Book Name:Naik Bannay aur Bananay kay Tariqay

اعلانِ فجر

بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم

اَلصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُوْلَ اللّٰہ

              ’’  میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو! ابھی دعا کے فورًا بعد  اِنْ شَاءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ سنتوں بھرا بیان ہوگا تشریف رکھیے اور ڈھیروں ثواب کمائیے۔ ‘‘

اعلانِ عصر

بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم

اَلصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُوْلَ اللّٰہ

             ’’ آپ کے علاقے میں نیکی کی دعوت عام کرنے کے لئے آپ کی مدد درکار ہے برائے کرم دُعا کے بعد تشریف رکھیے اور ڈھیرو ں ثواب کمائیے۔ ‘‘  

اعلانِ مغرب

بِسْمِ اللّٰہِ الرَّحْمٰنِ الرَّحِیْم

اَلصَّلٰوۃُ وَالسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُوْلَ اللّٰہ

  ’’  میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  ابھی نماز کے فوراً بعد  اِنْ شَاءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ سنتوں بھرا بیان ہوگا تشریف رکھیے اور ڈھیروں ثواب کمائیے۔ ‘‘

(iii)ذمہ داریاں تقسیم کرنا:

            اعلانات کی دہرائی کے بعد امیر قافلہ درس وبیان و دیگر مساجد میں فجر و ظہر میں بمع رفقاء جاکر درس دینے اور کھانا پکانے کی ذمہ داریوں کے بارے میں مشورہ کرکے ذمہ داریاں تقسیم کرے ۔ کھانے کی تیاری اشراق و چاشت سے لیکر مشورے کے حلقے سے پہلے کرلی جائے ۔ نیز دو وقت کا سالن ایک ساتھ ہی تیار کر لیا جائے ۔ روزانہ بدل بدل کر ذمہ داریاں دی جائیں ،  یہ نہ ہو کہ روزانہ کیلئے برتن دھونے یاپکانے کے لئے ایک ہی اسلامی بھائی کو مخصوص کرلیا جائے کہ بے چارہ سنتیں سیکھنے سے ہی محروم رہے ۔ ایک اسلامی بھائی کی ذمہ داری یہ ہو کہ ضرورتاً آرام کے وقفے میں جاگ کر سامان وغیرہ کی حفاظت کرے ۔

مشورے کا طریقۂ کار:

             میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  مدنی قافلوں میں مشورہ اِن نومدنی کاموں پر لیا جاتا ہے۔(۱)چوک درس (۲)ظہر کا درس (۳)اعلانِ عصر (۴) بیانِ عصر(۵) اعلانِ مغرب (۶) بیانِ مغرب (۷) عشاء کا درس (۸) اعلانِ فجر (۹) بیانِ فجر۔

            ان نو مدنی کاموں کے بارے میں شرکائے قافلہ میں سے ہرایک اسلامی بھائی سے صرف ایک ہی کام پر مشورہ لیا جائے ، مشورہ مشورے کے طور پر ہی ہونا چاہئے تاکہ اسلامی بھائی مذاق نہ بنائیں ۔

            مشورہ سیدھی جانب سے اِس طرح لینا ہے مثلاً امیرِ قافلہ شرکاسے یوں پوچھے ’’  شاہدبھائی آپ مشورہ دیں ظہر کا درس کس اسلامی بھائی سے کروایا جائے ‘‘  اب شاہدبھائی یوں عرض کریں  ’’  میرا ناقص مشورہ ہے کہ ظہر کا درس خلیل بھائی سے کر وا لیا جائے آگے آپ کی مرضی۔ ‘‘

            اب امیرِ قافلہ دوسرے اسلامی بھائی سے عصر کے اعلان کا مشورہ لے، اب باری باری تمام شرکا سے اسی طرح مشورہ لے۔امیر قافلہ کو چاہئے کہ مشورہ لینے سے قبل شرکا کو یہ ذہن دے کہ مشورہ دینے والا اسلامی بھائی اپنے مشورے کے بارے میں بطورِ عاجزی کے  ’’ ناقص مشورہ ‘‘  کا لفظ استعمال کرے۔ جس اسلامی بھائی کو ذمہ داری دینے کے بارے میں مشورہ دیا جائے، وہ        اِنْ شَاءَ اللہ عَزَّ وَجَلَّ کہے جبکہ دیگر اسلامی بھائی ہر مرتبہ مشورہ دینے پر (اللّٰـہ    عَزَّوَجَلَّکے ذِکرکی نیّت سے ) سُبْحٰنَ اللّٰہ  عزَّوَجَل ضرور کہیں ۔

             اس طرح مشورہ دینے والے اور جس کے بارے میں مشورہ دیا گیا دونوں  کی حوصلہ افزائی بھی ہوجائیگی ۔امیرِ قافلہ کو چاہئے کہ شرکا کا یہ بھی ذہن بنائے کہ مشورہ دینے والااسلامی بھائی جب کسی ذمہ داری کے بارے میں مشورہ دے تو اپنے علاوہ دیگرموجود شرکائے قافلہ کے بارے میں ہی مشورہ دے۔

          پیارے اسلامی بھائیو!  مشورہ کرنے کے اس طریقے پر عمل کرنے کی برکت سے اَجْنَبِیّت محسوس کرنے والے اسلامی بھائی مدنی قافلے والوں کے ساتھ گُھل مِل جائیں گے اوراُن سے مشورہ لینے سے اُن کی حوصلہ افزائی ہوگی۔ مشورہ دینے والے اسلامی بھائیوں کی خدمت میں یہ درخواست بھی کی جائے کہ درس وبیان کی ذمہ داری کے بارے میں مشورہ دیتے وقت اُن اسلامی بھائیوں کا نام بھی لیں جو فی الحال درس وبیان کی صلاحیت نہیں رکھتے ۔ اس کا فائدہ یہ ہوگا کہ ان اسلامی بھائیوں کا بھی درس وبیان کرنے کے بارے میں ذہن بنے گا ۔

سب سے مشورہ لینے کے بعد امیر قافلہ درجِ ذیل ذمہ داریاں تقسیم کرے۔ 

(۱) چوک درس…

(۲) نمازِ فجروظہر میں مختلف مساجد میں جانے کی ذمہ داری…

(۳)  ظہر کا درس…

(۴)  عصر کا اعلان…

(۵)  عصر کا 12منٹ کا بیان…

 



Total Pages: 194

Go To