Book Name:Madinay Ki Khasoosiyat

  عشق و اُلفت کا یہ نِرالا انداز ہر ایک کی سمجھ میں تو آنہیں سکتا کیونکہ حاضِریِ طیبہ کے لئے جانے والے تو عُموماً خوش ہوتے ہوئے ،مبارَکبادیا ں وُصول کرتے ہوئےجاتے ہیں اور یہ کوئی ناجائز بھی نہیں البتہ امیرِ اہلسنت دَامَتْ بَـرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہاپنے کلام میں ایسے زائرینِ مدینہ کا مَدَنی ذِہْن بناتے ہوئے فرماتے ہیں:

ارے زائرِمدینہ!تُو خوشی سے ہنس رہا ہے                               دلِ غمزَدہ جو لاتا تو کچھ اَور بات ہوتی

(وسائلِ بخشش مرمم،ص۳۸۵)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                                                                      صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

            بِالآخِر اِسی مدینے کےخیال میں گم ہوجانےکے عالَم میں سَفَرِ مدینہ کا آغاز ہوا،جُوں جُوں منزِل  قریب آتی رہی،آپ کے عشق کی شِدّت بھی بڑھتی رہی۔اُس پاک سَرزمین پر پَہُنْچتے ہی آپ نے جُوتے اُتار لئے۔اللہ! اللہ! مِزاج ِعشقِ رسول سے اِس قدَر جان پہچان رکھنے والے کہ خُود ہی کلام میں فرماتے ہیں:

پاؤں میں جُوتا ارے! محبوب کا کُوچہ ہے یہ                            ہوش کر تُو ہوش کر غافل! مدینہ آگیا

(وسائلِ بخشش مرمم،ص۲۰۲)

اَمِیْرِ اَہلِسنّت دَامَتْ بَـرَکاتُہُمُ الْعَالِیَہ اُس پاک سَرزمین کے آداب کا اِس قدَر خیال رکھتے کہ  ۱۴۰۶؁ھ کے سَفَرِِ حج میں آپ کی طبیعت ناسازتھی۔سَخْت نزلہ ہوگیا،ناک سے شِدّت کے ساتھ پانی بِہہ رہاتھا۔اِس کے باوُجود آپ نے کبھی بھی مدینَۂ پاک کی سَرزمین پر ناک نہیں سِنکی بلکہ آپ کی ہر اَدا سے ادب کا ظُہور ہوتا۔جب تک مَدِیْنَۂ مُنَوَّرَہ میں رہے حتّی الاِمکان گُنبدِخضر اکو پِیٹھ نہ ہونے دی۔(تعارفِ امیر اہلسنت،ص۳۲تا۳۴ملتقطاً)الغرض اس مبارک سفر میں گویا آپ اِن اَشعار کی عَمَلی تصویر بنے رہے :

مدینے کا سَفَر ہے اور میں نَمدیدہ نَمدیدہ                        جَبِیں اَفسُردہ اَفسُردہ بدن لَرزیدہ لَرزیدہ

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                                             صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد