ماں باپ کی خدمت کیجئے / کیا آپ جانتے ہیں؟

پیارے بچو! اپنے والدین سے محبت کریں ، ان کا خوب ادب و احترام کریں ، ان کی خدمت کریں ، ان کی ہر جائز بات مانیں اور ان سے کسی بھی بات پر بحث نہ کریں ، اپنے امّی ابو کے ساتھ ہمیں کیسا رہنا چاہئے؟ اس حوالے سے امیر ِاہل ِسنّت   دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ   فرماتے ہیں : امّی ابو کی خوب خدمت کیا کریں ، اِنْ شَآءَ اللہ دونوں جہانوں میں خوب کامیابی حاصل کریں گے۔ ماں باپ کا بڑا  رُتبہ ہوتا ہےہمیں ان سے محبت کرنی چاہئے ، ماں باپ بھی ہم سے بہت محبت کرتے ہیں ، ان کی بات بھی مانا کریں ، ان سے بحث نہ کیا کریں ، ان کو ستایا نہ کریں ، جو کھانے کےلئے دیں کھا لیا کریں ، جو پہننے کے لئے دیں پہن لیا کریں ، ماں باپ کو ٹینشن نہ دیں بلکہ ماں باپ کو  آسانیاں دیں

اس سے اللہ بھی راضی ہوگا او ر ماں باپ بھی راضی ہوں گے۔                (مدنی چینل ، سلسلہ : بچوں کی تربیت ، قسط : 03)

امّی ابو  اگرکبھی ڈانٹیں تو اس وقت بچوں کوکیا کرنا چاہئے؟ امیرِ اہلِ سنّت   دَامَتْ بَرَکَاتُہُمُ الْعَالِیَہ   فرماتے ہیں : امّی ابو ڈانٹیں تو چُپ ہو جانا چاہئے ، اچّھے بچےّ سامنے سے جواب نہیں دیتے ، امّی ابو سے اُونچی آواز میں بات بھی نہیں کرنی چاہئے اور آنکھیں بھی نہیں ملانی چاہئے ، امّی ابو کا غصّہ ٹھنڈا کرنے کیلئے (حسبِ موقع ) ان سے کہیں : ’’ امّی! اللہ آپ کو مدینہ دکھائے۔ ‘‘ تو اِنْ شَآءَ اللہ امّی کا غصّہ ٹھنڈا ہو جائے گا۔                                                 (بچوں کی تربیت ، قسط : 03)

پیارے بچّو! آج ہی سے نیّت کریں کہ ان باتوں پر عمل کریں گے۔  اِنْ شَآءَ اللہ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ*ماہنامہ  فیضانِ مدینہ ، کراچی

 

Share

ماں باپ کی خدمت کیجئے / کیا آپ جانتے ہیں؟

سوال : حج کے مہینے کون کون سے ہیں؟

جواب : شوّال ، ذُوالْقَعدَہ  اور  ذُوالحِجَّہ کے 10دن۔           (خزائن العرفان ، ص 66ملخصاً)

سوال : ان مہینوں کو حج کے مہینے کیوں کہاجاتاہے؟

جواب : ذُوالحجہ میں  حج کے اَرکان ادا ہوتے ہیں۔ شوّال اور ذُوالْقَعدَہ کو حج کے مہینے اسی لئے کہا گیا ہے کہ ان میں حج کا احرام با ندھنا بلا کراہت جائز ہے اور ان سے پہلے مکروہ ہے۔         (صراط الجنان ، 1 / 314 ما خوذاً)

 سوال : حضرت سیّدُنا خِضَر   علیہ السَّلام   کو “ خِضَر “ کیوں  کہا جاتا ہے؟

جواب : آپ   علیہ السَّلام   جہاں بیٹھتے وہاں ہَرِی گھاس اُگ جاتی تھی اس لئے لوگ آپ کوخِضَر کہنے لگے۔   

(بخاری ، 2 / 441 ، حدیث : 3402)

سوال : حضرت آدم   علیہ السَّلام   نے ہند  سے پیدل  کتنے حج ادا کئے؟

جواب : چالیس (40)۔     (طبقات ابن سعد ، 1 / 31)

سوال : حضرت سیّدنا آدم   علیہ السَّلام   اور حضرت حوّا    رحمۃ اللہ علیھا    کی ملاقات  زمین پر کب اور کہاں ہوئی ؟

جواب : 9ذوالحِجَّہ کو  میدانِ عرفات میں ۔        (خزائن العرفان ، ص67ملخصاً)

سوال : حضرت آدم   علیہ السَّلام   اور حضرت حوّا   رحمۃ اللہ علیہا   جنّت سے ز مین  کےکس مقام پر اُتارے گئے تھے؟

جواب : حضرت آدم     علیہ السَّلام   ہند میں ’’نَوذ‘‘یا ’’نَود‘‘([1]) نامی پہاڑپر جبکہ حضرت  حوّا   رحمۃ اللہ علیہا    حجازِ مقدّس کےشہر “ جَدَّہ “ میں۔            (طبقات ابن سعد ، 1 / 30 ، خازن ، پ1 ، البقرۃ : تحت الآیۃ : 36 ، 1 / 46)

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ

ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ*ماہنامہ  فیضانِ مدینہ ، کراچی

 



(1)  یہ پہاڑ  اب سری لنکا کی حدود میں واقع ہے۔  

Share

Articles

Comments


Security Code