عید میٹھی کیسے ہوئی؟

عید مبارک امّی جان! اب جلدی سے شِیرخُرما(Sheer khurma) دے دیں ، ننّھے میاں عید کی نَماز پڑھ کر آ چکے تھے سب سے عید ملنے کے بعد اب کچن میں امّی جان کے پاس کھڑے تھے۔

خیر مبارک ننّھے میاں! سفید کُرتا شلوار میں ننّھے میاں خوب چمک رہے تھے ، امی جان نے پہلے تو ماشاء اللہ کہا پھر پیار سے بولیں : آپ لاؤنج میں اپنے ابو جان کے پاس چل کر بیٹھیں ، ابھی لاتی ہوں۔

امّی جان شِیر خُرما لائیں تبھی ابو کے فون کی بیل بجی ، ابو نے فون ریسیو کیا اور تھوڑی دیر بعد یہ کہتے ہوئے کال کاٹ دی : آپ پریشان نہ  ہوں میں ابھی آپ کی طرف آتا ہوں۔

ابو کے فون رکھتے ہی دادی بولیں : خیریت ہے بیٹا ، کس کا فون تھا؟جی وہ برابر والے جنید صاحب کا فون تھا ، کہہ رہے تھے کہ آج صبح سے بجلی نہیں آ رہی ان کے گھر ، پتا نہیں کیا خرابی ہوگئی ہے ، میں ذرا دیکھ کر آتا ہوں ، اتنا کہہ کر ابوجانے کے لئے اٹھے تو ننّھے میاں فوراً کہنے لگے : ابوجان! آپ نے تو کہا تھا کہ آپ کو جُھولے دِلوانے لے جاؤں گا!

جی جی بیٹا مجھے یاد ہے ، بس! میں تھوڑی دیر میں آرہا ہوں پھر چلیں گے تب تک آپ شِیرخُرما کھائیں ، پورا پیالہ ختم کرنا ہے میرے بیٹے نے ، ابو نے مسکراتے ہوئے کہا اور چلے گئے۔

ننّھے میاں شِیرخُرما ختم کر چکے لیکن ابو نہیں پہنچے ، کافی دیر انتظار کرتے رہے ، آخرکار ٹی وی آن کیا تو مدنی چینل پر بہت پیارا پروگرام آ رہا تھا “ بچوں کی عید امیر اہل سنت کے ساتھ “ ، ننھے میاں دلچسپی سے پروگرام دیکھنے لگے۔

کافی دیر بعد ابو واپس  گھر آئے تو ننھے میاں جو مدنی چینل دیکھتے دیکھتے سب کچھ بھول چکے تھے ابو کو دیکھتے ہی انہیں یاد آیا کہ آج تو جھولے لینے باہر جانا تھا ، اتنے میں ابو ان کے پاس پہنچ کر کہنے لگے : چلو بھئی ننھے میاں! جھولے لینے چلیں۔ مجھے اب آپ کے ساتھ نہیں جانا  آپ نے میری عید پھیکی کردی ، ننھے میاں نے رُوٹھے لہجے میں کہا۔ پھیکی عید؟ ننھے میاں کی امی! آپ نے شیرخرما میں چینی نہیں ڈالی تھی کیا؟ابو نے مِزاحاً کہا ۔ ابو جان! میں صبح سے آپ کا انتظار کررہا ہوں اور آپ مجھے چھوڑ کر کسی اور کے کام میں لگ گئے اور اتنی دیر بھی لگادی ، ننھے میاں رونی صورت بنا کر بولے۔

