تفسیر قراٰنِ کریم

Image
ان آیات میں اللہ  تعالیٰ نے کامل ایمان والوں کی تین قلبی و باطنی خوبیاں اور دو جسمانی و مالی اَعمالِ صالحہ بیان فرمائے ہیں، پھر ان بندگانِ خدا کو سچے مؤمنین قرار دیا اور ان کیلئے تین انعامات کی بشارت
Image
زندگی میں مشکلات کا پیش آنا ایک حقیقت ہے، یہ بعض اوقات گناہوں کی سزا ہوتی ہیں اور کبھی ان کی معافی کا ذریعہ۔ یونہی کبھی صالحین کے درجات کی بلندی کا 
Image
سورۂ ہودکی ان آٹھ آیات کا خلاصہ یہ ہے کہ ایک مرتبہ فرشتے حسین و جمیل نوجوان لڑکوں کی شکل میں حضرت ابراہیم علیہ الصلٰوۃ والسَّلام کے پاس آئے اور سلام عرض کیا۔ آپ علیہ الصلٰوۃ والسَّلام نے سلام کا جواب
Image
مجلس کے آداب میں یہ بات شامل ہے کہ جو شخص پہلے آ کر بیٹھ چکا ہو اسے اس کی جگہ سے نہ اٹھایا جائے سوائے کسی بڑی ضرورت کے یا یوں کہ اہم حضرات کے لئے نمایاں جگہ بنادی جائے جیسے دینی و دنیوی دونوں قسم کی مجلسوں میں سرکردہ
Image
یونہی ایک مرتبہ آپ صلَّی اللہ علیہ واٰلہٖ وسلَّم کے اوپر ایک نجرانی چادر تھی جس کے کنارے مو ٹے تھے کہ ایک اعرابی نے بطورِ امداد مال مانگنے کے لئے چادرمبارک پکڑ کر بڑے زور سے کھینچا یہاں تک کہ مبارک کندھے پر رگڑ کا نشان بن گیا۔ 
Image
جب تم میں کوئی نماز ادا کرنے  کھڑا ہوتا ہے تو وہ اپنے رب سے سرگوشی کرتا ہے لہٰذا دیکھ لے کہ اس سے کیسے سرگوشی کررہا ہے۔(مستدرک للحاکم، ج1،ص503، حدیث:895)ہم بھی ایمان والے ہیں اور ایمان والے سب سے زیادہ خدا سے محبت کرتے ہیں۔ 
Image
رزقِ حلال کھانے اور نیک اعمال کرنے کا حکم تمام رسولوں کو دیا گیا۔ ہر رسول کو اُن کے زمانے میں یہ ندا فرمائی گئی۔ پاک رسولوں کو دیا گیا حکم ذکر کرنے کا ایک مقصد یہ ہے کہ رزقِ حلال اور اعمالِ صالحہ (نیکیوں) کی عظمت و اہمیت اُجاگر ہو۔ دوسری حکمت یہ ہے کہ ہر نبی علیہ السَّلام کا
Image
صحابۂ کرام رضی اللہ عنھم کی کئی اقسام ہیں جیسے خلفائے اربعہ، عشرۂ مبشرہ، اصحابِ بدر، اصحابِ اُحد، اصحابِ بیعتِ رضوان، اہلِ بیت وغیرھم۔ ان میں کئی اقسام ایک دوسرے میں داخل بھی ہیں۔صحابۂ کرام کی افراد کی تعداد کے اعتبار سے ایک بڑی تقسیم تو مہاجرین و انصار ہے اور دوسری تقسیم وہ ہے 
Image
صِدْق کی دوسری قسم کا تعلق نیت سے ہے۔ نیت میں صدق یہ ہے کہ آدمی کی عبادت اور نیکی کا مقصد صرف اللہ تعالیٰ کی خوشنودی ہو۔ اگر اس میں کوئی نفسانی غَرَض شامل ہو گئی تو نیت میں صِدْق باطل ہوجائے گا اور ایسے شخص کو جھوٹا کہا جا سکتا ہے۔ خلاصہ یہ ہے کہ صدق کا ایک معنیٰ اخلاص ہے