پان، بیڑی، سگریٹ بیچنا کیسا؟/ جو چیز دکاندار کے پاس نہیں ہے اس کی خرید و فروخت

کار کرایہ پر لی جائے تو معاہدہ میں کیا باتیں پیشِ نظر رکھی جائیں؟

سوال: کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلے کے بارے میں کہ ہمارے یہاں کار کرائے(Rent) پر دی جاتی ہے ایک گھنٹے کے لئے یا پورے دن کے لئے، ایسا کرنا کیسا ہے؟

اَلْجَوَابُ بِعَوْنِ الْمَلِکِ الْوَھَّابِ اَللّٰھُمَّ ھِدَایَۃَ الْحَقِّ وَالصَّوَابِ

جواب: فی نفسہٖ کار کو کرائے پر دینے اور لینے میں شرعاً کوئی حرج نہیں جبکہ اجارے کے شرعی تقاضے پورے ہوں مثلاً اُجرت طے کرلی جائے، جتنے وقت کے لئے گاڑی کرایہ پر لینی ہے وہ وقت بیان کردیا جائےیا جس جگہ جانا ہے مثلاً شہر میں یا شہر سے باہر وہ بیان کردی جائے۔ نیز جن وجوہات کی بناء پر جھگڑا ہوسکتا ہے وہ بھی طے کرلینی ضروری ہیں مثلا ً پیٹرول کون ڈلوائے گا اور ڈرائیور کو کھانا کون کھلائےگا وغیرہ وغیرہ ۔

وَاللہُ اَعْلَمُ عَزَّوَجَلَّ وَ رَسُوْلُہٗ اَعْلَم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

چندے کی بچ جانے والی رقم سے پرائز بانڈ خریدنا کیسا؟

سوال: بعض اوقات مخصوص مد میں چندہ جمع کرتے ہیں جس میں سے کچھ چندہ بچ جاتا ہے کیا ان پیسوں سے ہم پرائز بانڈ خرید سکتے ہیں؟

اَلْجَوَابُ بِعَوْنِ الْمَلِکِ الْوَھَّابِ اَللّٰھُمَّ ھِدَایَۃَ الْحَقِّ وَالصَّوَابِ

جواب: جس مد کے لئے چندہ لیا گیا وہ کام اگر پورا ہوجائے

اور چندہ بچ جائے یا وہ کام نہ ہوسکے تو دوبارہ چندہ دینے والوں کی طرف رجوع کرناہوگا اوریہ پیسے ان کو واپس دئیے جائیں گے کیونکہ چندہ، چندہ دینے والوں کی مِلک پر ہی باقی رہتا ہے۔یہ بھی ہوسکتا ہے کہ چندہ لیتے وقت ہی صراحت کر دیں کہ اگر چندے سے پیسے بچ گئے تو اگلی مرتبہ اسی طرح کے کام میں خرچ کر دیں گے،اور پھر بچ گیا تو اگلی مرتبہ اسی طرح کے کام میں خرچ کر دیا جائے۔

واضح رہے کہ چندے کی رقم امانت ہوتی ہے اسے معروف اندازمیں ہی خرچ کیا جا سکتا ہے، اس رقم سے پرائز بانڈ نہیں خریدسکتے کیونکہ اس کا عرف نہیں ہے۔

اعلٰیٰ حضرت، امامِ اہلِ سنّت مولانا شاہ امام احمد رضا خان رحمۃ اللہ علیہ فتاویٰ رضویہ میں لکھتے ہیں:”چندہ جس کام کے لئے کیا گیا ہو جب اس کے بعد بچے تو وہ انہیں کی مِلک ہے جنہوں نے چندہ دیا ہے، کما حققناہ فی فتاوٰنا(جیسا کہ ہم نے اس کی تحقیق اپنے فتاویٰ میں کی ہے) ان کو حصۂ رصد واپس دیا جائے یا جس کام میں وہ کہیں صرف کیا جائے۔(فتاویٰ رضویہ،ج 16،ص247)

وَاللہُ اَعْلَمُ عَزَّوَجَلَّ وَ رَسُوْلُہٗ اَعْلَم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

جو چیز دکاندار کے پاس نہیں ہے اس کی خرید و فروخت

سوال: کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلے کے بارے میں کہ کوئی شخص پرندے کی ڈیمانڈ کرتا ہے لیکن وہ پرندہ دکاندار کے پاس نہیں ہے تو دکاندار کہتا ہے کہ اگر آپ کہو تو پچاس ہزار روپے میں منگوا کر دیتا ہوں۔ یہ ارشاد فرمائیں کہ اس طرح خریداری کرنا کیسا؟

