Book Name:Madinay Ki Khasoosiyat

نصیب ہوجائے۔یادرہے!مدینے شریف میں مرنا اور جنّتُ البقیع میں دفن ہونا  بہت بڑی سعادت مندی کی بات ہے،جیسا کہ

مدینے میں مرنے کی فضیلت

نبیِّ اکرم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ نےاِرْشادفرمایا:مَنِِ اسْتَطَاعَ اَنْ  يَّمُوتَ بِالْمَدِينَةِ فَلْيَمُتْ بِهَا  تم میں سےجس سےہوسکےکہ وہ مدینےمیں مرےتومدینےہی میں مرے،فَاِنِّي اَشْفَعُ لِمَنْ يَمُوْتُ بِهَاکیونکہ میں مدینےمیں مرنے والے کی شفاعت کروں گا۔(ترمذی ،کتاب المناقب،باب فی فضل المدینۃ،۵/۴۸۳، حدیث: ۳۹۴۳)

ایک اور مقام پراِرشاد فرمایا:(قِیامت میں جب سب کو قَبْروں سے اُٹھایا جائے گا)سب سے پہلے میری پھر ابُو بَکْر و عُمَر (رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُمَا) کی قَبْریں کھلیں گی، پھر میں جنّتُ البقیع والوں کے پاس جاؤں گا،تو وہ میرے ساتھ اِکٹھے ہوں گے،پھر میں  اَہل ِ مکہ کا اِنتظار کروں گا حتّٰی کہ حَرَمَینِ شَرِیْفَیْن کے درمیان اُنہیں بھی اپنے ساتھ کرلوں گا۔(ترمذی،ابواب المناقب،باب(م:تابع۱۷،ت:۵۶)الخ،۵/۳۸۸، حدیث: ۳۷۱۲)

عاشقِ مدینہ،امیرِ اَہلسُنّت دَامَتْ بَـرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ مدینے شریف میں مرنے اور بقیع  ِپاک میں دفن ہونے کے جذبات کا اِظہار کرتے ہوئے اپنے نعتیہ دیوان ”وسائلِ بخشش “ میں لکھتے ہیں کہ

میں ہوں سُنّی رہوں سُنّی مروں سُنّی مدینے میں

بقیعِ پاک میں بن جا ئے تُربت یارسولَ اللہ

                                                                                                                                                                (وسائل بخشش مرمم،ص۳۳۱)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                                      صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

12مدنی کاموں میں سے ایک مدنی کام”بعدِ فجر مَدَنی  حلقہ“

اے عاشقانِ رسول!مدینے کی یادوں میں گم رہنے،اپنے دل کو مَحَبَّتِ مدینہ سے شاد و آباد رکھنے اور عشقِ مدینے میں مچلنے کا سلیقہ پانے کے لئے دعوتِ اسلامی کے مدنی ماحول سے وابستہ ہوکر ذیلی حلقے