معراج  کی  حکمتیں

مشہور مُحاوَرہ ہے کہفِعْلُ الْحَکِیْمِ لَایَخْلُو عَنِ الْحِکْمَۃِیعنی حکیم کا کوئی بھی کام حِکمت سے خالی نہیں ہوتا، اللہ پاک کا ایک صِفاتی نام حکیم بھی ہے، اس کے ہر کام میں بےشُمار حکمتیں پوشیدہ ہوتی ہیں جنہیں سمجھنے سے ہماری عقلیں قاصِر (بے بس) ہوتی ہیں۔ اللہ پاک نے اپنے مَدَنی حبیبصلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کو اعلانِ نَبُوّت کے گیارھویں سال یعنی ہجرت سے دو سال پہلے حضرت سیِّدَتُنا اُمِّ ہانیرضی اللہ عنہا کے گھر سے ستائیسویں رجب پیر کی شب میں معراج کروائی۔ اس معراج میں کئی حکمتیں ہیں جن کا ہمیں مکمل علم نہیں۔البتہ علمائے کرام نے جو حکمتیں بیان فرمائی ہیں،ان میں سے 5 حکمتیں ملاحظہ کیجئے:

(1)سارے مراتب طے کروائےحکیمُ الْاُمَّت مُفتی احمد یار خان نعیمی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں: وہ تمام مُعْجِزَات اور دَرَجات جو انبیائے کرام عَلیہمُ الصّلٰوۃ والسَّلام کو علیحدہ علیحدہ عطا فرمائے گئے، وہ تمام بلکہ اُن سے بڑھ کر (کئی مُعْجِزَات) حُضُورِ پُرنور صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کو عطا ہوئے۔ اس کی بہت سی مِثالیں ہیں:حضرتِ مُوسیٰ علیہ السَّلام کو یہ دَرجہ مِلا کہ وہ کوہِ طُور پر جا کر رَبّ (کریم) سے کَلام کرتے تھے، حضرتِ عیسیٰ علیہ السَّلام چوتھے آسمان پر بُلائے گئے اور حضرتِ اِدْرِیس علیہ السَّلام جنَّت میں بُلائے گئے توحُضُورِانورصلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کو مِعْراج کرائی گئی، جس میں اللہ پاک سےکلام بھی ہوا، آسمان کی سیر بھی ہوئی، جنَّت و دوزخ کا مُعَاینہ بھی ہوا، غرضیکہ وہ سارے مَرَاتِب ایک ہی مِعْرَاج میں طے کرادئیے گئے۔(شانِ حبیب الرّحمٰن،ص107ملخصاً)

(2)ایمان بِالغیب کا مُشاہدہ کیامعراجِ مصطفےٰ کی ایک حکمت یہ بھی ہے کہ تمام پیغمبروں نے اللہ(کریم) کی اور جنّت و دوزخ کی گواہی دی اور اپنی اپنی اُمَّتوں سےاَشْہَدُ اَنْ لَّا ۤاِلٰہَ اِلَّا اللہ پڑھوایا، مگر اُن حضرات (انبیائے کرام) میں سے کسی کی گواہی نہ تو دیکھی ہوئی تھی اور نہ ہی سُنی ہوئی اور گواہی کی انتہا دیکھنے پر ہوتی ہے، تو ضرورت تھی کہ ان انبیائے کرام (عَلیہمُ الصّلٰوۃ والسَّلام) کی جماعَتِ پاک میں سے کوئی ایسی ہستی بھی ہو کہ جو ان تمام چیزوں کو دیکھ کر گواہی دے، اُس کی گواہی پر شہادت کی تکمیل ہوجائے۔یہ شہادت کی تکمیل حُضُور صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی ذات پر ہوئی۔(کہ آپ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے تمام چیزوں کو اپنی مُبارک آنکھوں سے مُلاحظہ فرمایا)۔(شانِ حبیب الرّحمٰن، ص107 ملخصاً)