بیٹا پہلے آپ سنیں تو کہ مجھے دیر کیوں ہوئی ، پہلے تو الیکٹریشن ہی نہیں مل رہا تھاساری دکانیں بند تھیں ، آخِر کار ایک الیکٹریشن کو اس کے گھر سے بلایا مگر بجلی کی خرابی اسے بھی پتا نہیں چلی تو اس نے ہمارے گھر سے ایک تار کے ذریعے بجلی کا کنیکشن جوڑا تب جا کر ان کے گھر پنکھے  چلنے لگے۔ ابو نے اپنی بات ختم کی تو ننّھے میاں جلدی سے بولے : لیکن مدد بعد میں بھی تو ہو سکتی تھی؟

بیٹا! جنید صاحب ہمارے پڑوسی ہیں ، اتنی گرمی میں ان کے گھر پنکھا بھی نہیں چل رہا تھا ، کیا یہ اچھی بات تھی کہ ہم خود تو ایئر کولر کی ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا کھائیں اور پڑوسی تکلیف میں ہو ، ویسے بھی کچھ دن پہلے آپ ہی تو بتارہے تھے کہ اچھا پڑوسی وہ ہوتا ہے جو اپنے  پڑوسیوں کی مدد کرتا ہے ، ابو نے ننّھے میاں کو ان کی بات یاد دِلائی تو ننّھے میاں نرم پڑ گئے۔

یہ دیکھ کر ابو جان نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا : آپ حضرت بایزید بسطامی رحمۃُ اللہِ علیہ کو جانتے ہیں؟یہ کون ہیں؟ ننھے میاں نے جواب دینے کے بجائے خود سوال کرلیا۔ ابو بتانے لگے : یہ اللہ پاک کے بہت نیک  بندے تھے ، ان کا ایک پڑوسی غیر مسلم تھا ، تب بجلی(Electricity) تو ایجاد ہوئی نہیں تھی تو  لوگ گھروں میں چراغ جلا کر روشنی کیا کرتے تھے ، ایک باروہ پڑوسی کہیں سفر پر گیا تو غربت کی وجہ سے بیوی گھر میں رات کو چراغ بھی نہیں جلاسکی اندھیرے کی وجہ سے اس کا  بچہ رات کو روتا رہا۔ حضرت بسطامیرحمۃُ اللہِ علیہ کو پتہ چلا تو اس دن سے آپ روزانہ چراغ میں تیل بھرکر اسے روشن کرتے اور اس  کے گھر بھیج دیا کرتے۔ پڑوسی سفر سے واپس آیا تو  اس کی بیوی نے اپنے شوہر کو ساری بات بتادی۔ پڑوسی بولا : کتنی افسوس ناک بات ہے کہ ایسے نیک پڑوسیوں کے ہوتے ہوئے بھی ہم کفر کی حالت میں زندگی گزاریں ، یہ کہہ کر دونوں میاں بیوی حضرت بایزید بسطامی رحمۃُ اللہِ علیہ کے پاس آئے اور مسلما ن ہوگئے۔ (تذکرۃ الاولیاء ، ص : 142ملخصا)

دیکھا ننھے میاں! پڑوسی کی مدد اسے صراط مستقیم یعنی سیدھے اور سچے راستے کی طرف بھی لا سکتی ہے ، اب آپ کیا کہتے ہیں کہ مدد کب کرنی چاہئے جب پڑوسی مشکل میں ہو یا بعد میں اپنے کاموں سے فارغ ہو کر؟ ابوجان نے واقعے کے آخر میں ننھے میاں سے سوال کیا۔ ننھے میاں نے جواب دیا : نہیں ابو جان! مدد تو اسی وقت کرنی چاہئے جب کسی کو ضرورت ہو بعد میں کرنے کاکیا فائدہ! شاباش اب جلدی سے ریڈی ہو جائیں آپ کی عید میٹھی بناتے ہیں۔ ابو جان نے مسکراتے ہوئے کہا تو ننھے میاں دل ہی دل میں پلان بنا رہے تھے کہ آج تو میں سارے  جُھولے جُھولوں گا۔

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ*ماہنامہ  فیضانِ مدینہ ، کراچی

 

Share

Articles

Comments


Security Code