اَلْجَوَابُ بِعَوْنِ الْمَلِکِ الْوَھَّابِ اَللّٰھُمَّ ھِدَایَۃَ الْحَقِّ وَالصَّوَابِ

جواب: جو چیز ملکیت میں نہ ہو اسے بیچنا جائز نہیں۔ لہٰذا پوچھی گئی صورت میں جب تک دکاندار پرندہ خرید نہ لے اس وقت تک آگے اس کا سودا نہیں کرسکتا۔ہاں اگر سودا نہ کیا جائے بلکہ محض وعدہ کرلیا جائے تو جائز ہے کہ میں آپ کو لادوں گا اور دونوں سمجھتے ہوں کہ یہ وعدہ ہورہا ہے ڈیل(Deal) نہیں ہورہی، نیز اس وعدے کے نتائج سے بھی دونوں واقف ہوں کہ وعدہ کرنے کا یہ مطلب نہیں کہ وہ خریداری کی طرح لازم ہوگیا ورنہ وعدے اور خریداری میں فرق نہیں رہے گا بلکہ وعدے کا مطلب یہ ہے کہ کسی بناء پر اس کا ارادہ بدل جائے تو اس کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ چیز نہ لے۔وعدہ کرنے کے بعد دکاندار پہلے وہ مال خود خرید کر لے آئے پھر گاہک کو بیچے۔ ایک صورت یہ بھی اختیار کی جاسکتی ہے کہ دکاندار بطورِ بروکر اپنا معاوضہ لے مثلاً گاہک سے یوں طے کرلے کہ پرندہ جتنے کا بھی آئے گا مجھے اس پر مثلاً دو سو روپے کمیشن کے طور پر دے دینا تو اس صورت میں پرندہ دکاندار کی ملکیت میں آنا بھی ضروری نہیں ۔ لیکن یہ ضروری ہے کہ دکاندار نے جس قیمت میں خریدا ہے وہی آگے بتانا ہوگی کیونکہ کمیشن والی صورت میں دکانداراصل خریدار کا وکیل اور نمائندہ بن کرخرید رہا ہے۔ یونہی یہ مسئلہ بھی پیشِ نظر رہے کہ بروکری یا کمیشن میں فریقین رقم کے تعین کرنے میں آزاد نہیں ہوتے بلکہ عُرف کے مطابق اس قسم کے کام کی جو بروکری بنتی ہے صرف وہی مقرر کر سکتے ہیں۔وَاللہُ اَعْلَمُ عَزَّوَجَلَّ وَ رَسُوْلُہٗ اَعْلَم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

پان، بیڑی، سگریٹ بیچنا کیسا؟

سوال: کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلے کے بارے میں کہ جو لوگ پان ،بیڑی ،سگریٹ وغیرہ بیچتے ہیں کیا ان کے لئے ان پیسوں سے حج کرنا جائز ہے؟

اَلْجَوَابُ بِعَوْنِ الْمَلِکِ الْوَھَّابِ اَللّٰھُمَّ ھِدَایَۃَ الْحَقِّ وَالصَّوَابِ

جواب: پان کھانا جائز ہے اور سگریٹ بیڑی پینا بھی جائز

ہے، گناہ نہیں۔([1]) ان کو بیچنے میں بھی حرج نہیں اور اس کا نفع بھی حلال ہے۔ لہٰذا اس رقم سے حج وغیرہ بھی کرسکتے ہیں۔

فتاویٰ رضویہ میں ہے:”پان کھاناجائز ہے اور اتنا چونا بھی کہ ضررنہ کرے اور اتنا تمباکو بھی کہ حواس پر اثر نہ آئے۔“(فتاویٰ رضویہ ،ج24،ص558)

وَاللہُ اَعْلَمُ عَزَّوَجَلَّ وَ رَسُوْلُہٗ اَعْلَم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

کمیٹی کی جمع شدہ رقم استعمال کرناکیسا؟

سوال: کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اس مسئلے کے بارے میں کہ مارکیٹ میں کمیٹی ڈالتے ہیں، جس بندے کے پاس پیسے جمع ہوتے ہیں کیا وہ انہیں استعمال کر سکتا ہے یا نہیں ؟

اَلْجَوَابُ بِعَوْنِ الْمَلِکِ الْوَھَّابِ اَللّٰھُمَّ ھِدَایَۃَ الْحَقِّ وَالصَّوَابِ

