الٰہی دکھادے جمالِ مدینہ

الٰہی دِکھادے جمالِ مدینہ

سلطانِ جہاں محبوبِ خدا تِری شان و شوکت کیا کہنا

کرم سے ہو پورا سُوالِ مدینہ

ہر شے پہ لکھا ہے نام تِرا، تِرے ذکر کی رِفعت کیا کہنا

دِکھادے مجھے سبز گنبد کے جلوے

ہے سر پر تاج نبوت کا جوڑا ہے تن پہ کرامت کا

دکھا مجھ کو دَشت و جِبالِ مدینہ

سہرا ہے جبیں پہ شفاعت کا اُمّت پہ ہے رحمت کیا کہنا

پہنچ کر مدینے میں ہوجائے مولا

قرآن کلامِ باری ہے اور تیری زباں سے جاری ہے

مِری جاں فِدائے جمالِ مدینہ

کیا تِری فصاحت پیاری ہے اور تیری بلاغت کیا کہنا

غمِ عشقِ سَروَر خدایا عطا کر

باتوں سے ٹپکتی لذّت ہے آنکھوں سے برستی رَحمت ہے

مجھے از طفیلِ بلالِ مدینہ

خطبے سے چمکتی ہیبت ہے اے شاہِ رسالت کیا کہنا

خدائے محمد ہمارے دِلوں سے

آنکھوں سے کیا دریا جاری اور لب پہ دُعا پیاری پیاری

نہ نکلے کبھی بھی خیالِ مدینہ

رو رو کے گزاری شب ساری اے حامیِ اُمّت کیا کہنا

سدا رَحمتوں کی برستی جَھڑی ہے

عالَم کی بھریں ہر دَم جھولی خود کھائیں تو  بس جَو کی روٹی

مدینے میں یہ ہے کمالِ مدینہ

وہ شان عطا و سخاوت کی یہ زُہد و قَناعت کیا کہنا

قدم چوم کر سر پہ رکھ لینا عطّاؔر

شُہرت ہے جمیل اتنی تیری یہ سب ہے کرامت مُرشد کی

نظر آئے گر نَونِہالِ مدینہ

کہتے ہیں تجھے مَدّاحِ نبی سب اہلسنّت کیا کہنا

از شیخِ طریقت امیرِ اہلِ سنّتدَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ وسائلِ بخشش (مُرَمَّم)،ص 363

از   مَدَّاحُ الْحَبِیْب مولانا جمیلُ الرّحمٰن قادری رضوی رحمۃ اللہ علیہ

قبالۂ بخشش،ص47

Share

Articles

Comments


Security Code