Book Name:Seerat e Usman e Ghani

کے سرکار صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے قلبِ مبارک کے لئے تکلیف کاسبب بنتا ہے۔یہ کون سی مَحَبَّت اور کیسا عشق ہے کہ رسولِ پاک صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم ماہِ رمضان کے روزوں کی تاکید فرمائیں، مگر خُود کو عاشقانِ رسول میں شمار کرنے والے اِس حکم سے منہ موڑ کر ناراضیِ مُصْطَفٰے کاسبب بنیں،پیارے آقا صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم فرمائیں:’’مُونچھیں خُوب پست (یعنی چھوٹی) کرو اورداڑھیوں کو مُعافی دو(یعنی بڑھاؤ)‘‘(شرح معانی الآثار للطحاوی،کتاب الکراھۃ، باب حلق الشارب، حدیث: ۶۴۲۲، ج۴،  ص۲۸ )مگر عشقِ رسول کے دعوے دار اور فیشن کے پرستار،دُشمنانِ سرکارجیسا چہرہ  بنائیں،کیایہی عشقِ رسول ہے؟ یقیناًنہیں اور ہرگز نہیں۔

بے نمازی رہیں کچھ نہ روزے رکھیں                                         اُن کو کس نے کہا؟ عاشقانِ رسول

عالموں پر ہنسیں،پھبتیاں بھی کسیں                                         اُن کو کس نے کہا؟ عاشقانِ رسول

جو کہ گانے سُنیں، فلم بینی کریں                                               اُن کو کس نے کہا؟ عاشقانِ رسول

کھائیں رزق حرام ، ایسے ہیں بد لگام                                          اُن کو کس نے کہا؟ عاشقانِ رسول

داڑھیاں جو منڈائیں کریں غیبتیں                                           اُن کو کس نے کہا؟ عاشقانِ رسول

(وسائلِ بخشش مرمم،ص۵۴۹،۶۵۰)

اے عاشقانِ رسول!نبی پاک صَلَّی اللّٰہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ واٰلِہٖ وَسَلَّمَ کے قدموں پرنثار ہو جایئے،سنتوں سے محبت کیجئے،فیشن سے منہ موڑئیے،مَدَنی قافلوں کے مسافر اور مدنی انعامات کے عامل بن جائیے،اپنا چہرہ نبیِّ رحمت،شفیعِ اُمّت صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کے عاشقوں والا بنا لیجئے یعنی اپنے چہرے پر ایک مُٹھی داڑھی سجا لیجئے،فیشن والے بالوں کے بجائے سُنّت کے مطابق زُلفیں رکھ لیجئے اور ننگے سر گُھومنے کے بجائے عمامے شریف کا تاج سجالیجئے۔بس اپنے ظاہر و باطِن پر مَدَنی رنگ چڑھا لیجئے۔اے کاش! ہمارا اُٹھنا بیٹھنا، چلنا پھرنا، کھانا پینا،سوناجاگنا،لینا دینا،جینا مرنا میٹھے میٹھے آقا،مدینے والے مُصطفےٰ صَلَّی اللہُ تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّم کی سُنَّتوں کے