پیارے نبی کی پیاری ادائیں

نبیِّ    مُکرم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی پاکیزہ اور مبارَک سیرت رہتی دنیا تک  کے لئے مَشعلِ راہ ہے۔ آپ کی ہر ہر ادا میں ڈھیروں حکمتیں چُھپی ہیں، عاشقانِ رسول ان اداؤں کو بجا لانا اپنے لئے باعثِ فخر سمجھتے ہیں اور اسے دِین و دنیا کاسَرمایہ جانتے ہیں۔ لہٰذا یہاں پیارے مصطفےٰ  کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی 8 پیاری پیاری ادائیں ذکر کی جاتی ہیں۔

(1)گُفتارِ مُصطَفےٰ:سرکارِ مدینہ   صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم پیارے انداز میں صاف صاف گفتگو فرماتے،([1])اہم بات تین بار دُہراتے تاکہ اچھی طرح سمجھ لیا جائے([2]) اور بِلاضَرورت گفتگو نہ فرماتے۔([3])

(2)رَفتار مبارَک:پیارے آقا   صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم چلتے تو پاؤں جما کر چلتے  گویا  آپ بلندی سے نیچے اترتے معلوم ہوتے۔([4])

(3)چھینکنے کا انداز:سرورِ کائنات صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم بلند آواز سے چھینکنے کو نا پسند فرماتے تھے۔ جب چھینک آتی تو منہ مبارَک   کو کپڑے یا ہاتھ مبارک سے ڈھانپ لیتے۔([5])

(4)آرام فرمانے کا انداز:رسولِ خدا   صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم سوتے وقت اپنا دایاں ہاتھ مبارک رُخسار کے نیچے رکھتے([6]) اور یہ دُعا پڑھتے:اَللّٰهُمَّ بِاسْمِكَ اَمُوتُ وَاَحْيَا یعنی اے اللہ میں تیرے نام کے ساتھ ہی مرتا اور جیتا ہوں (یعنی سوتا اور جاگتا ہوں) اور جب بیدار ہوتے تو یہ دعا پڑھتے:   اَلْحَمْدُ  لِلَّهِ الَّذِي اَحْيَانَابَعْدَ مَا اَمَاتَنَا وَاِلَيْهِ النُّشُورُ یعنی شکر ہے اللہ کا جس نے ہمیں مر جانے کے بعد زندہ کیا اور اُسی کی طرف اُٹھنا  ہے۔([7])

(5)پانی پینے کا انداز:سرکارِ مکۂ مکرمہ    صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم پانی تین سانس میں نوش فرماتے۔([8])

(6)خُوشبو کا استعمال:نبیِّ کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کو خوشبو پسند تھی،([9]) خوشبو کا تحفہ رَد نہ فرماتے،([10]) مشک و عنبر خوشبو استعمال فرماتے۔([11])

(7)آئینہ دیکھنے کا انداز:شہنشاہِ دوعالَم   صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم آئینہ دیکھتے وقت اللہ پاک کا شکر ادا کرتے اور یہ دعا پڑھتے: اَللّٰہُمَّ کَمَا اَحْسَنْتَ خَلْقِي فَحَسِّن خُلُقِي یعنی اے    اللہ  جس طرح تُو نے میری تخلیق کو حسین کیا ایسے ہی میرے خُلْق کو بھی اچھا کردے۔([12])

(8)سُرمہ لگانے کا انداز:مدینے کے تاجدار صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم اِثْمد سرمہ لگایا کرتے۔([13]) آپ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم مقدس آنکھوں میں سُرمہ کی تین تین سلائیاں  استعمال فرماتے تھے([14]) اور بعض اوقات دو دو سلائیاں سرمہ کی ڈالتے اور ایک سلائی کو دونوں مبارک آنکھوں میں لگاتے۔([15])

مختلف سنّتوں اور آداب کی معلومات کیلئے  کتاب”سنّتیں اور آداب“ اور رسائل”101مدنی پھول“ اور”163مدنی پھول“ کا مطالعہ مفید ترین ہے۔

ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

٭…محمد جاوید عطاری مدنی   



1                                        مسند امام احمد،ج 10،ص115،حدیث:26269

2                                                شمائل محمدیہ، ص134،حدیث:214

3                            شمائل محمدیہ، ص135،حدیث:215

[4]                              وسائل الوصول الی شمائل الرسول،ص60

[5]                          وسائل الوصول الی شمائل الرسول، ص99

[6]                                  سبل الہدیٰ والرشاد،ج7،ص253

[7]                                    شمائل محمدیہ، ص157، حدیث:243

[8]                                       مسلم، ص863،حدیث:5287

[9]                                     مراۃ المناجیح،ج 6،ص174

[10]             شمائل محمدیہ، ص130، حدیث:208

[11]                      مواہبِ لدنیہ،ج2،ص70

[12]      الوفا لابن الجوزی،ج2،ص161

[13]                ترمذی،ج 3،ص294، حدیث:1763

[14]                        شمائل محمدیہ، ص51، حدیث:49

[15]                       وسائل الوصول الی شمائل الرسول،ص77

Share

Articles

Comments


Security Code