یاخُدا! پاک وطن کی تُو حفاظت فرما /خاک ِ مدینہ ہوتی  میں خاکسار ہوتا

فرمانِ مصطفٰی صَلَّی اللہ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ : ’’مَنْ صَلَّی عَلَیَّ صَلَاۃً صَلَّی اللہ عَلَیْہِ عَشْروَکَتَبَ لَہُ بِھَاعَشْرُحَسَنَاتٍ یعنی جس نے مجھ پر ایک مرتبہ دُرود ِ پاک پڑھا اللہ  عَزَّوَجَلَّ اُس پر دس رَحْمتیں  بھیجتااور اُس کے نامہ اعمال میں دس نیکیاں لکھتا ہے۔‘‘ (ترمذی،ج2،ص28،حدیث:484)

                                                                                                                                                                                                                                                                                                حمد /مناجات 

یاخدا! پاک وطن کی تُو  حفاظت فرما

فضل کر اس  پہ  سدا سایۂ رحمت فرما

مرحبا پاک وطن  پاک وطن پاکستان

 

دے ترقّی تُو عنایت اسے برکت فرما

لطف سے تیرے  ملی  پاک وطن کی سوغات

 

فضل سے اب مجھے  جنّت  بھی عنایت فرما

اس کو تو قَلْعۂ اسلام بنا دے یا رب!

 

میرے پیارے وطنِ پاک پہ  رحمت فرما

شکر صد شکر  غلامی سے ملی آزادی

 

پھر عنایت ہمیں کھوئی ہوئی شوکت فرما

آج ہے اَمْن، وطن کا مِرے پارہ پارہ

 

پھر مُہَیّا مِرے مولیٰ اِسے راحت فرما

ہائے! بدمست گناہوں میں ہوئے اہلِ وطن

 

یا خدا سب کو عطا  نیک ہدایت فرما

چور ڈاکو سےمرےپاک  وطن کو کر پاک

 

ملک سے دور تُو رشوت کی نحوست فرما

بچہ بچہ ہو نمازی  مِرے پاکستاں کا

 

اور عطا  جذبہ ٔ  پابندیِ سنّت فرما

شکر صد شکر مسلمان ہوں پاکستانی

 

بے سبب فضل سے  جنّت بھی عنایت فرما

واسطہ شاہِ مدینہ کا اے  پیارے اللہ

 

دور عطّار سے دنیا کی محبت فرما

از شیخِ طریقت امیرِ اہلِ سنت  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ




                                               

نعت/ استغاثہ

خاکِ مدینہ ہوتی میں خاکسار ہوتا

خاکِ مدینہ ہوتی میں خاکسار ہوتا

ہوتی رہِ مدینہ میرا غُبار ہوتا

آقااگر کرم سے طیبہ مجھے بلاتے

روضہ پر صدقہ ہوتا ان پر نثار ہوتا

طیبہ میں گر میسَّر دو گز زمین ہوتی

ان کے قریب بستا دل کو قرار ہوتا

مَرمِٹ کے خوب لگتی مٹی مرے ٹھکانے

گر ان کی راہ گزر پر میرا مَزار ہوتا

یہ آرزو ہے دل کی ہوتا وہ سبز گنبد

اور میں غُبار بن کر اس پر نثار ہوتا

بے چین دل کو اب تک سمجھا بُجھا کے رکھا

مگر اب تو اس سے آقا نہیں انتظار ہوتا

سالِک ہوئے ہم ان کے وہ بھی ہوئے ہمارے

دلِ مُضْطَرِب کو لیکن نہیں اعتبار ہوتا

دیوانِ سالک ،ص8

از مفتی احمد یار خان  عَلَیْہِ رَحمَۃُ الرَّحْمٰن

 


 

 

Share

Articles

Comments


Security Code