سب کا پیدا کرنے والا، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

ماہنامہ ربیع الاول1442ھ

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَالصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْن ط اَمَّا بَعْدُ! فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْم ط بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم ط

فرمانِ مصطفےٰ صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم ہے :

مجھ پر دُرُود شریف پڑھ کر اپنی مجالس کو آراستہ کرو کہ تمہارا دُرُودِ پاک پڑھنا بروزِ قِیامت تمہارے لئے نور ہوگا۔

(فردوس الاخبار ، 1 / 422 ، حدیث : 3149)

حمد

سب کا پیدا کرنے والا ، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

سب سے افضل سب سے اعلیٰ ، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

جگ کا خالق سب کا مالک ، وہ ہی باقی ، باقی ہالِک

سچا مالک سچا آقا ، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

سب کو وہ ہی دے ہے روزی ، نعمت اس کی دولت اس کی

رازِق داتا پالَن ہارا ، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

ہم سب اس کے عاجز بندے ، وہ ہی پالے وہ ہی مارے

خوبی والا سب سے نِیارا ، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

اوّل آخر غائب حاضر ، اس کو روشن اس پہ ظاہر

عالِم دانا واقِف کُل کا ، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

عزت والا ، حکمت والا ، نعمت والا ، رحمت والا

میرا پیارا میرا آقا ، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

طاعتِ سجدہ اس کا حق ہے ، اس کو پوجو وہ ہی رب ہے

اللہ اللہ اللہ اللہ میرا مولیٰ میرا مولیٰ

کتاب العقائد ، ص13

از  صدرُ الافاضل سید محمد نعیم الدین مرادآبادی  رحمۃ اللہ علیہ

 

Share

سب کا پیدا کرنے والا، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

نعت

کس شہنشاہ کی آمد ہے صَبا آج کی رات

کیوں براہیم میں کعبہ ہے جھکا آج کی رات

ایک عَلَم شَرْق دُوُم غَرْب سِوُم کعبہ پر

نَصْب جبریلِ امیں نے ہے کیا آج کی رات

قَصرِ کِسْریٰ کے گِرے بُرج یکایک کیسے

کیوں ہے شیطان پہاڑوں میں چُھپا آج کی رات

ظُلمتِ کفر مِٹی تختِ شیاطیں اُلٹے

سارے اَصنام میں لرزہ ہے پڑا آج کی رات

بَحر و بَر سنگ و شجر حُور و مَلَک جن و بشر

سب کے سب کس کے ہیں یہ مَحوِ لِقا آج کی رات

غیرتِ شمس و قمر کون ہے آنے والا

جگمگا جس نے خُدائی کو دیا آج کی رات

پڑھ لے ایوؔب کھڑے ہو کے صلاۃ اور سلام

تُو اگر چاہتا ہے رب کی رِضا آج کی رات

شمائمِ بخشش ، ص28

از مولانا سید ایوب علی رضوی  رحمۃ اللہ علیہ

مشکل الفاظ کے معانی : ہالِک : ہلاک ہونے والا۔ پالَن ہارا : پالنے والا۔ نِیارا : نرالا۔ براہیم : مراد مقامِ ابراہیم۔ عَلَم : جھنڈا۔ قَصرِ کِسْریٰ : ایران کے بادشاہ کِسْریٰ کا محل۔ بُرج : گنبد۔ اَصنام : بتوں۔ مَحوِ لِقا : دیدار میں گُم۔ غیرتِ شمس و قمر : سورج اور چاند کو(اپنی روشنی سے)شرمادینے والا ۔ خُدائی : کائنات(Universe

Share

سب کا پیدا کرنے والا، میرا مولیٰ میرا مولیٰ

اللہ کی نِعمت ہے یہ دعوتِ اسلامی

ماہنامہ ربیع الاول1442ھ

از : شیخِ طریقت ، امیرِ اہلِ سنّت حضرت علامہ مولانا ابوبلال محمد الیاس عطّار قادری رضوی  دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ

اللہ کی نعمت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

آقا کی عنایت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

رَحمٰن کی رحمت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

شیطاں کی ہلاکت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اسلام کی زینت([i]) ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اور دین کی عزّت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اسلام کی قوّت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اور دین کی شوکت(2) ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اسلام کی دعوت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اور داعِیِ(3) سنّت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

سب نبیوں کی ، ولیوں کی ، اصحاب کی اہلِ بیت

کی خاص عنایت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

فیضانِ رضا ہے اور ، یہ غوث کا فیضاں ہے

خواجہ کی حِمایت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

عُشّاقِ محمد کی ٹھنڈک ہے یہ آنکھوں کی

ہر دل میں سَرایَت(4) ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

موجودہ سیاست سے ہے اس کو عَلاقہ(5) کیا!

بس نیکی کی دعوت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اللہ کے ڈر میں اور ، اُلفت میں محمد(صَلَّی اللّٰہ عَلَیْہِ واٰلہٖ وَسَلَّم)  کی

کرواتی زِیادَت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

دیدارِ محمد(صَلَّی اللّٰہ عَلَیْہِ واٰلہٖ وَسَلَّم) کی ، حسرت میں تمنّا میں

کرواتی زِیادَت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

سرکار کے روضے کے ، دیدار کی حسرت میں

کرواتی زِیادَت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

آپس کی مَحَبَّت کے ، یہ جام پلاتی ہے

اور دافِعِ(6) نفرت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

مَلحُوظ(7) شریعت ہے ، تو پاسِ طریقت ہے

سر تا پا سعادت(8) ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اسلام کی تعلیمات اور دین کے احکامات

سِکھلاتی شریعت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

آ جاؤ گنہگارو! بدکارو! سیہ کارو!

بے شک رہِ جنّت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

سرکار کی دکھیاری ، امّت کی ہے خیراندیش(9)

اور خادِمِ مِلّت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

اللہ کی رحمت سے ، دُنیا میں بھی عقبیٰ(10) میں

عطّاؔر کی راحت ہے ، یہ دعوتِ اسلامی

۱۴محرم الحرام۱۴۴۲ھ

02-09-2020



([i])خوب صورتی (2)شان (3)جو دعوت دے (4)سماجانا (5)تعلق (6)دور کرنے والا (7)لحاظ کیا گیا (8)خوش نصیبی (9)بھلائی چاہنے والا (10)آخِرت۔

 

ایک منٹ کا عمل  اور مال اتنا کہ دوسروں کو بھی بانٹیں

حضرت سیدُنا سَہَلْ بن سَعَدساعِدی  رضی اللہ عنہ  بیان کرتے ہیں  کہ ایک شخص نے حضورِ اَقْدَس  صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم     کی خدمتِ بابَرَکت میں  حاضر ہوکر اپنی غُربت اور تنگ دستی کی شکایت کی۔ نبیِّ کریم  صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم    نےارشاد فرمایا : جب تم اپنے گھر میں  داخل ہوتو سلام کرو اگرچہ کوئی بھی نہ ہو ، پھر مجھ پر سلام  بھیجو اور ایک بار  سورہ ٔاخلاص پڑھو۔ اس شخص نے ایسا ہی کیا تواللہ تعالیٰ نے اسے اتنا مال دار کردیا کہ اس نے اپنے ہمسایوں  اور رشتے داروں  میں  بھی تقسیم کرنا شروع کر دیا۔ (القول البدیع ، ص273 ، غریب فائدےمیں ہے ، ص20)

Share

Articles

Comments


Security Code