جواب: بیسی یا کمیٹی کے پیسے جمع کرنے والا اگر کمیٹی جمع کر کے وقتِ ادائیگی کے دوران خرچ کرتا ہے تو زیادہ تر علاقوں میں عرف یہی ہے کہ اس کے رقم خرچ کرنے پر شرکا کو اعتراض نہیں ہوتا اور یہ رقم قرض کے حکم میں ہےاور جب کوئی رقم قرض کے حکم میں ہو تو اسے خرچ کیا جا سکتا ہے۔ لہٰذا ایسی صورت میں اس رقم کو خرچ کیا جا سکتا ہے۔مگر جب دینے کا وقت آئے گا تو اسے دینے ہوں گے، ایسا کرنے کی اجازت نہیں ہوگی کہ وقت پر جس کی کمیٹی کھلی ہے اس کو رقم کی ادائیگی نہ کرے۔البتہ اگر کسی جگہ عرف یہ ہو کہ کمیٹی ڈالنے والا رقم خرچ نہیں کر سکتا تو پھر یہ رقم امانت کہلائے گی اور خرچ کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔وَاللہُ اَعْلَمُ عَزَّوَجَلَّ وَ رَسُوْلُہٗ اَعْلَم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

٭۔۔۔دارالافتاءاہل سنّت نور العرفان،کھارادر ،باب المدینہ کراچی



[1]۔۔۔البتہ ان کے طبّی نقصانات بھی ہیں، تفصیل جاننے کے لئے امیرِ اہلِ سنّتدَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ کا رسالہ ”پان گٹکا“ پڑھئے۔

Share

پان، بیڑی، سگریٹ بیچنا کیسا؟/ جو چیز دکاندار کے پاس نہیں ہے اس کی خرید و فروخت

ہر مسلمان اپنی جگہ مُبَلِّغ ہے خواہ وہ کسی بھی شعبے سے تعلّق رکھتا ہو یعنی وہ عالم ہو یا طالبِ علم، تاجر ہو یا گاہک، سیٹھ ہو یا ملازم، افسر ہو یا مزدور، الغرض جہاں جہاں وہ رہتا ہو، کام کاج کرتا ہو، رضائے الٰہی کے لئے اچّھی اچّھی نیّتوں کے ساتھ اپنی صلاحیت کے مطابق اپنے گِرد و پیش کے ماحول کو سنّتوں کے سانچے میں ڈھالنے کی کوشش کرتا رہے اور نیکی کی دعوت کا مَدَنی کام جاری رکھے مگر افسوس! فی زمانہ لوگ یہ عظیم مدنی کام کرنے میں بہت زیادہ سُستی کا شکارہیں جبکہ ہمارے بزرگانِ دین اس اَہَم کام میں کتنے کوشاں ہوا کرتے تھے، اس کو اس حکایت سے ملاحظہ کیجئے: بازار والوں کو نیکی کی دعوت دینے کی کُڑَھن ایک مرتبہ امام (ابوبکرمحمد مالکی) طُرْطُوشی رحمۃ اللہ علیہ کا گزر سفرِ حج سے واپسی پر دِیارِ مصر سے ہوا، آپ نے (بازار میں) لوگوں کے حالات کو مُلاحَظَہ کیا کہ یہ لوگ علمِ دین سے کورے (جاہل) ہیں تو اپنے رفیقِ سفر کو رخصت کیا اور بلادِ مغرب میں اپنے بیٹے کو سلام بھیجا اور یہ پیغام بھجوایا کہ مصر کے شہروں میں چونکہ جہالت کا غلبہ ہوچکا ہے لہٰذا اب میرے لئے جائز نہیں کہ ان شہروں سے نکل جاؤں۔ چنانچہ آپ ایک ایک دکاندار کے پاس جاکر اُسے اس کی حاجت کے مسائل سکھاتے مثلاً عقائد کے متعلّق بتاتے، وضو کے فرائض، اس کی سنّتیں اور فضائل بتاتے، یوں ہی تَیَمُّم، غسل اور نماز کے مسائل سکھاتے پھر اس کی دکان میں موجود سامان کے حوالے سے اس پر لازم اَحکام سکھاتے، لَین دَین، خرید و فروخت، کس طریقۂ عمل سے سُود میں پڑنے کا خطرہ ہے اور سود سے بچنے کے طریقوں سے آگاہی دیتے اور جب اَحکام سکھا کر فارغ ہوتے تو اس دکاندار سے فرماتے: اِسے اپنے پڑوسی دکاندار کو سکھادو پھر دوسری دکان پر چلے جاتے (آپ اسی طرح دکان دکان جا کر لوگوں کو مسائل سکھاتے رہے) یہاں تک کہ بازار کے لوگوں میں علم کی روشنی پھیل گئی اور جہالت کی تاریکیاں چَھٹ گئیں۔ دکان دکان جاکر نیکی کی دعوت دیجئے علّامہ اِبنُ الحاجّ مکّی رحمۃ اللہ علیہ اس حکایت کو ذکر کرنے کے بعد عُلَما و مُبَلِّغین کو مَدَنی پھول دیتے ہوئے ارشاد فرماتے ہیں: یہ (یعنی دکان دکان جا کر لوگوں کو مسائل سکھانا) بازار میں عِلم کے غلبے اور اس کے پھیلنے کا سبب بنا۔ اگر امام طُرْطُوشی رحمۃ اللہ علیہ گھر میں بیٹھے رہتے کہ کوئی ان کے پاس آکر عِلم سکھانے کا کہے گا تو کوئی بھی ان سے نفع نہیں اٹھا پاتا، اس لئے عُلَما (اور مُبَلّغین) پر لازم ہے کہ جب وہ دیکھیں کہ لوگ عِلم سے منہ موڑ چکے ہیں تو خود ان کے پاس جاکر عِلم سکھائیں اور ان کی راہنمائی کریں اگرچہ وہ ان کے ساتھ بےرُخی برتیں کیونکہ عُلَما اَنْبیا کے وارث ہیں اور ہمارے پیارے آقا صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم بھی اس وقت جب لوگ اِعراض کئے ہوئے تھے قبائلِ عرب کے پاس تشریف لے جاتے تھے تاکہ وہ آپ کی اِتّباع اور مدد کریں۔ (مزید فرماتے ہیں:) جو شخص بازار میں (تجارت کے لئے) بیٹھتا ہو اور عُلما اور صالحین کے پاس نہ آتا ہو اور نہ ہی ان میں سے ہو اور اپنی اسی پَست حالت پر خوش ہو تو ایسے شخص کے اپنے رب سے غافل ہونے میں کوئی شک نہیں اور اس شخص کی راہنمائی کرنا عالم پر لازم ہوجاتا ہے یہاں تک کہ اسے اپنے ربّ کے دروازے پر لا کھڑا کردے۔ (اور فرماتے ہیں:اس مذکورہ بالا حکایت میں) غور کرو کہ جب عُلما کی نیّت دُرست تھی کس طرح وہ قربانی دے کر بازاروں میں تاجروں کے ساتھ بیٹھا کرتے تھے اور رب کی بارگاہ سے دُوْر، جہالت کی تاریکیوں میں مُبتلا شخص کو عِلم کے نور سے اعلیٰ و ارفع حالت کی طرف لوٹاتے تھے۔ بِلاشبہ جب تک عُلما اس مبارک طریقے پر قائم رہے لوگ ان سے فائدہ اٹھاتے رہے اور ان کی برکتیں اہلِ بازار اور دیگر لوگوں کو ملتی رہیں۔(المدخل لِابن الحاج،ج1،ص290،289ملخصاً)

