Book Name:Imam Jafar Sadiq Ki Betay Ko Naseehat

دُرُودشریف پڑھنے کاثواب حاصِل ہوتا ہے۔ ([1])

)5(قُربِ مُصْطَفٰے     صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ   

اَللّٰہُمَّ صَلِّ عَلٰی مُحَمّدٍکَمَا تُحِبُّ وَتَرْضٰی لَہٗ

ایک دن ایک شَخْص آیا تو حُضُورِ اَنْور صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَ سَلَّمَ نے اُسے اپنے اور صِدِّیْقِ اکبر رَضِیَ اللّٰہُ عَنْہُ کے درمِیان بِٹھالِیا۔ اِس سے صَحابَۂ کرام رَضِیَ اللّٰہُ عَنْہُم کو تَعَجُّب ہوا کہ یہ کون بڑے مرتبے والا شخص ہے!جب وہ چلا گیا تو سرکار     صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ     نے فرمایا : یہ جب مُجھ پر دُرُودِ پاک پڑھتا ہے تو یوں  پڑھتا ہے ۔ ([2])

)6(دُرُودِ شَفاعت

اَللّٰہُمَّ صَلِّ عَلٰی مُحَمَّدٍ وَّاَنۡزِلۡہُ الۡمَقۡعَدَ الۡمُقَرَّبَ عِنۡدَکَ یَوۡمَ الۡقِیَامَۃِ

شافِعِ اُمَم     صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ     کافرمانِ مُعَظَّم ہے : جو شَخْص یوں دُرودِ پاک پڑھے ، اُس کے لئے میری شفاعت واجب ہو جاتی ہے۔ ([3])

(1) ایک ہزار د ن تک  نیکیاں

جَزَی اللّٰہُ عَنَّا مُحَمَّدًا مَّا ھُوَ اَھْلُہٗ

حضرتِ  ابنِ عباس رَضِیَ اللّٰہُ عَنْہُمَاسے رِوایت ہے کہ سرکارِمدینہ     صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ     نے فرمایا : اس کوپڑھنے والے کے لئے ستّر فِرِشتے ایک ہزار دن تک نیکیاں لکھتے ہیں۔ ([4])

)2(گویا شبِ قدر حاصل کرلی

فرمانِ مُصْطَفٰے     صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ      : جس نے اس دُعا کو(3)مرتبہ پڑھا تو گویا اُس نے شَبِ قَدْر حاصل کرلی۔ ([5])

لَآ اِلٰہَ اِلَّااللہُ الْحَلِیْمُ الْـکَرِیْمُ  ، سُبحٰنَ اللہ ِ رَبِّ السَّمٰوٰتِ السَّبْعِ وَرَبِّ الْعَرْشِ الْعَظِیْم

(خُدائے حَلیم وکریم کے سِوا کوئی عِبادت کے لائِق نہیں ، اللہپاک ہے جو ساتوں آسمانوں اور عرشِ عظیم کاپَروردگارہے۔ )

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                                      صَلَّی اللّٰہُ  عَلٰی مُحَمَّد

(۔۔۔ہفتہ وار اجتماع کے اعلانات۔۔۔)9رجب المرجب1441ھ 5مارچ 2020

امیر اہلسنت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہکی طرف سے ہفتہ وار رِسالہ پڑھنے کی ترغیب

 



[1]    افضل الصلوات علی سید السادات ، الصلاۃ الثانیۃ والخمسون ، ص۱۴۹

[2]    القول البدیع ، الباب الاول ، ص۱۲۵

[3]    الترغیب والترہیب ، کتاب الذکر و الدعاء ، ۲ / ۳۲۹ ، حدیث : ۳۰

[4]     مجمع الزوائد ، کتاب الادعیۃ ، باب فی کیفیۃ الصلاۃ   الخ ، ۱۰ / ۲۵۴ ، حدیث : ۱۷۳۰۵

[5]      تاریخ ابن عساکر ،  رقم : ۲۳۰۶  ،  زیاد بن عبداللہ بن خالد الصباغ  ، ۱۹ / ۱۵۵