Book Name:Data Hazoor Aur Adab Ki Taleem

اَلْحَمْدُ لِلّٰہِ رَبِّ الْعٰلَمِیْنَ وَ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلٰی سَیِّدِ الْمُرْسَلِیْنَ ط

اَمَّا بَعْدُ فَاَعُوْذُ بِاللّٰہِ مِنَ الشَّیْطٰنِ الرَّجِیْمِ ط  بِسْمِ اللہ الرَّحْمٰنِ الرَّ حِیْم ط

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا رَسُولَ اللہ                                                       وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا حَبِیْبَ اللہ

اَلصَّلٰوۃُ وَ السَّلَامُ عَلَیْكَ یَا نَبِیَّ اللہ                                                                        وَعَلٰی اٰلِكَ وَ اَصْحٰبِكَ یَا نُوْرَ اللہ

نَوَیْتُ سُنَّتَ الْاِعْتِکَاف                                    ( ترجمہ : میں نے سُنَّت اعتکاف کی نِیَّت کی )

جنَّت کا اَنوکھا پَھل

مسلمانوں کے چوتھے خلیفہ ، مولائے کائنات ، حضرت  علیُّ المُرتَضٰی شیرِ خدا کَرَّمَ اللہ  تعالیٰ وَجْہَہُ الْکَرِیْم فرماتے ہیں: اللہ پاک نے جَنَّت میں  ایک دَرخت پیدا فرمایا ہے جس کا پَھل سیب سے بڑا ، اَنار سے چھوٹا ، مَکھن سے نرم ، شہد سے بھی میٹھااورمُشک سے زِیادہ خُوشْبُودار ہے۔ اس دَرخت کی شاخیں تر موتیوں  کی ، تنے سونے کے اور پَتے زَبَرجَد کے ہیں  ۔ لَا یَاْکُلُ مِنْہَا اِلَّا مَنْ اَکْثَرَ مِنَ الصَّلَاۃِ عَلٰی مُحَمَّدٍ صلی اللہ عَلَیْہِ وَ آلِہٖ وَسَلَّم اس دَرخت کا پَھل صِرف وہی کھا سکے گا جوسرکارِ والا تَبار ، حبیبِ پَرْوَرْدْگار صلی اللہ عَلَیْہِ وَ آلِہٖ وَسَلَّم پرکثرت سے درودپاک پڑھے گا۔ ( [1] )

وہ تو نہایت سَسْتا سودا بیچ رہے ہیں  جَنَّت کا ہم مُفْلِس کیا مول چکائیں  اپنا ہاتھ ہی خالی ہے ( [2] )

صَلُّوْا عَلَی الْحَبیب !                                                صَلَّی اللّٰہُ عَلٰی مُحَمَّد

بیان سننے کی نیتیں

حدیثِ پاک میں ہے : اَلنِّیَّۃُ الْحَسَنَۃُ تُدْخِلُ صَاحِبَہَا الْجَنّۃَ  اچھی نیت بندے کو جنت


 

 



[1]...الحاوی للفتاویٰ للسیوطی ، جلد : 2 ، صفحہ : 48۔

[2]... حدائقِ بخشش ، صفحہ : 186 ۔