Book Name:Naik Bannay aur Bananay kay Tariqay

یہ تھی کہ انہوں نے اس بات کا مجھے ذرا بھی اِحساس نہیں ہونے دیا اور نہ ہی کسی قسم کی مالی امداد کیلئے سُوال کیا۔ میں اور زِیادہ مُتَأَثِّر ہوا کہ مَا شَآءَ اللہ  عَزَّ وَجَلَّ دعوتِ اسلامی کا مدنی ماحول کتنا پیارا ہے اور اس کے وابَستگان کس قَدَر سادہ اور خوددار ہیں ۔

            اَلْحَمْدُ لِلّٰہ عزَّوَجَلَّ دعوتِ اسلامی کی مَحَبَّت میرے دل میں گھر کرتی چلی گئی حتّٰی کہ میں نے عاشِقانِ رسول کے ہمراہ  ’’ 8دن ‘‘  کے مدنی قافِلے میں سفر کیا۔ میرے دل کی دنیا زیرو زَبَر ہوگئی، قَلْب میں مدنی انقِلاب برپا ہوگیا اور میں نے گناہوں سے سچّی توبہ کر کے اپنی ذات کو دعوتِ اسلامی کے حوالے کردیا۔

          اَلْحَمْدُ لـِلّٰـہعَزَّوَجَلَّمجھ پر وہ     مدنی رنگ چڑھا کہ آج کل میں عَلاقائی مُشاوَرَت کے خادِم( نگران) کی حیثیَّت سے اپنے عَلاقے میں دعوتِ اسلامی کے     مدنی کاموں کی دھومیں مچارہا ہوں ۔

سادگی چاہئے عاجزی چاہئے

آپ کو ،  گر چلیں قافِلے میں چلو

خوب خود داریاں اور خوش اَخلاقیاں

آیئے سیکھ لیں قافِلے میں چلو

عاشقانِ رسول لائے سُنَّت کے پھول

آؤ لینے چلیں قافلے میں چلو

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب!             صَلَّی اللّٰہُ  تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد 

(فیضان سنّت، باب آداب طعام،ج۱،ص۲۲۴)

      میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  بیان کو اِختِتام کی طرف لاتے ہوئے سنّت کی فضیلت اور چند سنّتیں اور آداب بیان کرنے کی سعادت حاصِل کرتا ہوں ۔ تاجدارِ رسالت، شَہَنْشاہِنُبُوَّت ،  مصطفی جانِ رحمت، شمعِ بزمِ ہدایت ، نوشۂ بزمِ جنت صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  کا فرمانِ جنت نشان ہے: جس نے میری سنّت سے مَحَبَّت کی اُس نے مجھ سے مَحَبَّت کی اور جس نے مجھ سیمَحَبَّت کی وہ جنت میں میرے ساتھ ہو گا۔   (تاریخ مدینۃدمشق، انس بن مالک،ج۹،ص۳۴۳)     لہٰذا ہاتھ ملانے کے 14مدنی پھول قبول فرمائیے،(اس کتاب کے صفحہ نمبر549سے بیان کریں )

٭٭٭٭٭٭

بیان نمبر2:

راہِ خدا میں خرچ کرنے کے فضائل

           شیخِ طریقت، امیر ِاہل ِسنت، بانیء     دعوتِ اسلامی حضرت علامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطار قادری رضوی دَامَتْ بَرَکَا  تُہُمُ الْعَالِیَہ  ’’  رسائل ِعطاریہ ‘‘  (حصہ دوم)کے صَفْحَہ 15 پر حدیث ِپاک نقل فرماتے ہیں :  ’’ مجھ پر درودِ پاک کی کثرت کرو بے شک یہ تمہارے لئے طہارت ہے۔ ‘‘ (مسند ابی یعلٰی، مسند ابی ہریرۃ،الحدیث:۶۳۸۳،ج۵،ص۴۵۸)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب              صَلَّی اللّٰہُ  تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

