Book Name:Noor Wala Aaya hay

تم سے راضی کبریامولیٰ علی مشکلکُشا 

بعدِ خُلَفائے ثَلاثہ سب صَحابہ سے بڑا

آپ کو رُتبہ ملا مولیٰ علی مشکلکُشا

قَلعۂ خیبر کا دروازہ اُکھاڑا آپ نے

مرحبا!  صد مرحبا!  مولیٰ علی مشکلکُشا

پیکرِ جُودو سخا تُو میں تِرا ادنیٰ گدا

تو کریم میں بے نوا  ([1]مولیٰ علی مشکلکُشا

شَبَّر و شَبّیر کے والد ہوتم ماں فاطِمہ

سیِّد و سردارِ ما  ([2]مولیٰ علی مشکلکُشا

میں گناہوں کا مریض اور آپ ہیں میرے طبیب

دیجئے مجھ کو شِفا مولیٰ علی مشکلکُشا

جان کو خطرہ ہے  میری دشمنوں سے ہر گھڑی

المدد شیرِ خدا  مولیٰ علی مشکلکُشا

حیدرِ  ([3])   کرّار ([4] !  لے کے آؤ تیغِ ذُوالفقار

زورِ  دشمن بڑھ چلا مولیٰ علی مشکلکُشا

مغفِرت کروایئے جنت میں لے کے  جایئے

واسِطہ حَسَنَین کا مولیٰ علی مشکلکُشا

دل سے دنیا کی مَحبَّت دُور کر کے یا علی!

دیدو عشقِ مصطَفٰے مولیٰ علی مشکلکُشا

یا علی!  بہرِ نبی ہم کو نَجف([5])    بُلوایئے

ہو کرم یا مُرتضیٰ مولیٰ علی مشکلکُشا

شَبَّرو شبِّیر کے  بابا مجھے دیدار ہو

خواب میں اب  آپکا مولیٰ علی مشکلکُشا

اشکبار آنکھیں  عطا  ہوں دل کی سختی دور ہو

دیجئے خوفِ خدا مولیٰ علی مشکلکُشا

ایک ذرّہ اپنی اُلفت کا عنایت کر مجھے

اپنا دیوانہ بنا مولیٰ علی مشکلکُشا

بھیک لینے کیلئے دربار میں منگتا ترا

لے کے کشکول آ گیا مولیٰ علی مشکلکُشا

کیوں پھروں  در در بھلا خیرات لینے کیلئے

میں فقط منگتا تِرا مولیٰ علی مشکلکُشا

نفسِ اَمّارہ ([6]  ہو مغلوب اور سدا ناکام ہو

وار ہر شیطان کا مولیٰ علی مشکلکُشا

 



[1]     بے سروسامان۔    

[2]     ہمارے سردار

[3]     شیر

[4]     بار بار حملہ کرنے والا۔   بھگانے والا۔    

[5]     عراق کے اُس شہر کا نام جہاں مولیٰ علیکَرَّمَ اللّٰہُ وَجہَہُ الکریم  کا مزارِ فائض الانوار ہے۔      

[6]     برائی پر ابھارنے والا نفس۔         



Total Pages: 9

Go To