Book Name:Zawal Kay Asbab

بھروسا رکھنا ،  یہ بھی زَوال کا ایک سبب ہے ،  اس کی وجہ سے دِل میں دُنیا کی محبّت بڑھتی ہے ،  حِرْص و لالچ میں اِضَافہ ہوتا ہے ،  دِل میں حَسَد کی آگ جلتی ہے اور انسان بس دُنیا ہی کا ہو کر رہ جاتا ہے۔ کتنی قومیں ہیں جو دُنیا پرستی کی وجہ سے تباہ وبرباد ہو گئیں۔ اللہ پاک ہمیں تباہی سے بچائے ،  اپنے کرم سے ہم گنہگاروں کو زوالِ نعمت سے محفوظ فرمائے۔

بیان کا خُلاصہ

بیان کا خُلاصہ یہ کہ اُمَّتِ مسلمہ کی 4 بنیادی ذِمَّہ داریاں ہیں؛  ( 1 )  : خَیْرِ اُمَّت ہونے کا عملی ثبوت دینا  ( 2 )  : نیکی کی دعوت دینا  ( 3 )  : بُرائی سے منع کرنا  ( 4 ) : اور اللہ پاک پر کامِل یقین رکھنا۔ افسوس !  آج ہم ان چاروں ذِمَّہ داریوں میں ناکام ہوتے نظر آ رہے ہیں ،  کردار ہمارے بگڑ چکے ہیں ،  نیکی کی دَعْوت ہم نہیں دیتے ،  بُرائی سے ہم منع نہیں کرتے اور مادِیَّت پرستی ، دُنیا کی رنگینیوں میں ایسے اُلجھے کہ ایمان کمزور ہوئے جاتے ہیں۔ غور فرمائیے !  جو قوم اپنی ذِمَّہ داریاں نہ نبھائے ،  وہ زوال اور پستی کے کتنا قریب ہے  ؟  اب بھی وقت ہے کہ ہم سنبھل جائیں ،  رَبِّ کائنات نے ہمیں جو مہلت عطا فرمائی ہے ،  پاکستان کی صُورت میں آزادی کی نعمت سے نوازا ہے ،  اس کی قَدْر کریں ،  اس نعمت کا شکر ادا کریں ،  ناشکری سے بچیں ،  گُنَاہوں سے ہر دَم دُور رہیں ،  اپنے اخلاق و کردار سدھاریں ،  نیکی کی دعوت عام کریں ،  بُرائیوں سے منع کریں ،  اللہ پاک پر کامِل یقین رکھ کر اُس کی راہ میں نیکی کی دعوت عام کرنے میں لگ جائیں ،   اِنْ شَآءَ اللہ الْکَرِیْم !   دُنیا میں بھی کامیابی ہمارے قدم چومے گی ،   عروج ،  ترقی ،  عزّت و شوکت عطا ہو گی اور اللہ پاک نے چاہا تو قبر و آخرت بھی سَنْوَر جائے گی۔ اللہ پاک ہم سب کو عَمَل کی توفیق عطا فرمائے۔

اٰمِیْن بِجَاہِ خَاتَمِ النَّبِیّٖن  صَلَّی اللہ عَلَیْہ وَآلِہٖ وَسَلَّم ۔