کھیتی پر زندگی کا دار و مدار ہے ایسے ہی ان پر مسلمانوں  کی ایمانی زندگی کا مدار ہے اور جیسے کھیتی کی ہمیشہ نگرانی کی جاتی ہے ایسے ہی اللہ تعالیٰ ہمیشہ صحابہ ٔکرام (رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ) کی نگرانی فرماتا رہتا رہے گا، نیز جیسے کھیتی اولاً کمزور ہوتی ہے پھر طاقت پکڑتی ہے ایسے ہی صحابہ ٔکرام (رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ) اولاً بہت کمزورمعلوم ہوتے تھے پھر طاقتور ہوئے۔( نور العرفان، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ص۸۲۲)

            آیت کے اس حصے سے معلوم ہوا کہ جس طرح توریت اور انجیل میں  حضور پُر نور صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی نعت شریف مذکور تھی ایسے ہی حضورِ اَقدس صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے صحابۂ کرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کے مَناقِب بھی تھے۔

{لِیَغِیْظَ بِهِمُ الْكُفَّارَ: تاکہ ان سے کافروں  کے دل جلیں ۔} یعنی صحابہ ٔکرام  رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کو کھیتی سے تشبیہ اس لئے دی گئی ہے تاکہ ان سے کافروں  کے دل جلیں ۔( مدارک، الفتح، تحت الآیۃ: ۲۹، ص۱۱۴۸)اس سے معلوم ہوا کہ صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ سے جلنا کافروں  کا طریقہ ہے ، اللہ تعالیٰ ہم سب کو ان کی اُلفت و محبت نصیب فرمائے، آمین۔

{وَعَدَ اللّٰهُ الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا وَ عَمِلُوا الصّٰلِحٰتِ مِنْهُمْ: اللہ نے ان میں  سے ایمان والوں اور اچھے کام کرنے والوں  سے وعدہ فرمایا ہے۔} اس آیت کے شروع میں  صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ کے اَوصاف و فضائل بیان کیے گئے اور آخر میں  ان کو مغفرت اوراجر ِعظیم کی بشارت دی جارہی ہے۔یاد رہے کہ تمام صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ صاحبِ ایمان اور نیک اعمال کرنے والے ہیں  اس لئے یہ وعدہ سبھی صحابہ ٔکرام رَضِیَ اللہ تَعَالٰی عَنْہُمْ سے ہے۔

 

Reading Option

Ayat

Translation

Tafseer

Fonts Setting

Download Surah

Related Links