مٹی کے برتن

مختلف لوگ مختلف چیزوں اسٹیل، پلاسٹک، شیشے اور مٹّی وغیرہ کے بنے ہوئے برتنوں میں کھاتے پیتے ہیں، تاہم مٹّی کے برتن میں کھانے پینے کے اپنے فوائد ہیں۔ ہمارے مدنی آقا، دوجہاں کے داتا صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کا مٹی کے برتنوں کو استعمال فرمانا بھی منقول ہے، چنانچہ حضرت سیّدُنا خَباب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ میں نے نبیِّ کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کو پختہ مٹّی کے برتن سے پانی پیتے ہوئے دیکھا۔(معرفۃ الصحابہ،ج 2،ص174، رقم: 2371) امامِ اہلِ سنّت امام احمد رضا خان رحمۃ اللہ علیہ لکھتے ہیں: حُضورِ اقدس صلَّی اللہ تعالٰی علیہ وسلَّم سے تانبے، پیتل کے برتنوں میں کھانا پینا ثابت نہیں۔ مٹی یا کاٹھ (یعنی لکڑی) کے برتن تھے اور پانی کے لئے مشکیزےبھی۔(فتاویٰ رضویہ،ج 22،ص129) مزید فرماتے ہیں: (مٹی کے برتن) میں کھانا پینا بھی تواضُع سے قریب تَر ہے، کھانے پینے کے برتن مٹّی کے ہونا افضل ہے کہ اِس میں نہ اِسراف ہے نہ اِترانا، حدیث میں ہے:جو اپنے گھر کے برتن مٹّی کے رکھےفرشتےاُس کی زیارت کریں۔(فتاویٰ رضویہ، حصّہ الف،ج 1،ص336ملتقطاً)

حضرت سیّدُنا شیخ ابو طالب مکی رحمۃ اللہ علیہ (سنِ وفات:386) لکھتے ہیں:بزرگانِ دین رحمۃ اللہ علیہمگھر میں مٹی کے علاوہ دوسرے برتن رکھنا پسند نہیں فرماتے تھے۔ حضرت سَری سَقَطی رحمۃ اللہ علیہ نے حضرت جنید بغدادی رحمۃ اللہ علیہ سے ارشاد فرمایا: کوشش کرنا کہ تمہارے گھر میں استعمال ہونے والے برتن تمہارے بدن یعنی مٹی سے ہوں۔(قوتُ القلوب،ج 1،ص288)

مٹّی کے برتنوں کو کھانے پینے کے علاوہ دیگر کاموں میں بھی استعمال کرکے ثواب حاصل کیا جاسکتا ہے، فتاویٰ شامی میں ہے کہ مٹّی کے برتن سے وضو کرنا مستحب (یعنی ثواب کا کام) ہے۔(رد المحتار،ج 1،ص268)

دُنیاوی فوائد  مِٹّی کے برتن استعمال کرنے سے دینی فوائد حاصل ہونے کے ساتھ ساتھ دُنیاوی فوائد بھی حاصل کئے جاسکتے ہیں جیسے مِٹّی کے برتنوں میں پکا ہوا کھانا اسٹیل اور دوسری دھاتوں (Metals) میں پکے کھانے کی نِسْبَت زیادہ دیر تک اپنی اِفادِیَت قائم رکھتا ہے۔ ماہِرین (Experts) کے مُطابِق نان اسٹک (Non-stick)، تانبے (Copper)، پیتل (Brass) اور اسٹیل کے برتنوں کا اِسْتِعمال صِحَّت کیلئے مُضر(نقصان دِہ) ہے۔ (رسالہ مدنی انعامات، ص27) مٹکے یا مٹی کے برتن میں پانی محفوظ کر کے پینا گلے کے امراض، کھانسی اور سانس کی تکالیف سے بچاتا اور نظامِ ہاضمہ بھی درست رکھتا ہے۔

اے عاشقانِ رسول!کیا ہی اچھا ہو کہ ہم بھی حصولِ ثواب اور دیگر اچھی اچھی نیتوں کے ساتھ مٹی کے برتن استعمال کریں، شیخِ طریقت، امیرِ اہلِ سنّت دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ کا بھی سالہا سال سے مٹی کے برتن میں کھانے پینے کا معمول ہے، چنانچہ آپ دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ فرماتے ہیں:میرا عام پلیٹوں میں کھانے کو دِل نہیں کرتا البتہ یہ نہ کہا جائے کہ مٹی کے برتنوں کا استعمال سنّت ہے کیونکہ اِس پر کوئی واضح روایت نہیں مِل سکی۔ ”نیک بننے کے طریقے“ میں طریقہ نمبر11میں بھی مٹی کے برتن استعمال کرنے کی ترغیب ہے۔

میں مٹی کے سادہ سے برتن میں کھاؤں

چٹائی کا ہو بسترا یاالٰہی(وسائلِ بخشش(مرمم)، ص330)

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

٭…ابومحمدطاہر عطاری مدنی 

٭…مجلس مدنی انعامات ،کراچی

Share

Articles

Comments


Security Code