یا ربِّ محمد مِری تقدیر جگادے

یا ربِّ محمد مِری تقدیر جگادے                                                                                                                 مُشتاقِ زیارت ہوں آقا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

صَحرائے مدینہ مجھے آنکھوں سے دِکھادے                                             طیبہ کا چمن آنکھوں میں بسا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

پیچھا مِرا دنیا کی محبّت سے چُھڑادے                                                                                                                                     نادِم ہوں اپنے مَعاصِی پر ، لِلّٰہِ کرم ہو عاصِی پر

یارب مجھے دیوانہ مدینے کا بنادے                                                                                      دھو ڈالئے میرے جُرم و خَطا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

دِل عشقِ محمد میں تڑپتا رہے ہر دَم                                                                                             لاچار غریبوں کے والی ، عِصیاں کی گھٹا کالی کالی

سینے کو مدینہ مِرے اللہ بنادے                                                                                                          دامن میں چھپا اے اَبرِ سَخا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

بہتی رہے  اکثر شَہِ ابرار کے غم میں                                                                                      مُونھ مانگی مرادیں پائیں جہاں ،  لاکھوں منگتا شاہانِ جہاں

روتی ہوئی وہ آنکھ مجھے میرے خدا دے                                                          نادار کو بھی ٹکڑا ہو عطا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

ایمان پہ دے موت مدینے کی گلی میں                                                                         محشر میں ہوں ہم پر سایَہ کُناں ، آمین کہو سب خورد و کَلاں

مَدْفَن مِرا محبوب کے قدموں میں بنادے                                                           بجتا رہے عالَم میں ڈنکا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

اللہ ملے حج کی اِسی سال سعادت                                                                                                    آنکھوں کی ضِیاء اعلیٰ حضرت ، ہیں دل کی جِلا اعلیٰ حضرت

بَدکار کو پھر روضۂ محبوب دِکھادے                                                                                            ہے سب یہ کرم آقا تیرا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

عطّار سے محبوب کی سنّت کی لے خدمت                                                     ہے حق کی رضا احمد کی رضا ، احمد کی رضا مرضیٔ رضا

ڈنکا یہ تِرے دین کا دنیا میں بجادے                                                                                ایّوب اسی در کا ہے گدا ، سلطانِ جہاں محبوبِ خدا

 

                                                                    وسائلِ بخشش مُرَمَّم ، ص112

                                                                                          از شیخِ طریقت امیرِ اہلِ سنتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ                                                                                                                                      شمائمِ بخشش ، ص18

                                                                                                                                                                                                                                                                                                       از مولانا سید ایوب علی رضوی رحمۃ اللہ علیہ

۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

مَعاصِی پر : گناہوں پر۔ عاصِی : گناہگار۔ اَبرِ سَخا : سخاوت کا بادل۔ سایہ کناں : سایہ کئے ہوئے۔ خورد و کلاں : چھوٹے بڑے۔ ضیاء : چمک۔ جِلا : صفائی۔

Share

Articles

Comments


Security Code