Book Name:Noor Wala Aaya hay

دیدِ عَرَفات و دیدِ مِنیٰ کی                                 میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

دے مدینے کی مجھ کو گدائی                             ہو عطا دو جہاں کی بھلائی

ہے صدا عاجِز و بے نَوا کی                                 میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

حاضِری کی جسے بھی تڑپ ہے                           سبز گنبد کا  دیدار کر لے

اُس کو طیبہ کی مہکی فَضا کی                                میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

عازمِ راہِ بغداد کر دے                                  جلوۂ غوث سے شاد کر دے

مجھ کو دیدارِ کرب و بلا کی                                میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

ہر دم ابلیس پیچھے لگا ہے                                  حفظِ ایمان کی التِجا ہے

بہرِ غوث اَمنِ روزِ جزا کی                                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

مغفرت کر بروزِ قِیامت                                      تُو کرم کر عطا کر عنایت

خُلد میں قُربِ خیرالورٰی کی                                 میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

بارہ مہ کے مسافِر بنے ہیں                                     یاجو  ’’وقفِ  ([1]مدینہ  ‘‘  ہوئے ہیں

اُن کو عشقِ شہِ دو۲ سَرا                                       میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

وہ بچارے کہ بیمار ہیں جو                                     جِنّ و جادو سے بیزار ہیں جو

اپنی رحمت سے اُن کو شِفا کی                                 میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

وہ کہ آفات میں مبتَلا ہیں                                     جو  گرفتارِ  رنج و بلا ہیں

فضل سے اُن کو صبر و رِضا کی                                میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

لا دوا کہہ چکے سب طبیب اب                              دم لبوں پر ہے ربِّ مُجیب اب

جلوۂ شاہِ ارض وسَما کی                                          میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

قبر تیرے کرم سے بنے گی                                  باغ،    رَحمت کی چادر تنے گی

روزِ محشر بھی لطف و عطا کی                                   میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

روح،    عطارؔ کی جب جدا ہو                                  سامنے جلوۂ مصطَفٰے ہو

اُنکے قدموں میں اِس کوقضا کی                             میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

نور والا آیا ہے ہاں نور لیکر آیا ہے

 (یہ کلامِ نور۱۹ ربیع النور۱۴۳۲ کو موزوں کیا) 

نور والا آیا ہے ہاں نور لیکر آیا ہے ([2]

سارے عالم میں یہ دیکھو کیسا نو ر چھایا ہے

چار جانِب روشنی  ہے سب سماں ہے نور نور

حق نے پیدا آج اپنے پیارے کو فرمایا ہے

آؤ آؤ نور کی خیرات لینے کو چلیں

نور والا آمِنہ بی بی کے گھر میں آیا ہے

اس طرف بھی اُس طرف بھی ہر طرف ہی نور ہے

آ گیا ہے نور والا،    نور والا آیاہے

ہو رہی ہیں چار جانب بارشیں انوار کی

چھا گئی  نَکہَت  گُلوں پر ہر شَجَر اِٹھلایا ہے


 



[1]     ایسے بے شمارعاشقِ رسول ہیں جنہوں نے دین کے مَدَنی کاموں کی خاطِر اپنے آپ کو عمر بھر کیلئے دعوتِ اسلامی کے مَدَنی مرکز کے حوالے کر دیا ہے۔    ایسے خوش نصیبوں کو دعوتِ اسلامی کی اِصطِلاح میں  ’’ وقفِ مدینہ‘‘  کہتے ہیں ۔    

[2]     کسی نامعلوم شاعر کاہے۔  

 



Total Pages: 9

Go To