Book Name:Noor Wala Aaya hay

پئے شاہِ بطحا مِری چھوٹ جائیں                          بُلاوا  اب آ ئیگا  کب یا الٰہی

بڑا حج پہ آنے کو جی چاہتا ہے                             بنا کوئی ایسا سبب یا الٰہی

میں مکّے میں آؤں مدینے میں آؤں                    تُو دَشت ([1] و جِبالِ ([2]عَرَب یا الٰہی

میں دیکھوں  مدینے کا گلشن دکھا دے                 گزاروں میں پھر روز و شب یا الٰہی

کرم ایسا کر دے مدینے میں آ کر                                  پئے تاجدارِ عرب یا الٰہی

دکھا دے بہارِ مدینہ دکھا دے                         مٹے خُوئے شَور و شَغَب ([3]یا الٰہی

سلیقہ شِعاری ([4])    کا میں ہوں بھکاری                 ترے خوف سے پیارے رب یا الٰہی

ملے بیقراری کروں آہ وزاری                          نہ کرنا کبھی بھی غضب یا الٰہی

کروں عالموں کی کبھی بھی نہ توہین                                 بنا دے  مجھے با ادب یا الٰہی

حُسین ابنِ حیدر کے صدقے میں مولیٰ                           ٹلیں آفتیں میری سب یا الٰہی

زمانے کی فکروں سے آزاد کر دے                                مٹا غم عطا کر طَرَب ([5]یا الٰہی

جو مانگا وہ دے مجھ کو وہ بھی عطا کر                                  نہیں کر سکا جو طَلَب یا الٰہی

مسلماں مسلمان کے خوں کا پیاسا                                              ہوا وقت آیا عجب یا الٰہی

سبھی ایک ہو جائیں ایمان والے                                                پئے شاہِ عالی نَسَب یا الٰہی

کبھی تو مجھے خواب میں میرے مولیٰ                               ہو دیدارِ ماہِ عَرَب یا الٰہی

خدایا بُرے خاتمے سے بچا لے                                     گنہگار ہے جاں بَلَب ([6]یا الٰہی

نظر میں محمد کے  جلوے بسے ہوں                                  چلوں اِس جہاں سے میں جب یا الٰہی

پسِ مَرگ ([7]ہو روزِ روشن کی مانند                              مِری قبر کی تِیرہ شب ([8]یا الٰہی

گناہوں سے عطّارؔ کو دے مُعافی

کرم بہرِ شاہِ عَرَب یا الٰہی

  {۱}  میرے مولٰی تُو خیرات دیدے

 (۱۶ محرم الحرم ۱۴۳۳ھ۔   بمطابق12- 12-2011 ) 

لاج رکھ میرے دستِ دُعا کی                                           میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

اپنی رَحمت کی اپنی عطا کی                                                  میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

تیری یاد دل میں ہر دم بسی ہو                                              ذِکر لب پر تِرا ہر گھڑی ہو

مستی و بے خودی اور فَنا ([9]کی                                           میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

کرنا رَحمت خدا مجھ پہ اپنی                                                  رکھ عنایت سدا مجھ پہ اپنی

دائمی ([10] اور حتمی ([11]رِضا کی                                         میرے مولیٰ تو خیرات دیدے

ہو کرم بہرِ مرشِد خُدایا                                                     نفس نے  لذَّتوں میں پھنسایا

 



[1]    میدان۔    جنگل 

[2]    جبل کی جمع۔    پہاڑ۔    

[3]    تمیز داری۔    

[4]     شور و غل۔    

[5]     خوشی۔  

[6]     مرنے کے قریب۔  

[7]     مرنے کے بعد۔  

[8]     اندھیری رات۔  

[9]     فَنافِی اللّٰہ ۔  

[10]     ہمیشہ کیلئے 

[11]      مُستقل



Total Pages: 9

Go To