Book Name:Madinay Ki Khasoosiyat

میرے ساتھ اچھاسُلوک کیا ہے تو(سُنو!) میں مدینۂمُنَوَّرَہپردُنیاکو ترجیح نہیں دیتا۔(احیاء العلوم،۱/۱۱۳)

مدینہ اِس لیے عطارؔ جان و دل سے ہے پیارا

کہ رہتے ہیں مِرے آقا مِرے سَروَر مدینے میں

(وسائل بخشش مرمم،ص۲۸۳)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                             صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!شیخِ طریقت، اَمِیْرِ اَہلسنّت، بانیِ دعوتِ اسلامی حضرت علّامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطّار قادِری رَضَوِی ضِیائی دَامَتْ بَـرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ   کو کئی مرتبہ سَفَرِِ حج و سَفَرِ مدینہ کی سعادت حاصِل ہوئی ،جن میں مجموعی طور پر جو کَیْفیَّت رہی اُسے پوری طرح تو بَیان  نہیں کِیا جاسکتا البَتَّہ آپ دَامَتْ بَرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ   کے ایک سَفَرِ مدینہ کے مُخْتَصَر اَحوال سُنتےہیں چنانچِہ

امیرِ اَہلسُنّت دَامَتْ بَـرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ  کا سفرِِ مدینہ

جب مدینۂ پاک کی طرف آپ   کی روانگی کی مبارَک گھڑی آئی تو ائیر پورٹ(Airport) پر عاشقانِ رسول آپ کو اَلوَداع کہنے کے لئے مَوجود تھے،مدینے کے دیوانوں نے آپ  کو حلقے(یعنی دائرے) میں لے کر نعتیں پڑھنا شروع کردیں۔سوزوگُدازمیں ڈُوبی ہوئی نعتوں نے عُشّاق کی آتش ِعشق کو مزید بَھڑکا دیا۔غمِ مدینہ میں اُٹھنے والی آہوں اور سِسْکیوں سے فَضا سوگْوار ہوئی جارہی تھی،خود عاشقِ مدینہ اَمِیْرِ اَہلسنّت کی کَیْفیَّت بڑی عجیب تھی۔آپ کی آنکھوں سے آنسوؤں کی جَھڑی لگی ہوئی تھی اورآپ اپنے اِن اَشْعار کے مِصْداق نَظَر آرہے تھے کہ

آنسوؤں کی لَڑی بن رہی ہو                                              اور آہوں سے پَھٹتا ہو سینہ

وردِ لَب ہو "مدینہ مدینہ"                                                 جب چَلے سُوئے طیبہ سفینہ

(وسائلِ بخشش مرمم،ص۱۸۸)