کیلےکا چھلکا/ کیا آپ جانتے ہیں؟

پیارے بچو! جب کیلا ، کینووغیرہ کوئی پھل کھائیں تو ان کے چھلکے گھر میں اِدھر اُدھر یا راستے میں ہرگز نہیں پھینکنے چاہئیں ، ہماری ذرا سی بے احتیاطی یا لاپرواہی بہت نقصان دہ ثابت ہو سکتی ہے بلکہ  کسی کی جان بھی لے سکتی ہے ، ہمارے پیارے امیر ِاہلِ سنّت  دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ  فرماتے ہیں :  میرے بڑے بھائی پنجاب سے کراچی آتے ہوئے حیدر آباد کے اسٹیشن پر پانی پینے کے لئے نیچے اُترے تو ٹرین نے چلنے کے لئے سیٹی (بجا) دی اور آہستہ آہستہ چلنا شروع ہو گئی ۔  بھائی ٹرین کی طرف بھاگے تو راستے میں کسی نے کیلے کا چھلکا پھینکا ہوا تھا جس سے میرے بڑے بھائی کا پاؤں پھسلا تو انہوں نے ٹرین کے ہینڈل کو پکڑ لیا وہ بھی ہاتھ سے پھسل گیا اور بھائی  چلتی ٹرین   کے نیچے آکر انتقال کر گئے۔

پیارے بچو دیکھا آپ نے! ایک کیلے کےچھلکے کی وجہ سے جان چلی گئی۔ یوں ہی بعض اوقات چھلکے سے پھسلنے والا ہڈی  ٹُوٹنے کی وجہ سے مستقل معذور بھی ہو  سکتا ہے لہٰذا آپ سچی نیت کریں کہ آئندہ کیلے یا کسی اور چیز کا چھلکا بلکہ کوئی بھی کچرا راستے میں نہیں پھینکیں گےبلکہ اچھے  بچوں کی طرح کُوڑے دان (Dustbin)میں ڈالیں گے۔ اِنْ شَآءَ اللہ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ*ماہنامہ  فیضانِ مدینہ ، کراچی

 

Share

کیلےکا چھلکا/ کیا آپ جانتے ہیں؟

سوال : روزے فرض ہونے کا ذِکْر کس آیت میں ہے؟

جواب : پارہ 2 ، سورہ ٔ بقرہ ، آیت نمبر183 میں  یٰۤاَیُّهَا الَّذِیْنَ اٰمَنُوْا كُتِبَ عَلَیْكُمُ الصِّیَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِیْنَ مِنْ قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُوْنَۙ(۱۸۳)  ترجمۂ کنز الایمان : اے ایمان والو تم پر روزے فرض کیے گئے جیسے اگلوں پر فرض ہوئے تھے کہ کہیں تمہیں پرہیزگاری ملے ۔   (اس آیت کی مزید وضاحت کے لئے یہاں کلک کریں)

سوال : قراٰنِ پاک نے ذوالنّون کس نبی کو فرمایا؟

جواب : حضرت سیّدُنا یونس علیہ السَّلام کو۔                (پ17 ، الانبیآء : 87 ، خزائن العرفان ، ص613)

سوال : قراٰنِ پاک میں مکّہ شریف کیلئے جو الفاظ استعمال ہوئے ہیں ان میں سے    تین بتائیں ؟

جواب : بَکَّۃ ، اُمُّ الْقُرٰى اور اَلْبَلَدُ الْاَمِیْن۔   (پ4 ، اٰلِ عمرٰن : 96 ، پ7 ، الانعام : 92 ، پ30 ، التین : 3)

سوال : جبریلِ اَمین پیارے آقا صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی

بارگاہ میں کتنی بار حاضر ہوئے؟

جواب : تقریباً24ہزار بار۔          (ارشاد الساری ، 1 / 101)

سوال : یاجُوج ماجُوج کن شہروں میں داخل نہ ہوسکیں گے؟

جواب : مکّۂ مکرّمہ ، مدینۂ طیبہ اور بیتُ المقدّس۔        (خزائن العرفان ، ص567)

 سوال : ظالم بادشاہ “ جالوت “ کو کس نے قتل کیا؟

جواب : اللہ کے نبی حضرت  سیّدُنا داؤد علیہ السَّلام نے۔          (پ2 ، البقرۃ : 251)

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ*ماہنامہ  فیضانِ مدینہ ، کراچی

Share

Articles

Comments


Security Code