مٹا میرے رنج و الم یا الہی

مِٹا میرے رنج و اَلَم یاالٰہی                                                                                      دامانِ حبیبِ کبریا                                         نہیں عمر غافل گَنوانے کے قابل

مِٹا میرے رنج و اَلَم یاالٰہی                                                                            جان و دل یارب ہو قربانِ حبیبِ کبریا                                                    نہیں عمر غافل گَنوانے کے قابل

عطا کر مجھے اپنا غم یاالٰہی                                                                                       اور ہاتھوں میں ہو دامانِ حبیبِ کبریا                                                              عمل کچھ تو کرلے دِکھانے کے قابل

جو عشقِ محمد میں آنسو بہائے                                                                           زندگی ہو یا مجھے موت آئے دونوں حال میں                           یہ دنیا نہیں مَزْرَعۂ آخرت ہے

عطا کردے وہ چشمِ نَم یاالٰہی                                                                    میں ہوں یارب اور بیابانِ حبیبِ کبریا                                                 بتا کیا ہے بویا اُگانے کے قابل

دِکھادے مدینے کی گلیاں دِکھادے                                    بَن کے منگتا ان کے در کے شاہِ عالَم ہوگئے                   نہ طاعت سے مطلب نہ خوفِ الٰہی

دکھادے نبی کا حَرَم یاالٰہی                                                                              اے زہے قسمت گدایانِ حبیبِ کبریا                                                   یہی مونھ ہے جنّت میں جانے کے قابل

مجھے دیدے ایمان پر استقامت                                                        بٹتا ہے کونین میں باڑا اسی سرکار کا                                                              گنہگار بندوں کے حامی و یاور

پئے سیّدِ مُحْتشم یاالٰہی                                                                                                       ہیں زمین و آسماں خوانِ حبیبِ کبریا                                                           بہرحال ہم ہیں نبھانے کے قابل

سدا کیلئے ہوجا راضی خدایا                                                                                      کون ہے جو ان کے خوانِ فضل سے محروم ہے                               شہا اپنے نامے کو کیسے سُناؤں

ہمیشہ ہو لُطف و کرم یاالٰہی                                                                            ہیں خلیلِ حق بھی مہمانِ حبیبِ کبریا                                                            عمل تو ہیں سارے چُھپانے کے قابل

میں تحریر سے دِیں کا ڈنکا بجادوں                                                عقلِ عالَم کی رَسائی ان کے رُتبے تک مُحال                       مدینے میں گر موت آئے تو جانُوں

عطا کردے ایسا قلم یاالٰہی                                                                             ہاں خدا سے پوچھئے شانِ حبیبِ کبریا                                                           مِرے جرم ہیں بخشوانے کے قابل

تُو عطّاؔر کو بے سبب بخش مولیٰ                                                         فیضِ مرشد ہے جمیلِؔ قادری تم پر کہ سب                                  حقیقت میں ایوؔب دل کی تو یہ ہے

کرم کر کرم کر کرم یاالٰہی                                                                                       تم کو کہتے ہیں ثناخوانِ حبیبِ کبریا                                                                       کہ طیبہ ہی بس ہے بسانے کے قابل

از شیخِ طریقت امیرِ اہلِ سنت  دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ

    وسائلِ بخشش (مُرَمَّم) ،ص109                                                        ازمَدَّاحُ الْحَبِیْب مولانا جمیل الرحمٰن قادری رضوی  رحمۃ اللہ علیہ

قبالۂ بخشش،ص60                                                                    

از مولانا سید ایوب علی رضوی   رحمۃ اللہ علیہ

                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           شمائمِ بخشش،ص49

                    شاہِ عالَم : دنیا کے بادشاہ۔ خوان : دسترخوان۔ خلیلِ حق : حضرت سیّدُنا ابراہیم  علیہ السَّلام  ۔ مُحال : ناممکن(Impossible)۔ مزرعۂ آخرت : آخرت کی کھیتی۔

Share

Articles

Comments


Security Code