Book Name:Miraaj kay Waqiaat

بُراق کی قسمت                                 مرحبا                 بُراق کی سُرعَت                   مرحبا                نبیوں کی اِمامت                 مرحبا

آقا کی رِفْعت                        مرحبا                 آسماں کی سِیاحت          مرحبا                مکینِ لامکاں کی عظمت              مرحبا

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!                            صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

مِعْراج  کے دُولہا کی سُواری

حضرت سَیِّدُنا اَنَس بِن مالِک رَضِیَ اللّٰہُ تَعَالٰی عَنْہُ  سے مروی ہےکہ پیارے آقا، شَبِِ اَسْرٰی کے دُولہا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ نے فرمایا:میرے پاس بُرَاق(جس کا نام جارُود تھا)لایا گیا، جوگدھے سے بڑااور خچر سے چھوٹا ،اِنْتہائی سفید رنگ کا لمبے قد والا چوپایہ تھا ،اُس کا قدم نظر کی اِنْتہاء پر پڑتا تھا ،میں اُس پر سُوار ہو کر بَیْتُ الْمَقْدِس تک پہنچا،جس جگہ اَنْبیائے کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام   اپنی سُواریوں کو باندھتے تھے،وہاں میں نے اُس کو باندھ دِیا، پھر میں مسجدِ(اَقْصٰی)میں داخِل ہوا اور اُس میں دو رکعت نماز ادا کی۔( مسلم ،کتاب الایمان ، باب الاسراء برسول اللہ الخ ،ص۹۷،حدیث۲۵۹)

انبیائے کِرَام  عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کی اِمامَت

اِس نماز میں آپ  صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ،تمام اَنْبیائے کرام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام   کے اِمام تھے۔ (سیرۃ سید الانبیاء،ص۱۲۸)(کیونکہ)پیارے آقا صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کی شانِ عالی کے اِظْہار کے لئے بَیْتُ الْمَقْدِس میں تمام اَنْبیائے کِرَام عَلَیْہِمُ الصَّلٰوۃُ وَالسَّلَام کو جمع کِیا گیا تھا۔(نسائى، كتاب الصلاة، باب فرض الصلاة...الخ، ص۸۱،حديث:۴۴۸)جب آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ  یہاں تَشْرِیْف لائے تو اُن سب حضرات نے آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو دیکھ کر خُوش آمدید کہا اور نماز کے وقت سب نے آپ صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کو اِمامَت کے لئے آگے کِیا، پھر حضرتِ جِبْرائیل عَلَیْہِ السَّلَام نے دستِ