Book Name:Shan-e-Bilal-e-Habshi

دنیا کے سارے غم مرے دل سے نکال دو

غم اپنا یا حبیب! برائے بلال دو

(وسائلِ بخشش مرمّم،ص۳۰۵)

      اےعاشقانِ رسول!یہ حقیقت ہےجوعشقِ رسول میں روتاہے،وہ دنیاوآخرت میں کامیاب ہوتاہے،جب سیّدنابلالِ حبشیرَضِیَ اللہُ عَنْہُنےاپنی ساری زندگیاللہکےمحبوب صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَکے عشق ومحبت میں گزاری توربِّ کریم نےآپرَضِیَ اللہُ عَنْہُکودنیاوآخرت میں  بلندمقام ومرتبہ عطافرمایا،قیامت تک آنےوالے لوگوں کےدلوں میں آپ کی محبت ڈال دی  گئی اورحضورنبیِ کریم صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَنےآپ  کےایسےایسےفضائل ومراتب کو بیان کیاجن کوپڑھ یاسُن کرآپ رَضِیَ اللہُ عَنْہُکی محبت میں اضافہ ہوتاہے۔

       پیارے آقا،مکی مدنی مصطفےٰصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے لاڈلے اورپیارے صحابی حضرت سیّدنابلالِ حبشیرَضِیَ اللہُ عَنْہُکادُنیا میں کیسابُلند مقام تھا،اللہ پاک کی رحمت اورمصطفےٰ کریم صَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے صدقے میں آخر ت میں ان پرکیسی کیسی کرم نوازیاں ہوں گی،آئیے! اس کے مُتَعلِّق (2)فرامینِ مُصطفٰےسنتے ہیں:چنانچہ

شانِ بلال بزبانِ مصطفٰے

1۔ ہم غریبوں کےآقا،مکی مدنی مصطفےٰصَلَّی اللّٰہُ عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَنےایک مرتبہ حضرتِ بلال(رَضِیَ اللہُ عَنْہُ) کی طرف اشارہ کرکےفرمایا:بروزِقیامت جنّتی  اُونٹنی پرسوار ہوکراذان کہیں گے اور جب اَشھَدُ اَنَّ مُحَمّدًارَّسُولُ  اللہکےکلمات کہیں گےتوتمام انبیاء اوراِن کےاُمّتی بلال کودیکھ رہے ہوں گے۔انبیاءوشہدا کےبعدسب سے پہلےبلالِ حبشی  کوجنّتی حُلّہ(یعنی جنّتی لباس) پہنایا جائے گا۔ (ابن