اَلْحَمْدُلِلّٰہ!عاشقانِ رسول کی مدنی تحریک دعوتِ اسلامی مسجدبھروتحریک ہے،مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد میں نیکی کی دعوت پہنچانے کاسلسلہ جاری و ساری ہے،اس کے ساتھ ساتھ بازاروں میں بزرگانِ دِین کی اِس ادا(یعنی نیکی کی دعوت کوعام کرنے)کوبھی اداکرنے کی کوشش کی جارہی ہے جس کیلئے دعوتِ اسلامی کی ”مجلسِ تاجران“ کا قیام بھی اسی سلسلے کی ایک کڑی ہے جس کا کام شُعبۂ تِجارت سے وابستہ لوگوں کو تجارت کے مُتَعَلِّق اسلامی تعلیمات سے آگاہ کرانا، ان میں نیکی کی دعوت کو عام کرنا، بازاروں میں مَدَنی ماحول بنانے کیلئے مسجدیا کسی بھی مُناسِب مَقام پر درسِ فَیضانِ سُنَّت وغیرہ دینے کااِہْتمام کرنے کے علاوہ وقتاً فوقتاً مُختلف اَوْقات میں”تِجارت کورسز“ کروانے کا بھی اِہْتمام کیا جاتا ہے، الغرض تِجارت کو صحیح معنیٰ میں اِسلامی خُطُوط پر مُسْتَحْکَم ومَضْبُوط کرنے کیلئےدعوتِ اسلامی کی یہ مجلس کوششوں میں مصروف ہے۔ اللہ کریم سے دعا ہے کہ وہ ہمیں نیکی کی دعوت دینے کا خوب خوب جذبہ عطا فرمائے۔

اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

٭۔۔۔ماہنامہ فیضانِ مدینہ،باب المدینہ کراچی

Share

Articles

Comments


Security Code