منقبت

اے سنّیوں کے پیشوا حامد رضا حامد رضا(1)

کیا نام ہے پیارا ترا حامد رضا حامد رضا

تاریکیاں ہیں ہر طرف لِلّٰہِ کردے برطرف

اے آفتابِ پُرضیا حامد رضا حامد رضا

گھر گھر ترا افسانہ ہے ہر دل ترا دیوانہ ہے

اے جانِ عَبْدُالمصطفٰے حامد رضا حامد رضا

صورت ہے نورانی تری سیرت ہے لاثانی تری

طِینت ہے تیری مرحبا حامد رضا حامد رضا

بنگال تیرا مُجرائی مشتاق تیرا بمبئی

پنجاب پروانہ ترا حامد رضا حامد رضا

ہندوستاں میں دھوم ہے کس بات کی معلوم ہے

لاہور میں دولھا بنا حامد رضا حامد رضا

ایوؔب قصہ مختصر آیا نہ کوئی وقت پر

تیرے مقابل منچلا حامد رضا حامد رضا

از : مولانا سید ایوب علی رضوی  رحمۃ اللہ علیہ

شمائمِ بخشش ، ص24

مشکل الفاظ کے معانی : سیِّدِ اَبْرار : نیک لوگوں کے سردار۔ کَفْشِ پا : یعنی نعلِ مبارک ، جوتا مبارک۔ قَوافی : قافیہ کی جمع۔ کلام   کے ہر دوسرے مصرعے میں ردیف سے پہلے آنے والے ہم وزن الفاظ کو قافیہ کہتے ہیں ، مثلاً : قصیدۂ نور میں ’’نور کا‘‘ردیف ہے جبکہ اس سے پہلے آنے والے ہم وزن الفاظ تارا ، کلمہ ، ستارہ وغیرہ قافیہ ہیں۔ بار : بوجھ۔ لِلّٰہِ : اللہ کے لئے۔ جانِ عَبْدُالمصطفٰے : یعنی امام احمد رضا خان  رحمۃ اللہ علیہ  کی جان۔ طِینت : طبیعت۔ مُجرائی : سلام کرنے والا۔

(1)حُجَّۃُ الاسلام مولانا حامد رضا خان  رحمۃ اللہ علیہ   امامِ اہلِ سنت امام احمد رضا خان  رحمۃ اللہ علیہ  کے بڑے شہزادے ہیں ، آپ  کا وصال 17جمادَی الاُولیٰ1362ھ کو  ہوا۔

Share

Articles

Comments


Security Code