اللہ پاک سے محبت/کیا آپ جانتے ہیں؟

پیارے بچو! اللہ پاک ہمارا خالِق (Creator)ہےہمیں اس سے کیسی محبت کرنی چاہئے؟ آئیے اس بارے میں امیر اہلِ سنّت حضرت علامہ محمدالیاس قادری دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ سے جانتے  ہیں۔

امیر ِاہلِ سنّتدَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہفرماتے ہیں : “ اللہ پاک ہم سے  ہمارے ماں باپ سے بھی زیادہ محبت کرتا ہے لہٰذا ہمیں بھی اللہ پاک سے اپنے ماں باپ اور ہر پیاری سے پیاری چیز سے بڑھ کر محبت کرنی چاہئے ۔ وہی ہمیں روزی دیتا ہے ،  کھانا کھلاتا ہے ،  پانی پلاتا ہے ،  میٹھے میٹھے آم کھلاتا ہے ،  ایپل ،  اورنج ،  کیسی کیسی نعمتیں اللہ پاک ہم کو کھلاتا ہے !ہم سب کو اللّٰہ پاک سے محبت کرنی  چاہئے ، اسی نے ہم کو بنایا ہے۔ “

پیارے بچّو!جس سے محبت کی جاتی ہے اس کی بات مانی جاتی ہے ،  اس لئے امیر اہلِ سنّتدَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ فرماتے ہیں : “ ہمیں اللہ کی عبادت کرنی چاہئے ،  نماز پڑھنی چاہئے اور اس کے تمام اَحکام یعنی اس نے جو جو ہمیں آرڈر فرمائے ،  اس کو ہمیں ماننا چاہئے۔ “

(مدنی چینل ، پروگرام ’’بچّوں کی تربیت‘‘ ،  موضوع : اللہ پاک کی اپنے بندے سے محبت)

اللہ پاک سے دعا ہےکہ ہمیں اپنی سچی پکی محبت نصیب فرمائے۔ اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ*ماہنامہ  فیضانِ مدینہ ، کراچی

 

Share

اللہ پاک سے محبت/کیا آپ جانتے ہیں؟

سوال : مُلکِ عرَب کو “ جَزیرَۃُ العرَب “ کیوں کہا جاتا ہے؟

جواب : جیسے جزیرہ چاروں طرف سے پانی میں گھرا ہوتا ہے ایسے ہی اس ملک کو بھی تین طرف  سے سمندر اور چوتھی طرف سے دریائے فُرات نے گھیر رکھا ہے اس لئے اسے “ جَزیرَۃُ العرَب “ کہا جاتاہے۔

(سیرت مصطفیٰ ، ص40ملخصاً)

سوال : ہمارے پیارے نبی محمدِ عربیصلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے پر دادا  کو ’’ہاشِم “ کیوں کہاجاتا ہے؟

جواب : ایک سال قحط کی وجہ سے  حضرت ہاشمرضی اللہ عنہ ملکِ شام سے خشک روٹیاں خرید کر لائے ، ان کا چُورا کرکے اونٹ کے گوشت کے شوربے میں ثَریدبنا کر حاجیوں کو پیٹ بھر کر کھلایا۔ اس دن سے لوگ ان کو “ ہاشم “ (یعنی روٹیوں کا چُورا کرنے والا) کہنے لگے۔ (مدارج النبوۃ ،  2 / 8 ، سیرت مصطفیٰ ، ص52ملخصاً)

سوال : حضرت نُوحعلیہ السَّلام کو “ نُوح “ کیوں کہا جاتا ہے؟

جواب : اللہ کریم کے خوف سے بہت زیادہ گِریہ وزاری کرنے(یعنی رونے)  کی وجہ سے۔

(صراط الجنان ، 3 / 347ماخوذاً)

سوال : قُرَیش کن کا لقب ہے؟

جواب : پیارےآقاصلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے خاندا ن کی ایک شخصیت حضرت فِہْر بن مالک کا۔

(سیرت مصطفیٰ ، ص51ماخوذاً)

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ*ماہنامہ  فیضانِ مدینہ ، کراچی

Share

Articles

Comments


Security Code