Book Name:Madinay Ki Khasoosiyat

چوم لُوں کاش! نگاھوں سے سنہری جالی                         اَشکبار آنکھ سے منبر کا بھی جلوہ دیکھوں

(وسائل بخشش مرمم،ص۲۶۰)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                         صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

    میٹھےمیٹھےاسلامی بھائیو!سناآپ نے!سرکارِ دوعالم،نورِ مُجسّم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰ لِہٖ وَسَلَّم کے روضۂ انور کی زیارت کرنا کس قدر باعثِ سعادت وباعثِ برکت ہے کہ روضۂ انور کی زیارت کرنے والوں کو بارگاہِ الٰہی سے مغفرت کے پروانے تقسیم کئے جاتے ہیں،تو کتنے خوش نصیب ہیں وہ عاشقانِ رسول جو مدینۂ پاک کی حاضِری کا شرف پاچکے،جنہوں نے سبز سبز گنبدکے حَسین جلووں کو دیکھ کر اپنے کلیجے ٹھنڈے کئے،جنہوں نے مسجدِ نبوی کے دلکش مناروں کی زیارت کا جام پیا۔جنہوں نے آقا کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے منبر  ومحراب کو اپنے سر کی آنکھوں سے دیکھنے کا اِعزاز حاصِل کیا۔یقیناً یاد ِمدینہ اُنہیں اب بھی بے قرار رکھتی ہوگی، جب وہ تصاویر میں اُن مناظر کو دیکھتے ہوں گے تو اُن کی آنکھیں اَشکبار ہوجاتی ہوں گی،دل بے قابو ہونے لگتا ہوگا۔اے کاش!ربِّ کریم اُن عاشقانِ رسول کے طفیل ہم گناہگاروں کو بھی حاضِریِ مدینہ کی سعادت عطا فرمادے،اے کاش!آقا کریم صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ ہمیں بھی اپنے قدموں میں بُلالیں،اے کاش! ہمیں بھی سبز سبز گنبد کے پُرنُور جلوے دیکھنا نصیب ہوجائیں،اے کاش!ہمیں بھی سنہری جالیوں کے سامنے کھڑے ہوکر دُرُود و سلام پڑھنے کی سعادت نصیب ہوجائے۔

حضور ایسا کوئی انتظام ہو جائے                            سلام کے لئے حاضر غلام ہو جائے

میں صرف دیکھ لوں ایک بار سبز گنبد کو                                بَلا سے پھر میری دنیا میں شام ہوجائے

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                         صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

اے کاش!ہمیں بھی اِیمان  و عافیت کے ساتھ میٹھے مدینے میں موت  اور جنّتُ البقیع میں دوگز زمین