         دعوتِ اسلامی کے اشاعتی ادارے مَکْتَبَۃُ الْمَدِیْنَہ کی مطبوعہ 1548 صَفْحات پر مشتمل کتاب،  ’’  فیضانِ سنّت ‘‘   صَفْحَہ  403پرہے:

گُند    ھا ہواآٹا د    ید یا

            حضرتِ  سیِّدُنا حبیب  عَجَمی عَلَیْہِ رَحْمَۃُ اللّٰہِ الْہَادِی کے دروازے پر ایک سائل نے صدا لگائی، آپ کی زوجۂ مُحْتَرَمہ گندھا ہوا آٹا رکھ کر پڑوس سے آگ لینے گئی تھیں تا کہ روٹی پکائیں ۔ آپ نے وُہی آٹا اٹھا کر سائل کو دے دیا، جب وہ آگ لے کر آئیں تو آٹا    نَدا رَد (یعنی غائب) آپ رَحْمَۃُ اللّٰہِ تَعَالٰی عَلَیْہنے فرمایا: اسے روٹی پکانے کے لیے لے گئے ہیں ،  بَہُت پوچھا تو آپ رَحْمَۃُ  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ  نے خیرات کر دینے کا واقِعہ بتایا وہ بولیں :سُبْحٰنَ  اللّٰہ عَزَّوَجَلّ !  یہ تو اچھی بات ہے مگر ہمیں بھی تو کچھ کھانے کے لئے درکار ہے!  اِتنے میں ایک شَخص ایک بڑی لگن میں بھر کرگوشْت اور روٹی لے آیا۔ آپ رَحْمَۃُ  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ نے فرمایا: دیکھو تمہیں کس قَدَر جلد لوٹا دیا گیا، گویا روٹی بھی پکا دی اور گوشت کا سالن مزید بھیج دیا!  (روض الریاحین، الفصل الثانی فی اثبات کرامات الاولیاء، حکایۃنمبر۳۲۸،ص۲۷۶)  اللہ عَزَّوَجَلَّکی اُن پر رَحمت ہو اور ان کے صَدْقے ہماری مغفِرت ہو۔

صَدَقہ کرنے سے مال کم نہیں ہوتا

            میٹھے میٹھے اسلامی بھائیو!  دیکھا آپ نے!  راہِ خدا میں دی جانے والی چیز ہرگز ضائِع نہیں ہوتی، آخِرت میں اجر و ثواب کی حقدار ی تو ہے ہی ،  بعض اَوقات دنیا میں بھی اضافے کے ساتھ ہاتھوں ہاتھ اس کا نِعْمَ الْبَدَل عطا کیا جاتا ہے اور یہ یقینی بات ہے کہ راہِ خدا  میں دینے سے بڑھتا ہے گھٹتا نہیں جیسا کہ حضرتِ  سیِّدُنا ابو ہُرَیْرہ  رَضِیَ  اللہ  تَعَالٰی عَنْہُ فرماتے ہیں : دو عالَم کے مالِک و مختار، مکّی مدنی سرکار، محبوبِ     پَروَرْدْ گار صَلَّی  اللہ  تَعَالٰی عَلَیْہِ وَاٰلِہٖ وَسَلَّمَ  نے اِرشاد فرمایا: صَدَقہ مال میں کمی نہیں کرتا اور اللّٰہ تعالیٰ مُعاف کرنے کی و     جہ سے بندے کی عزت ہی بڑھاتا ہے اور جو اللّٰہ تعالیٰ کی رِضا کی خا     طِر انکساری کرتا ہے تو اللّٰہ تعالیٰ اُسے بلندی عطا فرماتا ہے۔(صحیح مسلم،کتاب البروالصلۃ، باب استحباب العفووالتواضع، الحدیث: ۲۵۸۸، ص۱۳۹۷)

صَلُّوْا عَلَی الْحَبِیْب                   صَلَّی اللّٰہُ  تَعَالٰی عَلٰی مُحَمَّد

 



Total Pages: 194

Go To