فریاد

Image
اس کے بَرعکس ذہنی ہم آہنگی نہ ہونا کئی طرح کے نقصانات کا سبب بن سکتا ہے۔
Image
تربیت کے سلسلے میں نیک ماحول اور اچّھی صحبت کا بڑا عمل دخل ہے، کسی کا ذہن بنا کر اسے نیک ماحول میں لانا اس کی بہترین تربیت کا سبب بن سکتا ہے۔ حضرت عبدُالقادر عیسیٰ شاذِلی رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں:
Image
معاشرےکےافرادکےظاہروباطن کو بُری خصلتوں سے پاک کرکےاچّھے اوصاف سے مزیّن کرنا اور انہیں معاشرے کا ایک باکردار فرد بنانا بہت بڑا کام اور انبیائے کرام علیہمُ الصَّلٰوۃ و السَّلام کا طریقہ ہے۔تربیت کرنے والے کو حُسْنِ اَخلاق
Image
اگر تربیت کی اس اہم ذمہ داری کو بوجھ تصور کر کے اس سے غفلت برتتے رہے تو معاشرے کا بگاڑ بڑھتا چلا جائے گا جس کا کسی حد تک مشاہدہ بھی کیا جاسکتا ہے۔
Image
دینِ اسلام نے جہاں انسان کو کفر و شِرْک کی گندگی سے پاک کرکے عزّت و رِفْعت(بلندی) عطا کی وہیں ظاہر و باطن کی پاکیزگی کی اعلیٰ تعلیمات کے ذریعے انسانیت کا وقار بلند کیا، 
Image
عام طورپرکئی لوگ مصیبتوں اورآزمائشوں کےوقت بےصَبْرے ہوجاتے ہیں حالانکہ ہم پرمصیبتوں کاآنا ہمارے ساتھ اللہ پاک کی طرف سے بھلائی کے ارادے اور ہم سے اس کی محبت کی نشانی ہے،
Image
میری معلومات کے مطابق دنیامیں بارہ اَرب لوگوں کےلئے اَناج دَسْت یاب ہوجاتاہے جبکہ دنیا کی آبادی ساڑھے سات اَرب بتائی جاتی ہے، اس کےباوجود 2 اَرب سے زیادہ لوگ وہ ہیں جنہیں پیٹ بھر کر کھانانہیں ملتا