(3)مالکِ کونین نے اپنی سلطنت دیکھی اللہ پاک نے اپنے محبوب صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کو تمام خزانوں کا مالک بنایا ہے، اللہ پاک پارہ30، سُوْرَۃُ الْکَوثَر کی آیت نمبر1میں اِرشاد فرماتا ہے: ( اِنَّاۤ اَعْطَیْنٰكَ الْكَوْثَرَؕ(۱) ) تَرْجَمَۂ کنزُ الایمان: اے محبوب بے شک ہم نے تمہیں بے شمار خوبیاں عطا فرمائیں۔ حضور مالکِ کونین، شبِ اسریٰ کے دولہا صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم فرماتے ہیں: میں سورہا تھا کہ زمین کے تمام خزانوں کی کنجیاں لائی گئیں اور میرے دونوں ہاتھوں میں رکھ دی گئیں۔(بخاری،ج 2،ص303، حدیث: 2977) رسولُ  اللہ صلَّی اللہعلیہ واٰلہٖ وسلَّم نے اِرشاد فرمایا:میں (اللہ پاک کے خزانوں کا) خازِن ہوں۔ (مسلم، ص512، حدیث:1037)حضور نبیِّ کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم اللہ پاک کی عطا سے اس کی تمام سلطنت کے مالِک ہیں، اسی لئے جنَّت کے پتّے پتّے پر، حُوروں کی آنکھوں میں غرضیکہ ہر جگہ لَاۤاِلٰہَ اِلَّا اللہ مُحَمَّدٌرَّسُوْلُ اللہ لکھا ہوا ہے: یعنی یہ چیزیں اللہ (کریم) کی بنائی ہوئی ہیں اور مُحَمَّدٌ رَّسُوْلُ اللہ کو دی ہوئی ہیں۔(تو معراج کروانے میں) اللہپاک کی مرضی یہ تھی کہ (دوجہانوں کے خزانوں کے) مالِک کو اس کی ملکیت دِکھا دی جائے۔(شانِ حبیب الرّحمٰن، ص107 ملخصاً) چنانچہ اس لئے معراج کی رات یہ سیر کروائی گئی۔

(4)سلسلۂ شفاعت میں آسانی کل بروزِ قِیامت نبیِّ رحمت، شفیعِ اُمّت صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے شفاعت فرمانی ہے، بلکہ شفاعت کا دروازہ آپ سے کھلنا ہے، اللہ پاک نے اپنے محبوب صلَّی اللہعلیہ واٰلہٖ وسلَّم کو کائنات کے عجائبات، جنّت کے درجات اور جہنّم کا مُشاہدہ کرادیا، اس کے علاوہ اور بھی بڑی بڑی نشانیاں دکھائیں تاکہ قِیامت کے ہولناک دن کی ہیبت آپ پر طاری نہ ہوسکے، پورے عزم و اِستقلال کے ساتھ شفاعت کر سکیں۔(معارج النبوۃ،ص80ملخصاً)

(5)وحی کی تمام اقسام کا شرف وحی کی ایک قسم یہ ہے کہ اللہ پاک بِلاواسطہ کلام فرمائے اور یہ وحی کی سب سے اعلیٰ قسم ہے، معراج کی ایک حکمت یہ بھی ہے کہ سرورِ کائنات صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم تمام اقسامِ وحی سے شرف پائیں، کُتبِ تفاسیر میں لکھا ہے کہ اٰمَنَ الرَّسُوْلُ والی آیات جو کہ سُوْرَۃُ الْبَقَرہ کی آخری 2 آیات ہیں، حضور نبیِّ کریم صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم نے معراج کی رات اللہ پاک سے بِلاواسطہ سُنی، اسی طرح کچھ سُورَۃُ الضُّحیٰ اور کچھ سُورَۂ اَلَم نَشْرَح معراج کی رات سُنی۔(روح البیان،پ25،الشوریٰ،تحت الآیۃ:51،ج 8،ص345)

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

٭…شعبہ فیضان اولیاوعلما،المدینۃ العلمیہ ،باب المدینہ کراچی

Share

Articles

Comments


Security Code